تازہ ترین

غزلیات

غزل  تیرے دم سے جہان قائم ہے یہ زمیں آسمان قائم ہے دوریاں مِٹ گئیں مگر پھر بھی فاصلہ درمیان قائم ہے دل بدلتا ہے تو بدل جائے عہد و پیماں زبان قائم ہے کیا ہُوا میرے پُر نہیں نکلے حوصلوں میں اُڑان قائم ہے جسم میرا بکھر گیا لیکن دل میں تیرا مکان قائم ہے گرچہ ہوش و حواس بس میں نہیں پھر بھی تیرا دھیان قائم ہے کوئی کہہ دے عدو سے اے جاویدؔ مسجدوں میں اذان قائم ہے     سرداجاویدؔخان مینڈر،پونچھ موبائل نمبر؛ 9419175198         غزلیات پَل بھر میں  برسوں کا رشتہ توڑ دیا  پتھر ِدل نے آخِر شیشہ توڑ دیا    دیکھ کے اُسکو، پھِر دانستہ دیکھ لیا اِک لغزش نے میرا روزہ توڑ دیا   شاید اُسکی فطری غیرت جاگ اٹھے ہم نے 

تازہ ترین