تازہ ترین

پچھلے سال عید لاالضحیٰ پر بندشیں، امسال کورونا لاک ڈائون

سرینگر// لاک ڈائون کے نتیجے میں کشمیر میں بیکری کا کاروباری بھی بند ہے اور پچھلے دو ماہ کے دوران اس کاروبار کو کروڑوںکا نقصان ہوچکا ہے اور اس سے جڑے قریب 7000لوگ بیکار ہوگئے ہیں ۔وادی سے تعلق رکھنے والے بیکری مالکان عید الفطر پر مسلسل دوسری مرتبہ مایوس نظر آرہے ہیں،کیونکہ پہلے انہیں گزشتہ سال عیدلا الضحیٰ کے موقعہ پر 5اگست کے اقدام کے بعد لگاتار 5ماہ تک بند رہنا پڑا اور اب لاک ڈائون کی وجہ سے ایک بار پھر انہیں نقصان سے دوچار ہونا پڑرہا ہے۔کشمیر بیکرس اینڈ کنفیکشنریزایسو سی ایشن کے ایڈیشنل جنرل سیکریٹری شاہد حسین کا کہنا ہے کہ بیکری کارخانوں اور دکانوں کو  لگاتارنقصانات برداشت کرنا پڑ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وادی میں مجموعی طور پر415بیکرس اور کنفیکشنزیز تسلیم شدہ ہیں اور150سے200کے قریب غیر تسلیم شدہ ہیں۔ شاہد حسین نے کہا کہ ایک بیکری کارخانے میں10افراد کام کر تے ہیں اور مجموعی طور

اقتصادی پیکیج میں بڑی آبادی نظر انداز ہوئی: چدمبرم

نئی دہلی// کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم نے کہا ہے کہ اقتصادی سرگرمیوں کو پٹری پر لانے کیلئے حکومت نے 20 لاکھ کروڑ روپے کے جس اقتصادی پیکیج کا اعلان کیا ہے اس میں کروڑوں لوگوں نظر انداز ہوئے ہیں ،لہذا اس پیکیج پر پھر نظر ثانی کرنی چاہئے ۔ چدمبرم نے پیر کو یہاں پریس کانفرنس میں کہا کہ وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے مسلسل پانچ دن تک اس پیکیج کے بارے میں ملک کو سمجھانے کی کوشش کی لیکن اس میں کہیں بھی عام آدمی کو راحت دینے کی بات نہیں کی گئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس پیکیج میں 13 کروڑ نچلے طبقے کے غریبوں، سات کروڑ درمیانے طبقے کے کاروباریوں اور چھ کروڑ بہت چھوٹی، چھوٹی اور درمیانی درجے کی صنعتوں کے ساتھ ساتھ کسانوں، دہاڑی مزدوروں، زرعی مزدوروں اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے ملازمت کھونے والے لوگوں کیلئے کچھ نہیں ہے ۔سابق وزیر خزانہ نے کہا کہ اقتصادی پیکیج میں عام آدمی کو فائدہ دی

تازہ ترین