کتاب و سنت کے حوالے سے مسائل کا حل

سوال : آج کل بھیڑ کے گوشت کی قلعت ہے ۔کئی علاقوں میں دیگر ہلال جانوروں کا گوشت فروخت کیا جارہا ہے ۔ چند روز قبل ایک علاقہ میں اونٹ کا گوشت دستیاب تھا ،چنانچہ یہ گوشت لایا گیا اور پکاکر کھایا بھی گیا ،پھر اس بارے میں پتہ چلا کہ اونٹ کا گوشت کھانے سے وضو ٹوٹ جاتا ہے اور یہ بھی سُنا کہ یہ حدیث میں بھی ہے۔عرض ہے کہ کیا واقعتاً اس بارے میں کوئی حدیث ہے،اگر ہے تو وہ کیا ہے اور کہاں کس کتاب میں ہے؟ نیز اب اسکے بارے میں حکمِ شرعی کیا ہوسکتا ہے ۔اگر کسی باوضو نے اونٹ کا گوشت کھایا ہو تو کیا اس شخص کا وضو باقی ہے یا نیا وضو کرنا لازم ہے؟ لطیف احمد گوجر۔نروال جموں   اونٹ کا گوشت کھا کر وضو کرنا۔۔۔ معاملے کی توضیح جواب :اونٹ کا گوشت کھانے کے بعد وضو کرنے کے متعلق حدیث مسلم،ترمذی ،مسند احمد اورطبرانی میں ہے۔حدیث یہ ہے: حضرت براء ؓ روایت کرتے ہیں کہ حضرت رسول اللہ صلی اللہ علیہ

فکری اختلاف …متوازن رویہ۔۔۔۔۔ قسط 2

۱۔ تبلیغی جماعت  : بیسویںصدی کی تیسری دہائی میںہندوستان کے دیہاتوںمیںآریوںکی کوششوںسے ارتدادکی وبابڑے زوروںپرتھی۔اس آگ کوبجھانے کے لئے ہندوستان کے یمین ویسارسے مسلمان انجمنیںسرگرم عمل ہوئیں۔انہی حالات میںمولانامحمدالیاس نےؒخاموشی کے ساتھ اس وباسے مسلم اذہان کومحفوظ رکھنے کے لئے مبنی برخلوص جدوجہدشروع کی۔مولاناالیاس مرحوم نے اپنامرکز’میوات‘کوبنایااورایک دہائی کے اندراندروہاںکی کایاہی پلٹ دی۔’میو‘قوم دہلی کے گردونواح اورقرب وجوارمیںآبادتھے۔میوات کے مسلمانوںکی مذہبی حالت کے بارے میںانیسویںصدی کے ایک انگریزآفیسرومؤرخ میجر پائولٹ لکھتے ہیں:  ’’میوات تمام ترمسلمان ہیںلیکن برائے نام۔ان کے گائوںکے دیوتاوہی ہیںجوہندوزمینداروںکے ہیں۔وہ ہندوئوںکے کئی ایک تہوارمناتے ہیں۔ہولی میواتیوں میںمذاق اورکھیل کھیلنے کازمانہ ہے اوراتناہی اہم اورضروری

تازہ ترین