تازہ ترین

مشرق و مغرب میں سائنسی تحقیق کا معیار

سائنس میزانِ عقل میں اپنے معنوی ثقل کی وجہ سے خرد کے جملہ جزئیات کو متاثر کرتی ہے لیکن اپنے وجود کی تعبیر کے لئے عقل کی ہمیشہ محتاج  ہے۔سائنس نے انسانی دماغ کے مادی خلیوں کے باریک سے باریک گوشوں تک کا مشاہدہ اور معائنہ کیا لیکن عقل کے وجود پر اپنا حکم چلانے سے قاصر رہتے ہوئے اس کی وضاحت کرنے میں یکسر ناکام ہے۔سائنس عقل کی انتھک کوششوں کا نتیجہ ہے ۔اگر سائنس کو عقل کی لونڈی کہا جائے تو بیجا نہیں ہوگا کیونکہ سائنس عقل کی مصروفیت ومشغولیت ،محنت و مشقت اور غور وفکر کی محتاج ہے۔اگر عقل کا وجود نہیں ہوتا  تو سائنس نام کی کوئی چیز وجود میں نہیں آتی۔دنیا کا کوئی سائنسی آلہ عقل کو ڈیفائین(Define) نہیں کر سکتا بجز اس کے کہ عقل کے شاہکار کے طور پر اپنا کرتب پیش کر پاتا ہے۔عقل ہی عقل کو کسی حد تک سمجھ سکتی ہے اور اس کے صغریٰ ، کبریٰ پرتبدیلی کیاثرات مرتب کر پاتی ہے۔جیسے اس دنیا  م

حضرت مولانا سید ولی رحمانی

 ۳ /اپریل ۲۰۲۱ ء کی صبح سویرے حضرت مولانا سید ولی رحمانی کی طبیعت زیادہ ناساز ہونے کی اطلاع ملی،اللہ تعالی سے جلد شفایابی کی دعاء  زبان پر جاری ہی تھی کہ کچھ گھنٹوں بعد اس اندوہناک خبر کی اطلاع  سوشل میڈیا پر گردش کرنے لگی ،جس کا خطرہ دل ودماغ کو صبح سے بے چین کر رکھا تھا،انتقال پر ملال کی یہ خبر ایک بجلی کی طرح ہم جیسے لاکھوں محبین ومعتقدین کے دلوں پر گری،انا للہ وانا الیہ راجعون، اللہم اغفرلہ وارحمہ۔ حضرت مولانا سید ولی رحمانی کا انتقال ایک عہد کا خاتمہ ہے،یہ کوئی الفاظ کی جادوگری نہیں بلکہ ایک حقیقت ہے کہ اللہ رب العزت نے ایک ساتھ جتنی خوبیوں سے آپ کو نوازا تھا، ان سب کا ایک شخصیت میں جمع ہونے کی مثال بہت نادر ہے،علم، تقوی، صلاح، تقریر کی جادوگری، تحریر کی چاشنی،عصر حاضر کی ذمہ داریوں سے آگہی، علم قانون شریعت میں پوری گہرائی وگیرائی،قانون ہند پر گہری نظر، جرأت

ماہِ رمضان تقویٰ کے حصول کا بہترین ذریعہ

رمضان المبارک کا مہینہ اللہ تبارک وتعالیٰ کی بڑی عظیم نعمت ہے۔اس مہینے میں اللہ تعالیٰ کی طرف سے انوار وبرکات کا سیلاب آتا ہے اور اس کی رحمتیں موسلادھار بارش کی طرح برستی ہیں، مگر ہم لوگ اس مبارک مہینے کی قدرومنزلت سے واقف نہیں، کیونکہ ہماری ساری فکر اور جدوجہد مادّیت اور دنیاوی کاروبار کے لئے ہے۔ اس مبارک مہینے کی قدردانی وہ لوگ کرتے ہیں جن کی فکر آخرت کے لیے اور جن کا محور مابعد الموت ہو۔ آپ حضرات نے یہ حدیث شریف سنی ہوگی۔حضرت انس رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ جب رجب کا مہینہ آتا تو حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم یہ دعا مانگا کرتے تھے: اَللّٰہْمَّ بَارِک لَنَا فِی رَجَبَ وَشَعبَانَ وبَلِّغنَا رَمَضَانَ، (شعب الایمان۳/375، تخصیص شہر رجب بالذکر) ترجمہ: اے اللہ ہمارے لیے رجب اور شعبان کے مہینے میں برکت عطا فرما اور ہمیں رمضان کے مہینے تک پہنچادیجیے، یعنی ہماری عمر اتنی دراز کردیج

چراغ حسن حسرتؔ کا تخلیقی وجدان

وادی پونچھ کو یہ فخر حاصل ہے کہ اس کی گود میں چراغ حسن حسرتؔ کا بچپن اور جوانی دیوانی کے دن گزرے۔یہی اُن کی تعلیم وتربیت ہوئی اور آگے چل کر مولانا نے ستاروں پر کمندیں ڈالنا سیکھا۔مولانا حسرتؔ بڑے مزے کے آدمی تھے۔اصل میں اللہ تعالیٰ حقیقی و تخلیقی بصیرت کی توفیق ہر کسی کو نہیں دیتا ۔ اس کے لئے جگر کا خون اور آنکھوں کا نور صرف کرنا پڑتا ہے۔سینے کی آرزوئیں قُربان کرنی پڑتی ہیں۔موجودہ دور میں فلسفہ معنی ہو کہ فلسفہ حقیقت یا پھرفلسفہ حسن تبدیل ہوتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔حقیقت ہر گز وہ نہیں ہے کہ جو سامنے نظر آ رہی ہے۔’’ہیں کواکب کچھ نظر آتے ہیں کچھ،،بحرحال پھر بھی ہم تخلیقی بصیرت کے لئے دل کی گہرائیوں سے دُعا کرتے ہیں۔جھوٹ کے سمندر میں بھی سچ کی ایک چمک ہوتی ہے۔ اپناحسن ہوتا ہے۔ ایک شان ہو تی ہے۔ایسے ہی ایک سچے کھرے اور باغ و بہار شخصیت کے مالک چراغ حسن حسرتؔ ہوئے ہیں ۔ لوگ پ

بارہویں کے بعد بنا سکتے ہیں ان شعبوں میں کیرئیر

کئی طلباء جو آئندہ کے لیے ابھی تک تذبذب کا شکار ہیں یا جو گریجویشن کرنا چاہتے ہیں لیکن شاید صرف بنیادی بی اے، بی ایس سی اور بی کام سے واقف ہیں ان کے کئی ایسے کورسز دستیاب ہیں جو وہ اپنی دلچسپی کی بناء اختیار کرسکتے ہیں اور ایک کامیاب کرئیر بناسکتے ہیں۔ بارہویں کامیاب ہونے والے زیادہ تر طلباء اپنی ہی فیکلٹی میں گریجویشن کے تعلق سے معلومات رکھتے ہیں لیکن کئی ایسے کورسیس ہیں جن کے لیے کسی مخصوص فیکلٹی سے گریجویشن کرنا لازمی نہیں ہے بلکہ یہ کہا جاسکتا ہے کہ آپ کسی بھی فیکلٹی سے بارہویں کامیاب ہوں یہ کورسز کرسکتے ہیں۔  ۱۔  بیچلر آف آرٹس /بیچلر آف کامرس/ بیچلر آف سائنس عموماً بارہویں کے بعد جوطلبہ گریجویشن کرنا چاہتے ہیں وہ اپنی ہی فیکلٹی میں گریجویشن میں داخلہ لیتے ہیں لیکن دھیان رہے کہ سائنس سے کامیاب طلبہ بارہویں کے بعد سائنس کے علاوہ کامرس اور آرٹس دونوں شعبوں می

تازہ ترین