تازہ ترین

برطانیہ میں مذہبی منافرت قانون پر نظر ثانی

ایسی اطلاعات ہیں کہ برطانیہ نے مذہبی منافرت قانون پر نظر ثانی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔اسی قانون کے تحت برطانیہ نے ہندوستانی مبلغ ڈاکٹرذاکر نائک کو 2010میں ملک میں داخل ہونے پر پابندی لگادی تھی۔ اطلاعات کے مطابق برطانیہ کے انسداد دہشت گردی کمیشن کے سابق سربراہ کی قیادت میں ایک کمیٹی موجودہ قانون پر نظر ثانی اور ایک نئے قانون کی سفارش کرے گی تاکہ سماجی اجتماعات کے ذریعہ یا سوشل میڈیا پلیٹ فارموں کا استعمال کرکے منافرت پھیلانے کی رجحان کو روکا جاسکے۔ پیس ٹی وی کے خلاف کارروائی ڈاکٹر ذاکر نائک کو اشتعال انگیز تقریریں کرنے کی وجہ سے برطانیہ کی سابق وزیر اعظم تھیریسا مئے ، جو اس وقت وزیر داخلہ تھیں، نے برطانیہ میں داخل ہونے پر پابندی عائد کردی تھی۔انسداد انتہاپسندی کمیشن (سی سی ای) نے گزشتہ جون میں کہا تھا کہ ڈاکٹر نائک کا چینل اسلامی انتہاپسندی کی مثال ہے اور اس کے رویے نے منافرت کے خل

کمیونٹی کلاسزبہترین متبادل

ہمارا نظامِ تعلیم ابھی تک بھی معروضی طور طریقوں پر استوار ہے۔ ہم نئی نئی ایجادات و منکشفات کا خاطر خواہ استعمال نہیں کر رہے ہیں۔ ٹیکنالوجی کے آنے سے جہاں ہر کسی شعبے میںانقلاب برپا ہوگیا ہے وہیں اس کا بہترین مصرف نظام تعلیم پر بھی ہو سکتا ہے۔ تعلیمی نفسیات (Educational Psychology)کے ضمن میں جہاں ماہرین نہایت ہی کارگر مشوروں سے نوازتے رہتے ہیں وہیں اُس کے بالمقابل ہم پرانے راگ الاپنے میں ہی مست ہیں۔ اسی صورتحال میں جب کورونا وائرس نے نظام زندگی کے ہر ایک شعبے پر یلغار کی تو اِس کا خاصا اثر نظامِ تعلیم پر بھی پڑا۔ ماہرین کے ساتھ ساتھ عام لوگ بھی اس صورتحال کو لے کر متبادل ڈھونڈنے پر مجبور ہو گئے۔ متبادلات کو ڈھونڈتے ڈھونڈتے ہم اس ایک ماحول میں پہنچے جہاں ہمارے تمام پرانے طریقہ کاروں پر کاری ضرب پڑ گئی۔ مثال کے طور پر بچوں کا موبائل فون استعمال کرنااسے پہلے منع تھا، لیکن آج جس کے پاس مو

عربی زبان پرکورونا کے اثرات

  کرونا(کورونا) کے وبائی مرض نے ساری دنیا کو اپنی چپیٹ میں لے لیا ہے۔ ہر شعبۂ حیات پراس نے اپنا اثر مرتب کیا ہے۔حکومت ہویاعوام، امیرہو یا غریب، مردہو یا عورت، جوان ہو یا بوڑھا، حاکم یا عوام سبھی اس سے متاثر ہوے ہیں۔اس نے ہمیں اپنے اپنے گھروں میں قید کردیا ہے۔ایک دوسرے سے دور کردیا ہے۔ہمارے اخلاق وعادات رہن سہن کو بدل کر رکھ دیا ہے۔ ہمارے سونے جاگنے، اٹھنے بیٹھنے کے اوقات کو بدل دیا ہے۔ سیاسیات وسماجیات، صنعت وحرفت اورہماری اقتصادیات پر ایسا اثر ڈالا ہے کہ برسوں اس سے نکلنا مشکل ہوگا۔ہمارے جذبات واحساسات ، ہماری زبان، تہذیب اور کلچر پر بھی اس کے اثرات کافی طویل عرصے تک محسوس کیے جاتے رہیں گے۔ ہمارے شعراء ، ادباء ، کہانی کاروں نے جتنا اس وبائی مرض کو اپنے افکاروخیالات اورجذبات واحساسات کے پیکر میں ڈھالا ہے ماضی قریب میں اس کی مثال کم کم ملتی ہے۔ بے شمار شعر، غزلیں اور قصیدے کہے

ڈاکٹر فرید پربتیؔ

کچھ شعرا ء ایسے ہوتے ہیں جو جلد اپنے تمام تر امکانات ظاہر کردیتے ہیں اور پھر خاموش ہوجاتے ہیں۔کچھ ایسے ہوتے ہیں جو عمر بھر ایک ہی رنگ میں شاعری کرتے رہتے ہیں۔ایسے چند شعرا ء ہی ہوتے ہیں جوآخر تک اپنی بازیا فت و بازدید میں سر گرداں رہتے ہیں۔فریدپربتیؔ کا تعلق جموں و کشمیر کے شعراء کی اسی صف سے ہے ،جن کا تخلیقی سفر عمر بھر جاری رہا۔ شہر خاص کے ادبی ستاروں میں ایک نام ڈاکٹر فرید پربتی ؔکا بھی ہے ۔آپ کا اصلی نام غلام نبی بٹ ہے۔ آپ ۴ اگست۱۹۶۱ء شہر خاص کے سنگین دروازہ حول سرینگر میں تولد ہوئے۔فرید پربتیؔ نے اردوشاعری کا باقاعدہ آغاز1980 میں کیا۔اب تک اردو میں ان کے اٹھ شعری مجموعے منظر عام پر آچکے ہیں۔جن میں’’ابر تر1987 ‘‘، ’’آب نیساں1992 ‘‘ ،’’اثبات1997 ‘‘ ، ’’فریدنامہ2003 ‘‘ ، ’&rsqu

اکیسویں صدی میں جموں وکشمیر میں اردو ادب

جموں وکشمیرمیں اُردوزبان وادب کی تاریخ دوسوسال سے کم ہے لیکن اس کے باوجود اس زبان میں یہاں ایسے نامورشعراوادباپیداہوئے جنھوں نے اُردوشعروادب میں ایک منفرد مقام حاصل کیاجن کی نگارشات کی وجہ سے یہاں اُردوشعروادب کاایک وافرذخیرہ موجود ہے۔اس ذخیرہ میں سے اگرچہ کہ بعض حصہ مختلف حادثات ،واقعات کے سبب تلف ہوچکاہے لیکن اس کے باوجوددبستان جموں وکشمیرمیں اُردوزبان وادب نے ترقی کی مختلف سیڑھیوں کوطے کیاہے ۔ابتدامیں یہاں شعروادب میں فنی تاریخ رقم کرنے والوں میں محمددین فوق ،نرسنگھ داس نرگس ،قدرت اللہ شہاب ،پریم ناتھ در ،پریم ناتھ پردیسی ،محمودہاشمی ،محمد عمرنورالٰہی ،صاحبزادہ محمدعمر،عزیزکاش ،موہن یاور ،جگدیش کنول ،سوم ناتھ زتشی،گلزاراحمدفدا ،غلام حیدرچشتی اوررامانند ساگرسے لے کرنورشاہ، پشکرناتھ ،علی محمد لون ،ویدراہی ،برج کتیال اور غلام رسول سنتوش وغیرہ تک افسانہ نگاراورادیب شامل ہیں وہیں شاعری م

ہمارا اجتماعی رویہ؟

قومیں اپنے اجتماعی رویے سے پہچانی جاتی ہیں۔ کسی قوم کے اجتماعی رویے میں تہذیب اور بلند اخلاقیات اْس وقت منعکس ہوتی ہیں جب شرحِ خواندگی بلندیوں کو چھو رہی ہو اور اساتذہ کی اخلاقیات بھی اعلی درجے کی ہوں۔ بدقسمتی سے تاحال ہمارے یہاں یہ دونوں ہی روبہ زوال ہیں جس کی وجہ سے ہمارے اجتماعی رویے شرمناک حد تک خراب ہیں۔آج کے اسِ کرونائی عہد میں بھی جب جب لاک ڈاون اٹھایا جاتا ہے تو کیا ہم مصروف بازاروں میں بھیڑ بھار کرنے سے پرہیز کرتے ہیں؟ لائن بنا کر مسافر بس میں سوار ہوتے ہیں؟جہاں کہیں بھی پبلک بیت الخلا (ٹوائلٹس )ہیں،کیا ان کی صفائی اطمینان بخش رکھنے کی کوشش کرتے ہیں؟کرونا کی وبائی بیماری سے بچنے کے لئے احتیاتی تدابیر پر عمل کرتے ہیں؟ اس وقت بھی گھروں میں کھانا ضائع نہیں کرتیہیں؟ استاد اورامام کو حقارت کی نگاہ سے نہیں دیکھتے ہیں؟ چلتی گاڑی سے سڑک پر کوڑا نہیں پھینکتے ہیں؟ بجلی کی چوری نہیں کرت

تازہ ترین