تازہ ترین

رام بن ضلع میں آبی وسائل کی فراوانی کے باوجود پینے کے پانی کی شدید قلت | محکمہ جل شکتی کی طرف سے مرمت نہ کئے جانے کی وجہ سے متعدد و اٹر سپلائی سکیمیں خستہ حال

بانہال//ضلع رام بن کے مختلف علاقوں میں پینے کے پانی کی کمی کی وجہ سے لوگوں کو شدید مشکلات کاسامنا ہے جبکہ پینے کے پانی کے موجود وسائل کے باوجود پائپ لائینوں کی سالہاسال سے مرمت نہ کئے جانے کی وجہ سے پینے کا قیمتی پانی ضائع ہورہا ہے۔ اگرچہ ایک طرف سے جل جیون مشن اور گھر گھر جل پہنچانے کیلئے سرکاری سطح پر ایک بڑی مہم شروع کی گئی ہے تاہم اس سکیم کی عمل آوری کے ساتھ ساتھ زمینی سطح پر کام کرنے والے محکمہ جل شکتی کے ملازمین اور انجینئروں کو پہلے جوابدہ بنانا ضروری ہوگا۔ رام بن ضلع کے لوگوں کا کہنا ہے کہ ضلع میں بھی جل جیون شکتی کے تحت سرگرمیوں کی بازگشت ہے لیکن بانہال ، رامسو گول اور رام بن کے درجنوں علاقوں اور دیہات شہر و گام میں پہلے ہی سے قائم بیشتر واٹر سپلائی سکیموں کی حالت ٹھیک نہیں ہے اور ان پرانی سکیموں پر مرمت کے نام پر لاکھوں روپئے کی رقومات خرچنے کے کے باوجود کوئی سدھار نہیں آیا ہ

رام بن ضلع میں ٹیکہ کاری مہم کو تیز کر کے صدفیصد اہداف حاصل کئے جائیں | یشا مدگل نے ڈی سی پی ، فورلینگ پروجیکٹ اور کووِڈ تخفیفی اِقدامات کی پیش رفت کا جائزہ لیا

رام بن//سیکرٹری اِمداد باہمی محکمہ یشامدگل جو ضلع رام بن کی سیکرٹری اِنچارج بھی ہیں ، نے مختلف محکموں کی جانب سے ضلع کیپکس پلان ، نیشنل پروجیکٹوں ، کووِڈ تخفیفی اِقدامات اور مرکزی وزراء کے ضلع شیڈول دورے کے اِنتظامات کا ایک میٹنگ میں جائزہ لیا۔میٹنگ میں ضلع ترقیاتی کمشنر رام بن مسرت الاسلام ، اے ڈی سی ہربنس لال ، سی پی او ڈاکٹر کستوری لال ، سی ایم او ، سی ای او، سی ایچ او، سی اے او ، سی اے ایچ او، ڈی ایس ایچ او ، جل شکتی کے ایگزیکٹیو اِنجینئران ، جے پی ڈی سی ایل ، آر اِی ڈبلیو ، پی ڈبلیو ڈی اور پی ایم جی ایس وائی کے علاوہ دیگر مختلف ضلع اور سیکٹورل اَفسران نے شرکت کی۔سیکرٹری نے ضلعی اِنتظامیہ کی طرف سے مرکزی وزراء کے ضلع کے دوران سے متعلق اِنتظامات، مختلف ترقیاتی منصوبوں پر شعبہ وار پیش رفت اور مالی اِمداد اور دیگر مستحقین پر مبنی سکیموں پر عمل درآمد کا جائزہ لیا ۔سیکرٹری نے نیشنل ہا

کشتواڑضلع میں کرونا کے بڑھتے معاملات کا ذمہ دارکون ؟ | انتظامیہ عوام پر سخت تو سیاسی جماعتوں کے اجتماعات پر مہربان

کشتواڑ//اگرچہ ضلع کشتواڑ میں کورونا وائرس کے مثبت معاملات کی تعداد جموں کشمیر کے دیگر اضلاع سے بالکل کم ہے اور ریاسی کے بعد کشتواڑ دوسرے نمبر پر ہے لیکن گزشتہ چند مہینوں کے دوران ان کی تعداد میں مسلسل اضافہ انتظامیہ کیلئے بھی حیران کن ہے ۔کوروناوائرس کی پہلی و دوسری لہر میں کشتواڑ میں کل 4805معاملے درج کیے گئے جن میںسے 4751 اس وبائی بیماری سے صحتیاب ہوئے جبکہ محض دس مثبت معاملے اس وقت ضلع میں موجود ہیں جو سبھی گھروں میں زیرعلاج ہیں۔جہاں انتظامیہ نے مثبت معاملات کو بڑھنے سے روکنے کیلئے سخت انتظامات عمل میں لائے اور آئے روز خلافورزی کرنے والوںسے ہزاروں روپے جرمانہ وصولاجاتا ہے اور بڑے اجتماعات پر پابندی لگائی جاتی ہے وہیں دوسری طرف سیاسی جماعتوں کو بڑے اجتماعات کیلئے کھلی چھوٹ دی جاتی ہے اور نہ ہی ان پر کوئی جرمانہ عائد کیاجاتا ہے۔کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے سماجی کارکنان نے بتایا کہ ح

ریلوے کمپنیاں تمام ملبہ کرتی ہیں دریا برد،ڈیمپنگ بھی غیرقانونی | سنگلدان،داڑم گول میں گیمون کمپنی کاکارنامہ،زرعی اراضی پرڈیمپنگ سے پورے علاقے کو خبرہ لاحق

گول//کٹرہ بانہال ریلوے لائن پر کئی مقامات پرتعمیری کام شد و مد سے جاری ہے تاہم قومی تعمیری کمپنیاں بناء کسی ڈر و خوف کے یہاں پر من مرضی سے کام کرتی ہیں ۔ جہاں ندی نالوں سے غیر قانی طو رپر پتھر وغیرہ لئے جارہے ہیں وہیں ٹنل سے نکلنے والا ملبہ دریا برد کیاجارہا ہے جس وجہ سے علاقہ داڑم کو خطرہ لا حق ہے ۔ داڑم علاقے کے بیچوں بیچ ریلوے تعمیری کمپنیوں نے زرعی اراضی کے اوپر غیر قانونی طور پر ڈمپنگ کی ہے جس وجہ سے پورے علاقے کو خطر لا حق ہے ، 2010میں یہاں پر پورے علاقہ اسی ڈمپنگ کی وجہ سے کھسک گیا تھا جس وجہ چالیس گھروں ، ایک مسجد اور ایک سکول کو نقصان پہنچا اور یہاں سے پوری بستی کو دوسری جگہ منتقل کیا گیا لیکن جس وجہ سے یہ حادثہ پیش آیا تھا اس کو نہیں روکا گیا بلکہ آج بھی زرعی اراضی کے بیچ ٹنل سے نکلنے والے ملبے کو رکھا جا رہا ہے ۔ یہاں پر پہلے دھان کے کھیت ہواکرتے تھے اور کسی بھی زرعی اراضی

گول سب ڈویژن میں سوموگاڑیوں کی من مانیاں جاری | 7کلو میٹر پر50روپے کرایہ اور18کلومیٹر پر بھی 50، لوگ شدید پریشان

گول//گول سب ڈویژن میں مختلف سڑکوں پر دوڑ رہی ٹاٹا سومو گاڑیوں کی جانب سے من مانے کرایہ کی وجہ سے عام لوگ شدید پریشان ہیں ۔ جہاں ایک طرف سے 18کلو میٹر پر 50روپے کرایہ مقرر ہے وہیں دوسری جانب کئی جگہوں پر صرف 7کلو میٹر پر 50روپے لیا جا رہا ہے ۔ اگر چہ کئی مرتبہ انتظامیہ اور اے آر ٹی او رام بن کو بھی اس بارے میں مطلع کیا تھا لیکن انہوں نے ا س جانب کسی نے کوئی توجہ نہیں دی ۔ سرکاری کرایہ ایک کلو میٹر پر اڑھائی روپے بنتا ہے اس طرح سے سات کلو میٹر پر اٹھارہ روپے بنتا ہے اور بیس روپے بھی اگر لیتے کوئی بات نہیں تھی لیکن اس کے بر عکس50روپے لیا جا رہا ہے اور دو کلو میٹر پر بیس روپے لیا جا رہا ہے ۔ کشمیر عظمیٰ کے ساتھ بات کرتے ہوئے گگر سولہ علاقہ کے لوگوں نے کہا کہ گگر سولہ سے گول تک قریباً سات کلو میٹر ہے اور کرایہ50روپے لیا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ کرایہ کسی حکام نے لاگو نہیں کیا ہے بلکہ

رام بن ضلع کے قدرتی حسن سے مالا مال خوبصورت مقامات سرکاری عدم توجہی کا شکار

بانہال//صوبہ جموں میں محکمہ سیاحت کا شعبہ اب تک پتنی ٹاپ اور سناسر سے آگے اپنا دائرہ نہیں بڑھا سکا ہے اور اسی علاقے تک محدود رہنے کی وجہ سے وادی چناب کے درجنوں غیر دریافت شدہ خوبصورت اور صحت افزا مقامات عام لوگوں کیلئے گمنام ہیں ۔ وادی چناب کے مشہور سیاحتی مقامات کو سیاحت کے نقشے پر لانے اور کئی علاقوں کو ٹورسٹ سرکٹ کے طور متعارف کرانے کیلئے متعلقین کی طرف سے کئے گئے تمام دعوے اب تک سراب ثابت ہوئے ہیں اور وادی چناب کے درجنوں خوبصورت مقامات اور سیاحت کیلئے وسائیل تاحال محکمہ اور سرکاری عدم توجہی کا شکار ہیں ۔ ضلع رام بن کے مہو منگت ، ناون، رتن ، دبدلو، سرنجن ٹاپ، نس گلی ، اچھن ، موری ، تراجی بل ،مالنسر، لیل آڑ، سرکنٹھا ٹاپ ، ارم نکھ ، دمن تراگ ، زبن ، پیر پنجال ٹاپ ، نیل ٹاپ ، واسا مرگ ، ٹھنڈی چھاووں ، پوگل پرستان ، سرگلی ، ہنس راج ٹاپ ،  سروا دھار ،گول سنگلدان ، تتا پانی ، مہا کنڈ

جڑی بوٹیاں سمگل کرنے والے شخص کی گرفتاری کا دعویٰ

کشتواڑ//کشتواڑ پولیس نے کشتواڑ کے علاقے مغل میدان میں جنگلاتی  پیداوار ناگچتری سمیت ایک سمگلر کو گرفتار کیا جسکے قبضہ سے04 بوریاں جنگلی پیداوار ناگچتری برآمد کی گئیں۔کشتواڑ پولیس کو قابل اعتماد ذرائع سے موصول ہونے والی ایک مخصوص اطلاع پر پولیس سٹیشن چھاترو کی ایک ٹیم نے مغل میدن مارکیٹ میں اچانک ناکہ لگایا ، چیکنگ کے دوران ایک پیدل چلنے والے شخص نے پولیس پارٹی کو دیکھ کر بھاگنے کی کوشش کی لیکن پولیس پارٹی نے اسے چالاکی سے پکڑ لیا۔ ملزم سے پوچھ گچھ کرتے ہوئے اس نے جنگل کی پیداوار کی سمگلنگ کا اعتراف کیا۔پولیس پارٹی نے ملزم کو گرفتار کیا اور تقریبا 80 کلو وزنی ناگچتری کی 04 بوریاں برآمد کیں۔ گرفتار ہونے والے شخص کی شناخت محمد یوسف ولد عبدالرحمٰن ساکنہ دروبیل مغل میدان چھاترو کے طور پر ہوئی ہے۔پولیس نے اس سلسلے میں ایف آئی آر زیر نمبر 58/2021 زیردفعہ 379 آئی پی سی ، 6 فاریسٹ ایک

تازہ ترین