وادی میں سردی کی دستک | پہاڑوں پر دوسری ہلکی برفباری ،درجہ حرارت میں مزید گرواٹ

 سرینگر //محکمہ موسمیات کی پیشگوئی کے عین مطابق توار کی صبح سے وادی کشمیر میں موسمی صورتحال میں تبدیلی آئی، آسمان پر بادل چھا گئے، تیز ہوائیں چلنے لگیں اور اس دوران پیر کی گلی ، گلمرگ ، سونہ مرگ سمیت دیگر بالائی علاقوں میں ہلکی برف باری اور کچھ ایک میدانی علاقوں میں ہلکی بارش ریکارڈ کی گئی ہے ۔ اتوار کی شام سے پوری وادی میں سردی کی شدید لہر پیدا ہوئی۔ غلام نبی رینہ کے مطابق  دراس، منی مرگ، شیطانی نالہ، زیرو پوائنٹ اور زوجیلا میں دوسرے روز بھی تازہ برفباری کا سلسلہ جاری رہا جس کی وجہ سے سردی کی شدت میں اضافہ ہوا ۔ انہوں نے کہا کہ منی مرگ، زوجیلا، اورزیرو پوائنٹ میں سنیچر کی شام سے ہلکا برف باری کا سلسلہ شروع ہوا جو وقفے وقفے سے اتوار کی شام تک جاری رہا  جس کی وجہ سے گومری، زیرو پوائنٹ، مٹاین کے مقامات پر پھسلن پیدا ہوگئی اور گاڑیوں کو چلنے میں مشکلات پیش آئیں۔منی مرگ م

حیدربیگ کھئی پورہ سڑک کی حالت ناگفتہ بہ | 2018سے کام بند،محکمہ تعمیرات پر لیت و لعل کا الزام

بارہمولہ//ضلع بارہمولہ کے حیدربیگ پٹن سے کھئی پورہ ٹنگمرگ تک سڑک رابطہ گزشتہ ایک دہائی سے خستہ حال ہے جس کے نتیجے میں ٹرانسپورٹروں اور عام لوگوں کے ساتھ ساتھ طلاب کو زبردست مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ مقامی آبادی کا کہنا ہے کہ 21 کلو میٹر پر مشتمل یہ سڑک کا فاصلہ ہے جو ٹنگمرگ تک تقریباً 30 دیہات سے گزرتی ہے ۔لوگوں کا کہنا ہے کہ اس سڑک کو انتظامیہ نے ہمیشہ نظر انداز کیا گیا ۔ ایک مقامی باشندے غلام حسن نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ حیدر بیگ سے کھئی پورہ تک اس سڑک کے تقریبا 17 کلومیٹرخستہ حال ہوچکے ہیں اور سڑک پڑ جگہ جگہ بڑے کھڈ بن چکے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ کئی بار یہ معاملہ اعلیٰ افسران کی نوٹس میں لایا گیا لیکن اُس کا کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ انہو ں نے مزید کہا کہ اگر چہ اس سڑک پر مرمت کرنے کا سلسلہ چند سال قبل شروع کیا گیا تھا لیکن پھر اچانک 2018 میں فنڈز کی عدم فراہمی کی وجہ سے روک دیا

نالہ سندھ سے تعمیراتی مواد نکالنے کا سلسلہ جاری

گاندربل// نالہ سندھ میں گنگرہامہ، وحید پورہ، ملہ پورہ،سرڑ، بابوسی پورہ، نونر، وایئل،وسن ،پرنگ اور اکہال سے لیکر سونمرگ تک جے سی بی مشینوںسے تعمیراتی مواد نکالنے کا کام شدومد سے جاری ہے جس کے سبب نالہ سندھ کا وجود خطرے میں ہے۔ کئی مقامات پر نالہ سندھ کے  حفاظتی بنڈ تک اکھاڑ لئے گئے ہیںجس کے نتیجے میںرہائشی علاقوں میں سیلاب کے دوران جانی و مالی نقصان ہونے کا خدشہ لاحق ہوگیا ہے۔ضلع ترقیاتی کمشنر گاندربل شفقت اقبال نے اس سلسلے میں کہا کہ ایک ٹیم تشکیل دے کر خود غرض عناصر کے خلاف کارروائی کی جائے گی ۔

نارواو بارہمولہ محکمہ بجلی سے برہم | غیر اعلانیہ کٹوتی شیڈول کی وجہ سے مشکلات درپیش

بارہمولہ//موسم سرما کی آمد کے ساتھ ہی بارہمولہ ضلع کے نارواو علاقے میں بجلی کی عدم دستیابی سے مشکلات میں اضافہ ہوا ہے۔ شیری ،فتح گڈ ھ ،ہیون، کالے بن، ملہ پورہ ،ڈانگر پورہ ،لرڈورہ،تاری پورہ، آ ڈورہ ،نملن، گلستان ،بدمولہ ،پالہ دجی گوری وان ،زنڈفرن ،زوگیار،شالہ ٹینگ ،کچہامہ گانٹہ مولہ اور کئی دیہات کے لوگوں کا کہنا ہے کہ شام ہوتے ہی ان علاقوں میں اندھیرا چھا جاتا ہے جبکہ کئی علاقوں میں بجلی آتے ہی چلی جاتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ صورتحال کو بہتر بنانے کیلئے کارگر اقدامات نہیں کر رہا ہے جس کے نتیجے میں  محکمہ کے تئیں عوام میں غم و غصہ پایا جارہا ہے۔لوگوں کا کہنا ہے کہ کسی بھی علاقے میں بجلی کا کوئی شیڈول مرتب نہیں ہے اور کسی کو معلوم ہی نہیں کہ بجلی کب آئے گی اور کب چلی جائے گی ۔ کئی لوگوں نے کہا کہ وہ باقاعدگی کے ساتھ فیس بھی ادا کر رہے ہیں لیکن اس کے باوجود وہ بجلی کی عدم دست

کشمیر میں ریل سروس 7ماہ سے بند | مسافروں کو پریشانی،بحال کرنے کا مطالبہ

سرینگر//کشمیر ریل سروس گزشتہ سات ماہ سے مسلسل بند پڑی ہے جس کے نتیجے میں کشمیر ریلوے کو اب تک کروڑو ں روپے کا خسارہ برداشت کرنا پڑا ہے ۔ اس دوران مسافروں نے مطالبہ کیا ہے کہ ریل سروس کو اب شروع کیا جائے ۔ وادی میںچلنے والی ریل سروس گزشتہ سات ماہ سے مکمل طور ٹھپ ہے ۔ لاک ڈاون کی وجہ سے جہاں تمام کاروباری ادارے اور ٹرانسپورٹ کی سرگرمیاں معطل کی گئیں وہیں ریل سروس کو بھی عارضی طور معطل رکھا گیا ۔ اگرچہ ہندوستان کے دیگر تمام شہروں اور ریاستوں کے درمیان ریل خدمات بحال کی گئیں لیکن بین کشمیر چلنے والی ریل ہنوز بند ہے ۔ ریل خدمات معطل رہنے کے نتیجے میں مسافروں کو شدید دشواریوںکا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ مسافروں نے اس سلسلے میں کہا ہے کہ ریل میں سفر کرنے سے انہیں کافی سہولت ہوتی تھی۔انہوں نے کہا کہ جہاں پیسے کی بچت ہوتی تھی وہیں وہ اپنی اپنی منزلوں پر وقت پر پہنچتے تھے ۔ بارہمولہ بانہال ریل سروس&

پوسٹ گریجویشن کا انتظام کیا جائے | کشمیر یونیورسٹی حکام سے فائن آرٹس طلاب کامطالبہ

سرینگر//کشمیر یونیورسٹی کے’فائن آرٹس‘شعبہ میں زیر تعلیم طلاب چار سال تک زیرتعلیم رہنے کے بعد پوسٹ گریجویشن کی سہولت کشمیر میں نہ ہونے کی وجہ سے پریشانیوں میںمبتلا ہیں ۔انہوں نے یونیورسٹی حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ پوسٹ گریجویشن کے ساتھ ساتھ اس شعبہ سے وابستہ افرادکے لئے روز گار کا انتظام کیا جائے ۔یہ طلاب کشمیر یونیورسٹی کے شعبہ’فائن آرٹس‘میں 4سالہ کورس مکمل کرنے کے قریب ہیں۔کئی طلاب نے بتایا کہ پوسٹ گریجویشن کے بعد اس کورس کی افادیت اور اہمیت بڑھ جاتی ہے ۔انہوں نے یونیورسٹی حکام اور سرکار سے اپیل کی کہ ان کے لئے پوسٹ گریجویشن کا بھی انظام کیا جائے تاکہ ان کا مستقبل تابناک بنے ۔انہوںنے جموں و کشمیر اور مرکزی سر کار سے فائن آرٹس کے تربیت یافتہ نوجوانوں کے لئے روز گارکا انتظام بھی کیا جائے ۔  

ترال میں محکمہ صحت کا حال بے حال ،کہلیل ہسپتال میں طبی و نیم طبی عملے کی قلت | منظور شدہ22اسامیوںمیںصرف9تعینات،2ایم بی بی ایس ڈاکٹروں کی کرسیاںخالی

ترال)کہلیل(//جنوبی کشمیر کے سب ضلع ترال میں محکمہ صحت کی بد نظمی اور حکومت کی عدم توجہی کے باعث بیشتر طبی مراکز میں طبی او نیم طبی عملہ دستیاب نہ ہونے کی وجہ سے یہاں قائم کئے گئے ہسپتال عوام کے لئے بے فائدہ ثابت ہو رہے ہیںاور لوگوں کو علاج و معالجے کے لئے دور دور کے ہسپتالوں کا رخ کرنا پڑ رہا ہے ۔ لعلپورہ کہلیل ترال میں قائم سب سے قدیم ہسپتال میں طبی و نیم طبی عملے 22اسامیوںکی جگہ کل9ملازمین تعینات ہیں۔ستم ظریقی یہ ہے کہ ہسپتال میں 2ایم بی بی ایس ڈاکٹروں کی کرسیاں گزشتہ کئی سال سے خالی پڑی ہیں ۔جنوبی کشمیر کے سب ضلع ترال کے لعل پورہ کہلیل ترال میں گزشتہ کئی دہائیوں سے قائم پبلک ہیلتھ سنٹر (پی ایچ سی)میں تعینات 22طبی و نیم طبی ملازمین میں گزشتہ کئی دہائیوں سے کل9نو ملازمین ،جن میں ایکISMڈاکٹر جو ہفتے میں یہاں 3دن تعینات رہتی ہے، کے علاوہ ایک ڈینٹسٹ کے علاوہ7دیگر نیم طبی عملے کے ملازمین

ڈاک کے ذریعے خط بھیجنا ختم | سینکڑوں لیٹر بکس برسوں سے تالا کھلنے کے منتظر

سرینگر //ترقی کے اس جدید دور میںپرانی روایات میں تبدیلیاں آنے سے جہاں بہت کچھ بدل چکا ہے، وہیں ڈاکیہ کے ذریعے آنے والے خط اور ڈاک ڈبہ جیسی اصطلاحات میں بھی کمی ہوئی ہے ۔شہروں ،قصبوں اور گائوں دیہات میں نصب ڈک ڈبے برسوں سے تالا بند پڑے ہیں کیونکہ نہ کہیں ڈاک آتی ہے نہ خط اور نہ ہی صبح کے وقت ڈاکیہ سائیکل پر خاکی وردی میں ملبوس ہو کر ڈاک لے کر گھر گھر پہنچتا ہے بلکہ اس نے بھی وردی اُتار کر دیگر لوگوں کی طرح اس جدید دور میں اپنا کام انجام دینا شروع کر دیا ہے ۔وہیں یہ تاثر بھی غلط ثابت ہو گیا ہے کہ انٹر نیٹ کے جدید دور میں ڈاک خانہ کا کام متاثر ہو گیا ہے ،بلکہ آن لائن شاپنگ سے لیکر سپیڈ پوسٹ اور رجسٹرڈ لیٹرنگ کے کام میںاضافہ ہو گیا ہے ۔کشمیر وادی کے شہروں اور قصبوں میں ہزاروں ایسے ڈاک ڈبے ہیں جو زنگ آلودہ ہو چکے ہیں، تاہم محکمہ ڈاک کو یہ اُمید ہے کہ ان ڈبوں میں کوئی نہ کوئی ڈاک یا پھر

مزید خبرں

لوک ادب کسی بھی خطے کی ثقافتی جمالیات کا عکاس:منوج سنہا |  درخشاں اندرابی کا شعری مجموعہ’’ ا￿حساسن ہُن￿د شیشہِ خانہ ‘‘ کااجراء سری نگر// لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے آج مرکزی وقف کونسل کی رکن ، چیئرپرسن وقف ڈیولپمنٹ کمیٹی وزارتِ برائے اقلیتی امور حکومتِ ہند ڈاکٹر درخشاں اندرابی کا ایک شعری مجموعہ’ ا￿حساسن ہُن￿د شیشہِ خانہ ‘ عنوان سے جاری کیا۔ لیفٹیننٹ گورنر نے ڈاکٹر اندرابی کو سرزمین جموںوکشمیر کے روحانی اور عالمانہ روایت کی عکاسی کرنے اور مختلف سماجی مسائل اَپنے کلام میں اُٹھانے کے لئے سراہا۔ اُنہوں نے کہا کہ لوک ادب کسی بھی خطے کی ثقافتی جمالیات کا عکاس ہوتا ہے جس کو ترقی اور تحفظ دینے کی ضرورت ہے۔اُنہوں نے ڈاکٹر اَندرابی کو اَپنی شاعری مجموعہ کا دوسری زبانوں میں ترجمہ کرنے کی صلا ح دی تاکہ ملک کے باقی لوگ بھی اس کو پڑھ سکیں۔اِس موقعہ پر ب

تازہ ترین