تازہ ترین

بارہ مولہ میں بیکن اہلکاروں نے مسافر گاڑی اور مسافروں کو بچالیا

 بارہمولہ //بیکن اہلکاروں نے خانپورہ بارہ مولہ کے قریب پتھروں کی زدمیں آئی مسافر گاڑی اوراس میں سوار مسافروں کو بحفاظت محفوظ مقام تک پہنچایا جس کی مقامی لوگوں اور منی بس ایسوسی ایشن نے سراہنا کی ۔بتایا جاتا ہے کہ خانپوارہ کے قریب سڑک پر پھسلن ہونے کی وجہ سے ایک منی بس پہاڑ سے ٹکرائی جس کے بعد 53آر سی سی بیکن ٹاسک فورس کے اہلکاروں نے موقعہ پر پہنچ کر مسافر بس کو بچانے کے لئے بچائو آپریشن شروع کیا اور منی بس اور مسافروں کو بحفاظت وہاں سے نکالا۔منی بس ایسوسی ایشن بارہ مولہ کے چیئرمین شکیل احمد راتھر نے کہا کہ ہم 53آرسی سی بیکن کے شکرگزار ہیں جنہوں نے فوری طور کارروائی کرکے منی بس اور اس میں سوار مسافروں کو بچالیااورضرورت کے مطابق منی بس کیلئے محفوظ راستہ بناکر گاڑی کو نکالا۔بیکن کے ایک عہدیدار نے بتایا کہ جونہی انہیں اطلاع ملی توہم نے فوری طور اپنے اہلکاروں کو متحرک کیااور بچائو

کورونا وائرس|80سالہ معمر شخص فوت،94نئے معاملات مثبت

 سرینگر //10ماہ کے بعد جموں و کشمیر میں پہلی مرتبہ 11اضلاع میں 24گھنٹوں کے دوران کوئی بھی شخص وائرس سے متاثر نہیں ہوا  جبکہ دیگر 9اضلاع میں 94 افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں اور اسطرح متاثرین کی مجموعی تعداد 123946 ہوگئی ہے جن میں 72 ہزار 556کشمیر جبکہ 51 ہزار 390 افراد  جموں میں متاثر ہوئے ہیں۔ سنیچر کو کشمیر صوبے میں ایک اور شخص وائرس سے فوت ہوگیا اور اسطرح متوفین کی مجموعی تعداد 1929ہوگئی۔ مرنے والوں میں 719جموں جبکہ 1210کشمیر  میں فوت ہوئے ہیں۔ سنیچر کو مثبت قرار دئے گئے 94افراد میں 29جموں جبکہ کشمیر میں 65افراد متاثر ہوئے ہیں۔کشمیر میں متاثر ہونے والے 65افراد میں سے 38سرینگر، 3بارہمولہ، 6بڈگام، 2کپوارہ،8اننت ناگ، 4گاندربل ، ایک کولگام اور 3شوپیان سے تعلق رکھتے ہیں جبکہ دیگر 2اضلاع میں کوئی متاثر نہیں ہوا جن میں  پلوامہ اور بانڈی پورہ شامل ہے۔جموں صوبے میں 29ا

تازہ برف باری کے بعد سیاحوں کی خوشی کاٹھکانہ نہ رہا

 سرینگر//وادی میں تازہ برفباری کے بعد سیاحوں میں خوشی کا ماحول دیکھنے کو ملا اور سرینگر کے سیاحتی مقامات پر انہوں نے کھل کر برفباری کا لطف اٹھایا۔ ہفتے کو وادی سمیت سرینگر میں چلہ کلان کی دوسری برفباری ہوئی تو بیرون ریاستوں سے آئے ہوئے سیلانیوں کی خوشی کا کوئی ٹھکانہ نہیں رہا۔ برفباری کے دوران ان سیلانیوں نے جھیل ڈل کے کنارے بلیوارڑ روڑ کے علاوہ شالیمار،نشاط باغ،ہارون،باٹینکل گارڈن اور چشمہ شاہی کے باہر کھل کر اپنی خوشی کا اظہار کیا۔یہ سیلانی قدرت کی خوبصورتی اور دلفریب مناظر دیکھ کر جہاں خوش ہوئے، وہی انہوں نے اپنے بہترین لمحات کو کیمرئوں میں بھی بند کیا۔جھیل ڈل میں بھی برستی برفبارئی کے دوران سیاح شکارئوں میں تصاویر کھنچتے ہوئے نظر آئے۔ یہ سیاح جھومتے ہوئے ایک دوسرے کو مبارکباد بھی پیش کر رہے تھے۔ گلمرگ میںتازہ برفباری کے باعث موسم کافی دلکش ہواہے اور بیرونی سیاحوں کی خاصی تعد

نیشنل کانفرنس نے صنعتی اراضی الاٹمنٹ پالیسی ردکی

سرینگر// نیشنل کانفرنس نے انتظامی کونسل کی طرف سے منظور کردہ صنعتی اراضی الاٹمنٹ پالیسی کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ لیفٹنٹ گورنر انتظامیہ ایسے فیصلے لینے میں کیوں عجلت سے کام لے رہی ہے۔ پارٹی کے رکن پارلیمان جسٹس (ر) حسنین مسعودی نے کہا کہ صنعتی اراضی الاٹمنٹ پالیسی جیسے فیصلے زمینی سطح پر عوام کیساتھ جڑے ہوتے ہیں اور ایسے فیصلے لینے یا ان میں کسی بھی قسم کی ترمیم کرنے کا کام عوامی حکومت کیلئے ہی چھوڑ دیا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ 5اگست2019کے فیصلوں کی منسوخی کے بعد جو بھی عوامی حکومت قائم ہوگی یہ کام اُسی کیلئے چھوڑ دیئے جانے چاہئیے۔ مسعودی نے کہا کہ جموں وکشمیر ابھی بھی بے چینی اور غیر یقینیت کی لپیٹ میں ہے اور ایسی صورتحال میں انڈسٹریل اراضی الاٹمنٹ پالیسی جیسے فیصلے لینا ہوا میں تیر مارنے کے مترادف ہے۔ موجودہ صورتحال میں صنعتی پالیسی کے کوئی بھی

ماگام ہندوارہ حکومت کی نظروں سے اوجھل،عوام نالاں

کپوارہ//ماگام ہندوارہ کا علاقہ حکومت کی عدم توجہی کا شکار ہے اور علاقہ میں بنیادی طبی اور تعلیمی سہولیات نہ ہونے کی وجہ سے لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔علاقہ میں قائم پرائمری ہیلتھ سینٹر میں سہولیات نہ ہونے کے برابر ہے اور اس طبی مرکز کے ایک طرف دور پہاڑی پرواقع ہونے کی وجہ سے لوگوں کو وہاں تک جانے کیلئے ٹرانسپورٹ کابندوبست کرناپڑتا ہے جس کی وجہ سے ماگام علاقہ کے مریض ہندوارہ یاکپوارہ کے اسپتالوں میں علاج کرانے کیلئے جانے پرمجبور ہیں۔مقامی لوگوں کے مطابق پرائمری ہیلتھ سینٹر میں طبی اور نیم طبی عملہ کی سخت کمی ہے جبکہ اسپتال میں جدیدمشینری کوآج تک نصب نہیں کیا گیاہے اور لوگوں کو ایکسرے اوردیگرٹیسٹوں کیلئے دردرکی ٹھوکریں کھانی پڑتی ہیں ۔مذکورہ ہیلتھ سینٹر میں ماہرامراض خواتین اور دیگر ماہرڈاکٹرتعینات نہیں ہیں۔مقامی لوگوں نے مطالبہ کیا ہے کہ اس اسپتال کوسب ضلع اسپتال کا درجہ دیا

اسکول کھولنے سے قبل اساتذہ اور دیگرعملہ کو کووِڈ- 19ٹیکہ دینا لازمی:ڈاک

سرینگر//ڈاکٹرس ایسوسی ایشن کشمیر نے انتظامیہ پرزور دیا ہے کہ اسکولوں کو دوبارہ کھولنے سے قبل اسکولوں کے اسٹاف اور تدریسی عملہ کو کووِڈ ٹیکہ لگانا چاہیے۔ایک بیان میں ایسوسی ایشن کے صدر ڈاکٹر نثار الحسن نے کہا کہ اسکولو ں کے کھولنے سے قبل اساتذہ اور اسکول اسٹاف کو کووِڈ ویکسین دینا لازمی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں کووِڈ ٹیکہ کاری کو اساتذہ اوراسکول اسٹاف کیلئے ترجیحی بنیادپر رکھنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ ٹیکہ انہیں وائرس سے بچائے رکھے گااور انہیں پڑھانے کے اہل بنائے گا جس سے کہ اسکولوں کو کھلا رکھا جاسکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہم اساتذہ اور اسکول اسٹاف کو خطرے میں ڈالدیں گے اگر ہم انہیں بغیرکووِڈ ٹیکہ لگائے اسکول پڑھانے کیلئے بھیجیں گے۔ ڈاکٹر نثار نے کہا کہ اگرچہ بچوں کے کووِڈ سے بیمار ہونے کے امکانات کم ہیں لیکن وہ کووِڈ کو اساتذہ اور اسکول اسٹاف میں پھیلا سکتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ بچے اسکول م

آدھار کارڈ کے بغیر صارفین کو بھی راشن فراہم کیا جائے

سرینگر//صارفین کو صرف آدھار کارڈ کی بنیاد پر راشن فراہم کرنے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے امور صارفین و عوامی تقسیم کاری ایمپلائز ایسو سی ایشن نے دعویٰ کیا  ہے کہ سرینگر میں صرف64فیصد آبادی کے پاس ادھار کارڑ موجود ہیں۔ سرینگر میں محکمہ خوراک و رسدات و امور صارفین کے دفتر میں ہفتہ کو پریس کانفرنس میں ایسو سی ایشن کے صدر اعجاز خان نے کہا،’’سری نگر میں صرف 64فیصد آبادی کے پاس آدھار کارڈ ہیں۔‘‘انہوں نے لیفٹنٹ گورنر ، محکمہ امور صارفین و عوامی تقسیم کاری کے کمشنر اور ڈائریکٹر سے اپیل کی کہ وہ تب تک آدھار کارڈ کے بغیر صارفین کو بھی راشن فراہم کریں جب تک انہیں یہ کارڈ فراہم نہیں ہوتے۔انہوں نے مزید مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اس کے علاوہ ، معاملہ حل ہونے تک محکمہ امور صارفین و عوامی تقسیم کاری آدھار کارڈ کے ایک اہلکار کو سیلز سنٹر میں تعینات کیا کریں۔ انہوں نے ڈائ

اوڑی میں ٹویرا گاڑی لڑھکنے سے3زخمی

اوڑی//اوڑی میں ایک تویراگاڑی کے اُلٹنے سے تین مسافر زخمی ہوگئے۔معلوم ہوا ہے کہ سنیچروار کوایک تویرا زیر نمبرJKQ01-3477 سڑک پر پھسلن کی وجہ سے چالاں بونیار میں الٹ گئی جس کے نتیجے میں تین مسافر جن کی شناخت  خادم حسین ولد بابر علی،حسن جان زوجہ خادم حسین اور نگینہ بیگم زوجہ اسحاق خان ساکنان بگنا سلام آباد کے طور ہوئی،زخمی ہوگئے ،جنہیں طبی امداد کیلئے بونیار کے پرائمری ہیلتھ سینٹر پہنچایا گیا جہاں سے انہیں مزید علاج کیلئے بارہ مولہ میڈیکل کالج منتقل کیا گیا۔تینوں زخمیوں کی حالت مستحکم بتائی جارہی ہے۔

برف باری سے پیدا شدہ صورتحال

کپوارہ+بانڈی پورہ//ضلع ترقیاتی کمشنر کپوارہ امام الدین نے برف باری کے بعد کپوارہ قصبہ کا تفصیلی دورہ کیا اور اشیائے ضروریہ اور لوگو ں کو در پیش مسائل کا جائزہ لیا ۔انہو ں نے اقبال مارکیٹ ،ریگی پورہ ،بائی پاس اور جامع رو ڈ کے بازارو ں کا معائنہ کیا اور سڑکو ں سے برف ہٹانے کے کام کا جائزہ لیا ۔ضلع ترقیاتی کمشنر نے سب ضلع اسپتال کا بھی دورہ کیا اور وہا ں پر مریضوں کو در پیش مسائل سے متعلق جانکاری حاصل کی ۔ انہو ں نے اسپتال انتظامیہ سے کہا کہ وہ مریضوں کو بہتر طبی سہولیات میسر رکھیں تاکہ مریضوں کو کسی بھی مشکلات کاسامنا نہیں کرنا پڑے گا ۔انہو ں نے بلاک میڈیکل آفیسر کپوارہ سے کہا کہ وہ ڈاکٹرو ں کو اپنی ڈیوٹی کا پابند بنا دیں ۔ضلع ترقیاتی کمشنر نے انتظامیہ کو ہدایت دی کہ وہ فوری طور سڑکو ں سے برف ہٹانے کا کام مکمل کریں ۔ادھر ڈپٹی کمشنر بانڈی پورہ ڈاکٹر اویس احمد کی ہدایت پر اے ڈی سی بانڈی پ

کنگن میں کئی پنچایت گھرخستہ حال

کنگن// کنگن کے مختلف مقامات پر 1990سے قبل تعمیر کی گئی ایم پی بی یعنی ملٹی پرپز عمارتیں تعمیر کی گئی تھیں جن کو پنچایت گھروں کے لئے استعمال میں لانا تھا لیکن یہ عمارتیں گذشتہ تیس برس کے دوران خستہ حال ہوچکی ہیںتو کئی عمارتوں پر اراضی مالکان نے معاوضہ نہ ملنے پر ان پر اپنا قبضہ جمایا ہے۔ بلاک کنگن میں 1990 سے قبل 18 عمارتیںتعمیر کی گئیں تاکہ ان عمارتوں کو پنچایتی گھروں کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ اس وقت کی سرکار نے ان عمارتوں کے لئے کئی لوگوں سے اراضی حاصل کی تھی اور انہیں سرکار ی نوکریاں فراہم کرنے کا یقین دلایاگیا لیکن ان لوگوں کے مطابق عمارتیں تعمیر کرنے کے بعد نہ تو ان افرادکو نوکریاں دی گئیں اور نہ معاوضہ دیا گیا جس کے بعد بیشتر جگہوں پر کئی اراضی مالکان نے ان عمارتوں پرہی قبضہ کرلیا۔ان عمارتوں کوکروڑوں روپئے کی لاگت سے تعمیر کیا گیا۔ان پنچایت گھروں کو تعمیر کرنے کے لئے جن لوگوں سے

زچہ بچہ اسپتال اننت ناگ میں آوارہ کتوں کے کاٹنے سے 8 زخمی

 اننت ناگ //  اننت ناگ کا زچہ بچہ اسپتال آوارہ کتوں کی آماجگاہ میں بن چکا ہے۔اسپتال کے صحن میں گذشتہ ایک ہفتے کے دوران کتوں کے کاٹنے سے 8 افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ضلع اننت ناگ کا واحد زچہ بچہ اسپتال جو پہلے ہی غیر محفوظ قرار دیا گیا ہے، اب آوارہ کتوں کی آماجگاہ بن چکا ہے۔ ذرائع کے مطابق اسپتال کے صحن میں گذشتہ ایک ہفتے کے دوران کتوں کے حملے میں 8 افراد زخمی ہوگئے  ،جن میں 3 خواتین بھی شامل ہیں۔کتوں نے تیمارداروں کو دوران شب اس وقت اپنا نشانہ بنایا جب یہ لوگ ادویات یا دیگر ضروری سامان لانے کے لئے اسپتال سے باہر نکلے۔ اسپتال کے صحن میں ایک ڈمپنگ سائٹ بنائی گئی ہے جہاں ہر وقت آوارہ کتے منڈلاتے رہتے ہیں جس کی وجہ سے یہاں آنے والے لوگوں میں خوف و ہراس دیکھنے کو ملتا ہے۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ اسپتال کی عمارت پہلے ہی غیر محفوظ قرار دی گئی ہے تاہم اسپتال کو منتقل کرنے پر سب

مزید خبریں

کپوارہ میں غیر مقامی ذہنی طور معذورخاتون کی لاش بر آمد  سی این ایس    سرینگر// کپوارہ میں سنیچروار صبح کو ایک غیر مقامی ذہنی طور معذورخاتون کی لاش برآمد ہوئی۔سی این ایس کے مطابق کپوارہ میں ایک غیر مقامی ذہنی طورمعذورخاتون گزشتہ آتھ برسوںسے گھومتی پھرتی تھی اورآج اُس کی لاش ریگی پورہ پل کے پاس پائی گئی۔پولیس کے مطابق لاش کو طبی وقانونی لوازمات پورا کرنے کیلئے ہسپتال منتقل کیاگیا۔اس سلسلے میں مزیدتحقیقات شروع کی گئی ہے ۔     شالہ ٹینگ میں لاپتہ بچے کی لاش نہر سے ملی  ارشاداحمد   سرینگر//شالہ ٹینگ میں گزشتہ روز لاپتہ ہوئے تین برس کے کمسن لڑکے کی لاش گھر کے عقب میں واقع نہر سے بازیاب کی گئی۔معلوم ہوا ہے کہ گزشتہ روزدن کے تین بجے اچانک تین برس کا کمسن سالم بلال صوفی ولدبلال احمد صوفی ساکن غالب آباد شالہ ٹینگ گم ہوگی

کورونا وائرس سے مزید 4فوت، 88کا نیا اندراج

 سرینگر // جموں و کشمیر میں پھر کورونا وائرس سے فوت ہونے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہوا اور جمعہ کو مزید 4افراد وائرس سے فوت ہوگئے۔ متوفین کی مجموعی تعداد 1928تک پہنچ گئی۔ مہلوکین میں 719 جموں جبکہ 1209 کشمیر سے تعلق رکھتے ہے ۔  پچھلے 24 گھنٹوں کے دوران کوروناوائرس کی تشخیص کیلئے 22ہزار ایک تشخیصی ٹیسٹ کئے گئے جن میں 88کی رپورٹیں مثبت آئیں اور اسطرح متاثرین کی مجموعی تعداد 1لاکھ 23ہزار852ہوگئی ہے جن میں 72ہزار 491کشمیر جبکہ 51ہزار361ہوگئی ہے۔ نئے 88معاملات سامنے آئے ہیں ، ان  میں 42جموں جبکہ 46کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر میں متاثر ہونے والے 46افراد میں سے 18ضلع سرینگر، 4بارہمولہ، 5بڈگام، 4پلوامہ، 3کپوارہ، 4اننت ناگ، 2بانڈی پورہ، 4گاندربل، 0شوپیان اور 2کولگام سے تعلق رکھتے ہیں۔ جموں صوبے کے 42افراد میں 32ضلع اننت ناگ، 2ادھمپور، 3راجوری، 1ڈوڈہ اور 4پونچھ سے تعلق رک

جمعہ کو 3003طبی عملے نے ٹیکے لگوائے

 سرینگر // سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ میں شعبہ امراض چھاتی کے سربراہ اور سٹیٹ ایمونائزیشن آفیسر جموں و کشمیر سمیت جمعہ کو مزید 3ہزار سے زائد ہیلتھ ورکروں کو کورونا مخالف ٹیکے لگائے گئے اور اسطرح جموں و کشمیر ابتک 10ہزار ہیلتھ ورکروں کو کورونا مخالف ویکسین دیئے گئے ہیں۔جمعہ کو سی ڈی اسپتال میں سب سے پہلے کورونا مخالف ٹیکہ لگوانے والے ڈاکٹر نوید نذیر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ ٹیکہ لینے کے بعد مجھ میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، بلکہ میں ہلکا بخار اور جسم میں درد کی اُمید کررہا تھا لیکن وہ بھی نہیں ہوا ‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ویکسین کرانے کے بعد میں تمام ہیلتھ ورکروں سے کہوں گا کہ وہ اپنے لئے اور اپنے اہلخانہ کے علاوہ دیگر لوگوں کیلئے ویکسین لگوائیں کیونکہ جب وہ محفوظ رہیں گے ، تبھی انکے اہلخانہ اور دیگر لوگ بھی محفوظ رہیں گے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ لوگ افواہ پھیلا رہ

۔26جنوری کی آمد آمد

سرینگر//26جنوری کی آمد کے ساتھ ہی شہر میں تلاشیوں کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے۔ لالچوک، شہر کے سیول لائنز  میں کئی مقامات پر ناکوں اور بخشی سٹیڈیم کے ارد گرد بھی گاڑیوں اور راہگیرئوں کی تلاشیاں لی جارہی ہیں۔ رام باغ نٹی پورہ علاقے میں فورسز نے جمعہ کو تلاشیاں لیں۔ پرائیویٹ گاڑیوں کو روک کر انکی تلاشی لی گئی اور مسافروں کی چیکنگ کی گئی۔ فورسز نے جمعہ کو سیول لائنز علاقوں اور لالچوک کے گردونواح میں گاڑیوں کی باریک بینی سے تلاشیاں لیں،اور گاڑیوں کے کاغذات کی جانچ کی۔بڈشاہ چوک،ٹی آر سی کراسنگ اور پولو ویو کے نزدیک اضافے ناکے لگائے گئے تھے اور راہگیروں،موٹر سائیکل سواروں اور گاڑیوں کی تلاشیاں لی گئیں۔26جنوری کی آمد ہو یا 15اگست کا دن ہو،  شہر میں پچھلے 30برسوں سے یہی صورتحال دیکھنے کو ملتی ہے۔جگہ جگہ ناکے لگانا، جامہ تلاشیاں لینا، گاڑیوں کی چیکنگ کرنا وغیر کوئی نئی بات نہیں ہے۔ بائی

سیاسی مخالفین کی تنگ طلبی جمہوری نظام کا حصہ نہیں؛نیشنل کانفرنس

سرینگر// نیشنل کانفرنس کے اراکین پارلیمان محمد اکبر لون اور جسٹس (ر) حسنین مسعودی نے قیدیوں خصوصاً سیاسی لیڈران کی رہائی کا مطالبہ کیاہے۔ دونوں لیڈران نے کہا کہ کشمیر کے سیاسی لیڈران کو نشانہ بنانا ،تنگ طلب کرنا اور بلاجواز طریقے پر نظربند رکھنا معمول بن کر رہ گیا ہے۔ ایک بیان میںانہوں نے کہا کہ سیاسی لیڈران کیساتھ اس طرح کا نارواسلوک روا رکھنا ایک انتہائی تشویشناک صورتحال کی عکاسی کرتا ہے۔ اُن کا کہنا تھاکہ سیاسی لیڈران کی نظربندی اور تنگ طلبی سے اس بات کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ عام لوگوں کو کس صورتحال کا سامنا کرنا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی مخالفین کی بلاوجہ تنگ طلبی اور بلاجواز نظربند ی کسی بھی جمہوری نظام کا حصہ نہیں ہوسکتی۔ انہوں نے کہاکہ سیاسی انتقام گیری کی بنا پر کسی بھی فرد کی انفرادی آزادی پر قدغن نہیں لگائی جاسکتی ہے، یہ آئین اور قانون کی صریحاً خلاف ورزی ہے۔ پارٹی لی

حیدرپورہ، بڈشاہ نگر نٹی پورہ ماگام اور لارکی پورہ میں آگ کی وارداتیں

سرینگر+اننت ناگ// حید پورہ،بڈشاہ نگر نٹی پورہ ، ماگام اور لارکی پورہ اننت ناگ میں آتشزدگیوں کے الگ الگ واقعات میں2رہائشی مکان خاکستر ہوگئے جبکہ دارالعلوم اور دکان کو نقصان پہنچا۔ گلوان پورہ حیدر پورہ میں قائم دارالعلوم سیدہ حفصہؓ اسلامیہ میں جمعرات کورات دیر گئے آگ نمودار ہوئی ۔آگ لگنے کی اطلاع ملتے ہی فائر سروس عملہ جائے واقعہ پر پہنچ گیا اور آگ پر قابو پالیاگیا۔ آگ لگنے سے دارالعلوم میں موجود سامانا، دینی کتب خاکستر ہوگئیں۔ مقامی لوگوںکاکہنا ہے کہ آگ کا یہ واقعہ رونماہوتے وقت عمارت میں قریب 12 طالب علم اورمعلم موجودتھے اور انہیں بحفاظت وہاں سے نکالاگیا۔اس دوران بڈشاہ نگرنٹی پورہ سرینگر میں جمعرات کوبجلی شارٹ سرکٹ کی وجہ سے ایک دکان میں آگ نمودار ہوگئی ۔آگ کو دیگر دکانوں تک پھیلنے سے پہلے ہی قابو پالیاگیا۔دریں اثناء ماگام بڈگام میں بھی جمعرات کی شب ایک رہائشی مکان میں آگ نمود

ریزوپتی گڈربال گنہ ون میں زمین کھسکنے سے خوف و ہراس

کنگن// ریزو پتی گڈر بال گنہ ون گنڈ میں زمین کھسکنے سے رہائش پذیر آبادی میں خوف ہراس کی لہر دوڑ گئی ہے۔ ریزو پتی گڈری بال گنہ ون کے لوگوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ ان کی بستی 6 گھرانوں پر مشتمل ہے اور ان کے رہائشی بستی سے جو حیدر کنال گزر رہی ہے ، اس کی وجہ سے زمین کھسکتی ہے ۔مقامی بستی کے باشندے غلام بنی کاکہنا ہے کہ 16جنوری کی رات ساڑھے دس بجے ایک زور دار دھماکہ ہوا جس کے بعد مقامی بستی کے لوگ گھروں کے اندر سہم گئے اور صبح کوجب لوگ گھروں سے باہر آئے تو انہوں نے دیکھا کہ زمین کھسک گئی ہے اور وہاں پر ایک بھاری مٹی کا تودہ گر آیاتھا۔ مذکورہ شہری نے کہاکہ اس بارے میں سب ڈویژنل مجسٹریٹ کنگن کو بھی آگاہ کیا گیا ہے۔ لوگوں کاکہنا ہے کہ اگر اراضی پرپشتہ جلد نہیں تعمیر کیاگیا تو یہاں پر کھبی بھی بڑا حادثہ رونما ہوسکتا ہے۔ لوگوں کاکہنا ہے کہ موسم سرما کے دوران درجہ حرارت میں کمی ہونے سے اگر

نوگام میں چوری کے 2معاملات حل

 سرینگر // سرینگر میں پولیس نے چوری کے دو معاملات کو حل کرتے ہوئے 7افراد کو گرفتار کرکے لاکھوں روپے کا مال مسروقہ برآمد کرلیا۔ پولیس نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ 14جنوری 2021کو پولیس تھانہ نوگام کو محمد شفیع ساکن چکپورہ نوگوام کی طرف سے ایک تحریری شکایت موصول ہوئی جس میں بتایا گیا تھا کہ چیک پورہ نوگام سے کچھ نامعلوم چوروں نے اس کی 35 بھیڑیں چرا لیں ۔تحریری شکایت پر پولیس نے ایک کیس زیر نمبر 3/2021درج کر کے تحقیقات شروع کی ۔تفتیش کے دوران ، تفتیشی افسران کو چار افراد کی شمولیت کے بارے میں معلوم ہوا جنہیں گرفتار کر کے ان کے قبضے سے 10 بھیڑیں برآمد ہوئی ہیں۔پولیس نے کہا کہ نوگام تھانہ کو 16جنوری کے 2021کو بھی عبدالحمید بٹ ساکن نوگام سے ایک تحریری شکایت موصولہ ہوئی جس میں بتایا گیا کہ کچھ نامعلوم چوروں نے نوگام بائی پاس پر واقع ایم / ایس کشمیر ویلی ٹریڈنگ کمپنی یعنی اس اسٹور سے سینی

مشیر بصیر خان سے متعدد وفود اور اَفراد ملے

سری نگر//متعدد وفود اور افراد نے سول سیکرٹریٹ میں لیفٹیننٹ گورنرکے مشیر بصیراحمد خان کو اپنی شکایات اور مانگوں سے آگاہ کیا۔ صدر کے ایم ٹی ایف محمد یاسین خان نے مشیر کو ترال بس سٹینڈ میں دکانوں کی تعمیر کے بارے میں تفصیل دی ۔ اِس موقعہ پراے ڈی سی پلوامہ موجود تھے ،نے مشیر کو بتایا کہ مذکورہ کام کا مفصل پروجیکٹ رپورٹ تیار کرکے منظوری کے لئے پیش کیا گیا ہے۔سرینگر میونسپل کارپوریشن کے کارپوریٹروں کے ایک وفد نے مشیر بصیر احمد خان سے ملااور انہیں اپنے متعلقہ وارڈوں میں مختلف تعمیراتی کاموںکے بارے میں جانکاری دی اور رہائشی سہولیات سے متعلق مسائل سے بھی انہیں آگاہ کیا۔زکورہ حضرت بل سے آئے ایک وفد نے مشیر سے درخواست کی ان کی بستی میں ایک اضافی بجلی ٹرانسفارمر نصب کیا جائے کیوں کہ موجودہ ٹرانسفارمر میں پوری بستی کو بجلی سپلائی کرنے کی صلاحیت موجود نہیں ہے جس کے سبب بجلی کی سپلائی متاثر رہتی ہ