تازہ ترین

جَل شکتی یا جَل سختی !

وزیراعظم نریندر مودی نے ایک بہترین نعرہ دیا تھا’جل بنا جیون نہیں‘۔ اس کے بعد انہوں نے سبھی خطوں اور ریاستوں میں محکمہ واٹرورکس کا نام بدل کر جل شکتی رکھ دیا۔ مدھیہ پردیش، راجستھان، کرناٹک، بنگال اور دوسری ریاستوں کے اْن علاقوں میں بھی اب پینے کا پانی مہیا کیا گیا ہے جہاں لوگ ایک ایک بوند کے لئے ترس رہے تھے۔  لیکن کشمیر میں مرکز کے خوشگوار اعلانات کا بھی اْلٹا نتیجہ برآمد کیوں ہوتا ہے؟ جونہی کشمیر کا پی ایچ ای محکمہ جل شکتی کہلانے لگا ، پینے کے پانی کے لئے ہاہاکار نہ صرف چند علاقوں بلکہ وادی کے چپے چپے  پر گونج اْٹھی۔ مقامی اخبارات کی سرخیاں اور اداریے اس بات کا ثبوت ہیں کہ وادی میں محکمہ جل شکتی اب جل سختی بن گیا ہے۔ کشمیر میں محکمہ کے 24 انجینئرنگ ڈویژن ہیں، جسکا مطلب ہے کم از کم 100ماہر انجینئراور سینکڑوں معاون اہلکار۔  اس کے باوجود کھنہ بل سے کھاد

کشمیر یونیورسٹی اور انتظامی سُقم

 یہ لمحہ نہایت ہی اہم اور حوصلہ افزا ہے کہ کشمیر یونیورسٹی کو حال ہی میں قومی ادارہ جاتی درجہ بندی فریم ورک 2020 کے ذریعہ ہندوستان کی پہلی 50 یونی ورسٹیوں کی فہرست میں شامل کیا ہے، جو کہ ایک خوش آئند بات ہے۔ اگر چہ اس مشہور جامعہ نے تعلیمی ترقی کے لیے کافی کوششیں کی، لیکن ستم ظریفی یہ ہے کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے ڈگریوں کو اپنے مقررہ وقت پہ پورا کرنے میں عدم دلچسپی کا اظہار کیاجس کی وجہ سے ڈگریوں کے لیے طے شدہ مقررہ وقت گزرجانے کے بعد بھی ابھی تک طلبہ کی تعلیم پائے تکمیل تک نہیں پہنچ پائی جو یونیورسٹی کی کارکردگی پر مسلسل سوالیہ نشان بنا ہوا ہے۔ ابتدائی مراحل میں اگر چہ طلباء مختلف تعلیمی شعبوں میں داخلہ لینے کے بعد خوشی محسوس کرتے ہیںلیکن بعد میںیونیورسٹی انتظامیہ کی طرف سے تعلیمی انتظامات کے سلسلے میں غفلت شعاری اور ناقص رویہ کی وجہ سے جامعہ میں داخلہ لینے کے اس فیصلے پر سخت افس

چین میں مسلم کُشی

ویغور مسلمانوں پر جو ظلم وستم ڈھایا جا رہا ہے عام طور پر بین الاقوامی ذرائع ابلاغ اس کو بیان نہیں کرتے بلکہ اور تو اور حقوق انسانی کے نام پر نعرہ لگانے والے تمام ادارے خاموش ہو جاتے ہیں جو چیزیں ہم تک پہنچتی ہیں یا تو وہ بے بنیاد ہوتی ہیں یا دروغ گوئی پر مشتمل ہوتی ہیں۔ ایسی صورتحال میں حقائق تک رسائی بڑی مشکل ہو جاتی ہے۔ چینی حکومت اپنی مسلم آبادی کو کم کرنے کے لیے نسلی اقلیت ایغور باشندوں کو شرح پیدائش کم کرنے پر مجبور کر رہی ہے۔ چینی حکومت ایغور مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے ہاں بچوں کی پیدائش کی شرح پر کنٹرول کے لیے بہت سخت اقدامات کر رہی ہے۔ دوسری طرف ہان نسل کی اکثریتی آبادی کو زیادہ بچے پیدا کرنے کی ترغیب دی جا رہی ہے۔ متعدد خواتین انفرادی طور پر جبری فیملی پلاننگ کے بارے میں اپنے خیالات اور تجربات کا اظہار کرتی آئی ہیں تاہم خبر رساں ادارے ایسو سی ایٹڈ پریس نے اس بارے