۔120میگاواٹ سیوا این ایچ پی سی پروجیکٹ

سرینگر //این ایچ پی سی نے کہا ہے کہ جموں وکشمیر میں 120 میگاواٹ بجلی پروجیکٹ سیو ادوم کا پلانٹ 31مارچ تک بند کر دیا گیا ہے کیونکہ پروجیکٹ کیلئے تعمیر ہو رہی سرنگ head race tunnel (HRT)  کو کچھ نقصان پہنچا ہے ۔کمپنی کے مطابق ہیڈ ریس ٹنل بجلی کی پیداوار کیلئے پاور ہاوس سے پانی لے جانے میں مدد فراہم کرتا ہے ۔کمپنی نے یہ بھی بتایا کہ بی ایس سی کو پہنچنے والے نقصان کے نتیجے میں 120 میگاواٹ بجلی پروجیکٹ سیوا سکنڈ 25ستمبر 2020سے 31مارچ 2021تک بند رہے گا ۔یار رہے کہ کمپنی نے اس پروجیکٹ کو ضلع کٹھوعہ میں تعمیر کیا ہے ۔اس پاور پروجیکٹ کے تینوں یونٹوں کا کام جون جولائی 2010 میں شروع کیا گیا تھا۔اس پاور پروجیکٹ سے مستفید ریاستوں میں اترپردیش ، اتراکھنڈ ، دہلی ، ہریانہ ، جموں و کشمیر ، پنجاب ، راجستھان اور چندی گڑھ ہیں۔    

مخالف سمت سے گاڑیوں کو چھوڑنے کا شاخسانہ

بانہال // جموں سرینگر شاہراہ پر رام بن اور بانہال سیکٹر میں جاری ٹریفک جام کا سلسلہ بدھ کے روز بھی جاری رہا اور یوم بلاک کی تقریبات میں شرکت کرنے والوں کے علاوہ مسافروں اورعام لوگوں کو ایکبار پھر مشکلات کا سامنا کرنا پڑا اورانہیں 15 کلومیٹر طے کرنے میں 5 گھنٹے لگے۔ بدھ کی صبح بانہال، شیربی بی اور رامسو کے درمیان شدید نوعیت کا ٹریفک جام دن بھر جاری رہا اور اس دوران کئی کئی گھنٹوں تک ٹریفک جام کے جھمیلوں میں پھنسے رہنے کے بعد گاڑیوں کو نہایت ہی سست روی کے ساتھ چار پانچ گھنٹوں کی تاخیر کے ساتھ اپنی منزلوں کی طرف بڑھنا نصیب ہوا۔ کئی سرکاری ملازمین نے فون پر کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ وہ رام بن، رامسو اور کھڑی میں اپنی ڈیوٹی پر جانے اور یوم بلاک یا بلاک دیوس میں شرکت کیلئے صبح سات اور آٹھ بجے  گھروں سے نکلے لیکن بانہال اور شیر بی بی کے درمیان وہ دن کے گیارہ بجے تک جام میں ہی پھنسے رہے او

محکمہ بجلی کے ڈیلی ویجرکہیں کے نہیں رہے | کرنٹ لگنے سے درجنوں ہلاک، کئی اپاہج بن گئے ، دسمبر 2019سے اجرتیں بھی نہ ملیں

رام بن // پاور ڈیولپمنٹ کارپوریشن لمیٹیڈ میں پچھلی دو دہائیوں سے کام کرنے والے تقریباً 1000 نیڈ بیس ڈیلی ویجروں کی جان پر بن آئی ہے اور وہ نیشنل انفارمیشن پورٹل پر اپنا نام درج کرنے اور انہیں آن لائن کرکے مہینوں سے بند پڑی اجرتیں واگذار کرنے کے مطابات کیلئے سراپا احتجاج ہیں۔ صوبہ جموں کے جموں، ادہمپور، کٹھوعہ اضلاع کے علاوہ وادی چناب اور خطہ پیر پنجال کے شہر و گام میں محکمہ بجلی میں نیڈ بیس ڈیلی ویجروں کی حیثیت سے دن رات کام کرنے والے ان عارضی ملازمین میں سے اب تک 2 درجن کے قریب کار سرکار انجام دینے کے دوران بجلی کے کرنٹ لگنے کی وجہ سے لقمہ اجل بنے ہیں جبکہ 40 سے زائد جھلس کر عمر بھر کیلئے اپاہج ہوگئے اور بیشتر کے جسمانی اعضا ہی مختلف ہسپتالوں میں کاٹ دینا پڑے ہیں۔عمر بھر کیلئے معذوروں اور ناتواںوں کی زندگی بسر کرنے والے ان عارضی ملازمین کی درد بھری کہانی کا دلدوز پہلو یہ کہ جموں وکش

شاہراہ کے خونین سیکٹر میں سرکاری ہسپتالوں کی حالت 35 سال بعد بھی نہ بدلی

بانہال // جموں سرینگر قومی شاہراہ پر واقع ضلع رام بن میں ناشری ٹنل سے جواہر ٹنل کے درمیان شاہراہ،سڑک حادثات کیلئے بدنام ہے اور اس حصے پر آئے روز کے سڑک حادثات کا سلسلہ ہنوز جاری رہتاہے۔ اس سیکٹر میں طبی سہولیات کی بہتری کیلئے اگرچہ 1980 کی دہائی میں سرکاری طور پر بہت کوششیں کرکے کئی ہسپتال بنائے گئے اور کئی طبی مراکز کا درجہ بھی بڑھایا گیا لیکن 35 سال کا طویل عرصہ گذر جانے کے باوجود جموں سرینگر قومی شاہراہ پر واقع چار اہم ہسپتال ابھی تک مریضوں اور سڑک حادثات کے متاثرین کیلئے دوسرے ہسپتالوں میں ریفر کرنے کے سینٹر ہی بنے ہوئے ہیں۔ شیر کشمیر میموریل ایمرجنسی ہسپتال بٹوت، ٹراما ہسپتال رام بن،ضلع ہسپتال رام بن، پرائمری ہیلتھ سینٹر رامسو اور ایمرجنسی ہسپتال بانہال سڑک حادثات کے مسافروں اور4 لاکھ کے قریب مقامی آبادی کیلئے قائم ہیں اور بہت سارے ڈاکٹر تعینات بھی ہیں اور بہت سارے ایم ڈاکٹروں ک

محکمہ جل شکتی کے عارضی ملازمین کی کام چھوڑ ہڑتال جاری

کشتواڑ//پچھلے 72 گھنٹوں سے ضلع ہیڈکوارٹر کشتواڑ میں اپنی مانگوں کے حق میں احتجاج کررہے محکمہ جل شکتی کے عارضی ملازمین نے اپنی ہڑتال میں مزید72گھنٹے کی توسیع کردی ہے۔انہوںنے اپنی اس بند کال کو مزید 72 گھنٹے بڑھانے کا فیصلہ سناتے ہوئے کہاکہ حکومت کی طرف سے ان کی مانگوں کو کوئی سنوائی نہیں ہورہی اورانہیں احتجاج کاراستہ اختیار کرنے پر مجبور کیاجارہاہے۔یہ عارضی ملازمین پورے جموں وکشمیر میں احتجاج کررہے ہیں ۔احتجاجی ملازمین مستقل ملازمت اور تنخواہوں کی بروقت ادائیگی کی مانگ کررہے ہیں ۔ہڑتالی ملازمین نے کہاکہ ان کے مطالبات پورے کرنے کیلئے حکومت نے کئی بار یقین دہانی کروائی لیکن عملی سطح پر کوئی اقدام نہیں اٹھایاجارہاجو افسوسناک بات ہے ۔انہوں نے کہاکہ ابھی انہوں نے 72گھنٹوں کیلئے ہڑتال کال میں توسیع کا اعلان کیاہے اور اگر ان کے مطالبات پورے نہ ہوئے تو وہ اس ہڑتال میں مزید توسیع کردیں گے اور مط

بٹوت میں کولگام کا ٹرک ڈرائیور اور ساتھی گرفتار

رام بن //بٹوت میں پولیس نے جموں سرینگر شاہراہ پر مبینہ طور پر مشکوک سرگرمیوں کے الزام میں ایک ٹرک ڈرائیور اور اس کے مددگار کو حراست میں لیا۔پولیس نے بتایا کہ دونوں افراد کی شناخت ہلال احمد بٹ ولد محمد رمضان اور ارشاد احمد کے طور پر ہوئی ہے جودونوں ضلع کولگام کے رہائشی ہیں۔ وہ ٹرک زیر نمبر  میں سوار تھے ۔جموں سے وادی سامان لے جانے والے ٹرک کو ناشری پولیس ناکہ پر رکنے کا اشارہ کیا گیا تھااوردونوں افراد کو پوچھ گچھ کے لئے اتوار کی صبح حراست میں لیا گیا ۔مبینہ طور پر متعدد سیکورٹی ایجنسیاں ان سے پولیس اسٹیشن بٹوت میں تفتیش کر رہی ہیں ۔  

سرینگرجموں شاہراہ پر جگہ جگہ ٹریفک جام

 بانہال// //سری نگرجموں شاہراہ پر خانہ بدوشوں کی نقل وحمل کے علاوہ مخالف سمت سے آرہی فوجی کانوائے کی وجہ سے جمعہ کوپھرٹریفک جام کے مناظر دیکھنے کو ملے جس کی وجہ سے مسافروں کو اپنے منزل مقصودپہنچنے میں تاخیرکاسامنا کرنا پڑا۔جمعہ کو اگرچہ وادی سے جموں جانے کی گاڑیوں کو اجازت تھی تاہم مخالف سمت سے آرہی کانوائے اور خانہ بدوشوں کے وادی سے نقل مکانی کرنے اور میوے سے لدی گاڑیوں کی وجہ سے سرینگرجموں شاہراہ پر جگہ جگہ ٹریفک جام تھا اور گاڑیاں سست رفتاری سے آگے بڑھ رہی تھیں۔ٹریفک جام کی وجہ سے بانہال اورڈگڈول کے درمیان جگہ جگہ گاڑیاں گھنٹوں جام میں رُکی تھیں۔ٹریفک جام کی وجہ سے جمعہ کوایک بار پھر شاہراہ پرسفر کرنے والے مسافروں کے علاوہ نوگام،بانہال،کھڑی،نیل،رام سو،پوگل پرستان کے لوگوں کو ناقابل برداشت مشکلات کا سامنا کرناپڑااور کئی کلومیٹر کافاصلہ طے کرنے میں انہیں گھنٹوں لگے۔قابل ذکر ہے

سنگلدان میں ٹاٹاسومو والوں کے وارے نیارے | کرایہ میں ہوشربا اضافہ، 25کلومیٹرپر100روپے

گول// سب ڈویژن گول کے سنگلدان سے نکلنے والی ٹاٹا سومو گاڑیوں کی جانب سے من مانے کرایہ میں اضافہ کی وجہ سے مسافر شدید پریشانیوں سے دوچار ہیں۔ جہاں گاڑیوں میں سواریاں کھچا کھچ بھری ہوتی ہیں وہیں کرایہ میں دوگنااضافہ بھی کیاگیا ہے ۔ اگر چہ کووڈ19کے پیش نظر سرکار نے مسافر گاڑیوں کے لئے تیس فیصد اعلان کیا تھا لیکن اس کے لئے گاڑی والوں کو کم سواریاں بٹھانی تھیں تا کہ گاڑی والوں کو بھی نقصان نہیں ہو گا لیکن اس حکم نامے کو ردی کی ٹوکری میں ڈالتے ہوئے ڈرائیورں نے من مرضی کرایہ وصولنا شروع کر دیا ہے ۔ اگر چہ مسافر اس پر اسرار بھی کرتے ہیں لیکن انہیں گاڑیوں میں سفر کرنے سے منع کیا جاتا ہے ۔ کشمیر عظمیٰ کے ساتھ بات کرتے ہوئے سنگلدان میں کئی مسافروں نے کہا کہ سنگلدان سے اندھ تک صرف25کلو میٹر ہے جہاں چالیس سے پچاس روپے کرایہ ہے لیکن یہاں پر 100روپے کرایہ وصولا جاتا ہے جو سراسر ظلم ہے ۔ اگر چہ اس سلس

قصبہ بھدرواہ میں بیوپار منڈل کا احتجاج | لاک ڈاؤن کی مذمت، کاروباری ادارے کھولنے کا مطالبہ

ڈوڈہ //ڈوڈہ کے بعد بیوپار منڈل بھدرواہ نے بھی انتظامیہ مخالف احتجاج کرتے ہوئے لاک ڈؤن ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے۔صدر بیوپار منڈل ابوظرین خطیب کی قیادت میں مظاہرین نے انتظامیہ مخالف نعرے بازی کرتے ہوئے کہا کہ ایک طرف مرکزی وزارت داخلہ نے لاک ڈاؤن (4)کے سلسلہ ہدایات جاری کی ہیں لیکن مقامی انتظامیہ اس کی خلاف ورزی کی ہے۔انہوں نے کہا کہ مسلسل لاک ڈاؤن کی وجہ سے قصبہ کے دکانداروں، تاجر برادری و ٹرانسپورٹرز بری طرح متاثر ہو رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ انہیں بڑے پیمانے پر مالی خسارہ ہوا ہے اور اس کے باوجود قسطیں، ٹیکسوں و کرایہ کی ادائیگی کرنی پڑ رہی ہے۔بیوپار منڈل نے حکام سے مطالبہ کیا کہ دوکانداروں و چھوٹے کاروباری لوگوں کو معقول معاوضہ ادا کیا جائے تاکہ نقصان کی بھرپائی ہو سکے۔انہوں نے انتظامیہ کو انتباہ کیا کہ اگر قصبہ میں کاروباری نظام بحال نہیں کیا گیا تو وہ بڑے پیمانے پر احتجاج شروع کریں گے۔صد

شاہراہ پر واقع رامسو ہسپتال حکام کی بے حسی کاشکار

 بانہال//ضلع رام بن میں شاہراہ پر واقع سب ڈویژن رامسو کا پرائمری ہیلتھ سینٹر ایک کمرے اوردو ڈاکٹروں کے رحم و کرم پر ہے اور شاہراہ پر سڑک حادثات کیلئے مشہور اس سیکٹر میں واقع رامسو ہسپتال بنیادی سہولیات سے محروم ہے۔ تحصیل صدر مقام و سب ڈویژن رامسو کا یہ ہسپتال نہ صرف شاہراہ پر پیش آنے والے سڑک حادثات سے نمٹنے کیلئے وجود میں لایا گیا تھا جبکہ رامسو،چکہ، سربگھنی، نیل اور شگن وغیرہ کی 70 ہزار کے قریب آبادی کا انحصار بھی اسی ہسپتال پر ہے۔ بلاک ڈیولپمنٹ کونسل رامسو کے چیئرمین شفیق احمد کٹوچ نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ مقامی آبادی کے ساتھ ساتھ شاہراہ پر واقع اس طبی مرکز کے نام پر مذاق کیا جارہا ہے اور ہسپتال کے باہر8 ۔10 سال پہلے ایک بورڈ لگایا گیا تھا جس میں اسے پرائمری ہیلتھ سینٹر رامسو کا نام دیا گیا تھا جبکہ یہاں ڈسپنسری کے برابر بھی سہولیات دستیاب نہیں۔ انہوں نے کہا کہ رامسو کا پر

فورلین شاہراہ کی تعمیر |ملبہ دریائے چناب اور ندی نالوں میں پھینکنے کا سلسلہ جاری

را م بن//نیشنل ہائی وے اتھارٹی آف انڈیا کی ٹھیکیدار کمپنیاں عوام کی چیخ و پکار کے باوجود بغیر کسی خوف کے ملبہ دریائے چناب اور بشلڑی نالہ میں پھینک رہی ہیں جس سے ماحولیاتی توازن بگڑتاجارہاہے۔مقامی لوگوں نے الزام لگایا کہ اس معاملے کو انتظامیہ اور متعلقہ حکام کے نوٹس میں لایا گیا ہے جس کے باوجود ناشری سے بانہال تک  ٹھیکیداروں نے دریائے چناب اور بشلڑی نالہ میں ملبہ پھینکنے کا سلسلہ جاری رکھاہواہے۔ان کا کہنا تھا کہ اگرچہ کچھ جگہوں کوملبہ جمع کرنے کیلئے رکھاگیاہے لیکن سب کچھ ندی نالوں اور دریائے چناب میں پھینک دیاجاتاہے۔لوگوں نے الزام لگایا کہ ایسا لگتا ہے کہ انتظامیہ کے عہدیداروں اور ٹھیکیداروں کے مابین کوئی گٹھ جوڑ ہے اوراسی وجہ سے کھلی چھوٹ ملی ہوئی ہے۔ان کاکہناتھاکہ انتظامیہ اور متعلقہ حکام کی طرف سے اس سلسلے میں کوئی کارروائی نہیں کی جارہی جو افسوسناک ہے۔بانہال سے لے کر ناشری تک

چناب ویلی پاور پروجیکٹس کی 9ویں سالانہ جنرل میٹنگ منعقد

جموں// چناب ویلی پاور پروجیکٹس پرائیویٹ لمیٹڈ کی نویں سالانہ جنرل میٹنگ جمعرات کو یہاں سی وی پی پی پی ایل کے چیئرمین سریش کمار کی صدارت میں منعقد ہوئی۔ سالانہ جنرل میٹنگ میں سال 2019-2020کا سالانہ اکائونٹ پیش کیا گیا۔میٹنگ میں بورڈ کے ممبران پرنسپل سیکرٹری جے کے پی ڈی ڈی جی اوجے جے روہت کنسل، ڈائریکٹر فائنانس این ایچ پی سی ایم کے متل،منیجنگ ڈائریکٹر این ایچ ڈی سی اے کے مشرا اور منیجنگ ڈائریکٹر سی وی پی پی پی ایل اے کے چودھری کے ساتھ جی ایم (فائنانس) کے کے گوئیل اورکمپنی سیکرٹری ایس آنند تھے اور اس کے علاوہ این ایچ پی سی ، جے کے ایس پی ڈی سی ، پی ٹی سی (اِنڈیا) لمیٹڈ اور سی اے راج کے مہرا ، سٹیٹوری آڈیوٹیر س کے نمائندوں نے بذریعہ ویڈیو کانفرنسنگ میٹنگ میں شرکت کی۔میٹنگ کو بتایا گیا کہ وزیر اعظم کی جانب سے سرمایہ کاری کی منظوری کے بعد کیرو ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ، کیرو ہائی پروجیکٹ کے

رام بن میں 38 اورڈوڈہ میں 54کیس مثبت

بانہال+ڈوڈہ// ضلع رام بن میں جمعرات کو مزید 38 افراد کے کورونا وائرس نمونے مثبت آئے اور اس طرح ضلع میں متاثرین کی کل تعداد 1209 تک پہنچ گئی ہے۔ ان میں سے فعال معاملات کی تعداد 423 ہے جبکہ ضلع میں اب تک 8 افراد کی موت واقع ہوئی ہے۔ جمعرات کو گول سے 6، ارکان انٹرنیشنل سے 4، اے بی سی آئی تعمیراتی کمپنی سے1، ایچ سی سی تعمیراتی کمپنی سے2، ناشری ٹنل کا ایک ورکر اورنیل، میتراہ، رام بن، چندرکوٹ، ناشری ٹنل، ڈھلواس، سٹیٹ بنک آف انڈیا، پرنوت، ہڑوگ، سیری، نیراہ ، سناسر، کوٹ اور امکوٹ سے معاملات سامنے آئے ۔کورونا ٹیسٹوں میں تیزی لانے کے بعد ضلع میں متاثرین کی تعداد میں بتدریج اضافہ ہورہا ہے جبکہ لوگوں نے بھی ماسک پہننا ترک کردیاہے اورسماجی دوری کا اصول بھی پامال ہورہاہے۔شادی بیاہ اور دیگر سماجی تقریبات میں لوگ بڑی تعداد میں شرکت کر رہے ہیں۔ ادھر ڈوڈہ ضلع سے کووڈ 19 کے 54 نئے مثبت کیس سامنے آئے

مرکزی جامع مسجد کشتواڑ کے موذن فوت

کشتواڑ//ضلع کشواڑ کی مرکزی جامعہ مسجد کے موذن غلام رسول باغوان عرف رساباغوان کا انتقال ہوگیا۔ موصوف گزشتہ 40 سال سے زائد عرصہ سے جامع مسجد کے موذن تھے۔ انہوں نے اپنی 85سالہ زندگی کابیشتر وقت جامعہ مسجد کی خدمت میں ہی گزارااور اسکی تعمیر کے وقت پیش پیش رہے۔ انکا کچھ روز قبل کورونا ٹیسٹ مثبت آیا تھاجسکے بعد انہیں گھر میں ہی رکھا گیااور بدھ کی صبح انکی گھر میں ہی موت واقع ہوئی،جسکے بعد انکی نماز جنازہ عصر کے بعد چوگان میں ادا کی گئی جہاں بڑی تعدادمیں لوگوں نے شرکت کی اورانہیں آبائی قبرستان دفن کیا گیا۔

ڈوڈہ میں حادثہ، 3افراد لقمہ اجل

 بانہال// ضلع رام بن کے ایک دور افتادہ علاقے میں ایک دلدوز حادثے کے دوران خاتون سمیت 3افراد لقمہ اجل جبکہ 5شدید طور پر زخمی ہوئے۔ پولیس کے مطابق ڈوڈہ سے کشتی گڑھ راج گڑھ جارہی ایک ٹاٹا موبائل زیر نمبرJK06A-6728چھچتھر کے مقام پر ساڑھے8بجے کے قریب ڈرائیور کے قابو سے باہر ہوگئی اور سینکڑوں فٹ نیچے نالے میں گر گئی۔ گاڑی میں قریب10لوگ سوار تھے اور دو خچر بھی تھے۔حادثے میں ایک خاتون سمیت 3افراد لقمہ اجل اور ایک خچر بھی ہلاک ہوا جبکہ 5افراد زخمی ہوئے۔  

کھڑی بانہال کا مرکزی بازار مکمل طور خاکستر

بانہال // بانہال کی تحصیل کھڑی میں آگ کی ایک ہولناک واردات میں آڑپنچلہ مارکیٹ میں تین منزلہ رہائشی مکان ، شاپنگ کمپلیکس اور سرکاری راشن سٹور سمیت 28 دکانیں کروڑوں روپے کی مالیت کے مال و اسباب سمیت جل کر راکھ ہوگئے۔ فائر سروس سٹیشن 16 کلومیٹر دور بانہال میں ہونے کی وجہ سے جب تک آگ بجھانے والا عملہ پہنچ پاتا، کھڑی کی مرکزی مارکیٹ آگ کے شعلوں کی نذر ہوکر راکھ بن چکی تھی۔ ابتدائی تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ آگ بجلی شارٹ سرکٹ کی وجہ سے لگی ۔بانہال سے16 کلومیٹر دور اور ناچلانہ کے مقام پر جموں سرینگر شاہراہ سے 5 کلومیٹر دور کھڑی تحصیل ہیڈکوارٹر میں فائر اینڈ ایمر جنسی سہولیات نہ ہونے کی وجہ سے  مقامی لوگوں نے رضاکارانہ طور پر آگ بجھانے کی ناکام کوشش کی جس کے دوران کئی لوگ زخمی بھی ہوئے۔مقامی نوجوانوں نے جمعہ کی شب احتجاجی مظاہرے بھی کئے۔ لوگوں کا کہناہے کہ وہ کھڑی میں فائرسروس سہولی

شاہراہ پر ٹرک کھائی میں جاگرا، ڈرائیور ہلاک

رام بن//بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب جموں سرینگر قومی شاہراہ پر پیڑا کے مقام پرایک گاڑی حادثہ کاشکار ہوگئی جس کے نتیجہ میں اس کاڈرائیور ہلاک ہوگیا جس کی ابھی تک شناخت نہیں ہوسکی ہے۔حادثے میں ڈرائیور کے ساتھ اس کا ہیلپر زخمی ہواہے۔اسے نازک حالت میںضلع ہسپتال سے گورنمنٹ میڈیکل کالج وہسپتال جموں منتقل کردیاگیاہے۔پولیس نے بتایا کہ مقامی لوگوں نے اطلاع دی کہ ایک ٹرک بدھ اور جمعرات کی درمیانی رات کو شاہراہ پر پیڑا کے قریب گہری کھائی میں گرگیاتھا جس کے بعد پولیس موقعہ پر پہنچی اوراس نے ایک نعش کو پایا،جس کی شناخت نہیں ہوسکی ہے۔اس دوران پنکج کمار ولد سریندر کمار ساکن پنجاب کو زخمی حالت میں ہسپتا ل منتقل کیا۔ایس ایچ او چندرکوٹ وجے کوتوال نے بتایاکہ نعش کی شناخت کی جارہی ہے اور اس سلسلے میں گاڑی کے مالک سے بھی رابطہ کیاجارہاہے۔

شیطان نالہ بانہال میں ٹرک کھائی میں گرگیا،2زخمی

بانہال//سری نگر جموں شاہراہ پر ایک ٹریفک حادثے میں دوافرادزخمی ہوگئے جنہیں فوری طور بانہال اسپتال پہنچایا گیا جہاں سے شدیدزخمی ایک کو گورنمنٹ میڈیکل کالج اننت ناگ منتقل کیا گیا۔اطلاعات کے مطابق اتوار کی صبح جموں جانے والا ایک ٹرک زیر نمبربانہال سے بارہ کلومیٹر دورشیطان نالہ کے قریب سڑک سے لڑھک کر تین سوفٹ گہری کھائی میں جاگرا۔حادثے کی شدت سے ٹرک ٹکڑے ٹکڑے ہوگیااور اس میں سوار دوافراد زخمی ہوگئے ۔حادثے کی خبر سنتے ہی جواہر ٹنل اورٹھٹھار سے بانہال پولیس اورنوگام سے نوگام والنٹیئرزکے رضاکر بچائو کارروائیوں کے لئے جائے واردات پر روانہ ہوئے۔انہوں نے حادثے کی جگہ سے سخت مشقت کے بعددونوں زخمیوں کو نکالا۔حادثے میں زخمی ڈرائیور جگتارسنگھ اور معاون ڈرائیورہرویندر سنگھ ساکنان فتح گڑھ صاحب پنجاب کوایمرجنسی اسپتال بانہال منتقل کیاگیا جہاں سے ڈاکٹروں نے شدیدزخمی ہرویندرسنگھ کو گورنمنٹ میڈیکل کالج ان

کشتواڑ میں21پولیس اہلکار مثبت

کشتواڑ//جمعہ کو ریپڈ سمپلنگ کے دوران 21پولیس اہلکاروں کے نمونے مثبت پائے گئے جس کے بعد ایس ایس پی دفتر کو سینی ٹائزیشن کیلئے دور روز کیلئے بند کردیا گیاہے۔ ذرائع نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ جمعہ کو محکمہ صحت کے اہلکاروں نے ایس ایس پی دفتر میں کورونا کے نمونے حاصل کئے اور انکی ریپڈ سپملنگ کی گئی جس دوران دفتر میں تعینات  100کے قریب پولیس اہلکاروں کے نمونے حاصل کئے گئے جن میں سے 21کے نمونیمثبت پائے گئے۔اس کے بعد متاثرہ اہلکاروں کو آئیسولیشن میں رکھا گیا ہے جبکہ دفتر سینی ٹائزیشن کیلئے دوروز تک بندرہے گااوردیگر اہلکاروں کو احتیاطی اقدامات کرنے تاکید کی گئی ہے۔جن افراد کے نمونے مثبت آئے ہیں ان میں کسی بھی شخص کو کھانسی، بخار یا زکام کی کوئی شکایت نہیں تھی جس سے زیادہ ہی تشویش پائی جارہی ہے۔  

پینے کے پانی کی قلت

کشتواڑ//قصبہ کشتواڑ کے وارڈنمبر 4و دھوبی محلہ میں پانی کی عدم دستیابی سے عوام کوسخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ مقامی مردو زن نے احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ انہیں پچھلے دس روز سے پانی کی شدید قلت ہے جسے وہ پانی کی بوند کو ترس رہے ہیں۔خواتین نے میڈیا کو بتایا کہ ہ پانی خرید کر لاتے ہیں جبکہ محکمہ جل شکتی ان سے مفت میں فیس وصول کررہاہے اور وہ ٹینکر منگوانے پر مجبور ہیں۔ان کاکہناتھاکہ تعمیری کام کے دوران پانی کی پایپیں ٹوٹ گء ہیں اور گندہ پانی انکے ٹینکوں میں چلاجاتاہے اور وہ اسے ہی پی رہے ہیں جس میں مٹی اور دیگر گندگی مل جاتی ہے ان کاکہناتھاکہ اگرچہ محکمہ کے ملازمین کو بتایاجاتا ہے لیکن وہ بہانے بازی کرتے ہیں اور سنجیدگی کا مظاہرہ نہیں کیاجارہا۔انہوں نے کہا کہ پوری دنیا میں اس وقت وبائی بیماری پھیلی ہوئی ہے اور انتظامیہ ہر ممکنہ سہولت کی فراہمی کی باتیں کررہی ہے لیکن زمینی سطح پر سبھی دعو

تازہ ترین