تازہ ترین

ملک میں کورونا کا قہر جاری، 44376نئے کیس،481ہلاکتیں

نئی دہلی// ملک میں پھر 44 ہزار سے زیادہ کورونا کے نئے کیس سامنے آنے سے فعال کیسوں میں اضافہ ہوا ہے حالانکہ بازیابی کی شرح جزوی کمی کے ساتھ 93.72 فیصد ہے۔ مرکزی وزارت صحت و خاندانی بہبود کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران44376 نئے کیس سامنے آئے ہیں اور متاثرہ افراد کی تعداد 92.22 لاکھ ہوگئی ہے۔ نئے کیسز کے ساتھ فعال معاملات میں 6079 اضافہ ہو۔ اس مدت کے دوران37816مریض صحت مند ہوئے۔ کورونا کو شکست دینے والوں کی تعداد بڑھ کر 8.64 لاکھ ہوگئی ہے۔ اسی عرصے میں مزید 481 مریضوں کی ہلاکت کے ساتھ اموات کی تعداد بڑھ کر134699 ہوگئی ہے۔ ملک میں فعال کیسز کی شرح 4.82 فیصد تک جا پہنچی ہے جبکہ اموات کی شرح ابھی 1.46 فیصد ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا نے دہلی میں ایک بھیانک شکل دکھائی اور سب سے زیادہ 6224 نئے کیس سامنے آئے۔ مہاراشٹر اور کیرالہ بالترتیب 5439 اور 5420 نئے کیسوں کے ساتھ دوسرے

کانگریس کے 71 سالہ لیڈر احمد پٹیل کا انتقال

نئی دہلی// کانگریس کے سینئر رہنما احمد پٹیل کا بدھ کی صبح ساڑھے تین بجے انتقال ہوگیا۔ انہیں گروگرام کے میدانتا اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا جہاں انہوں نے اپنی آخری سانس لی۔ علاج کے دوران ان کے کئی اعضا نے کام کرنا بند کردیا تھا۔ ان کے بیٹے فیصل پٹیل نے ٹویٹر پر اپنے والد کے انتقال کی اطلاع دی۔ فیصل نے لکھا”ایک ساتھ کئی اعضا نے کام کرنا بند کردیا تھا جس کی وجہ سے ان کا انتقال ہوگیا۔ اپنے سبھی خیر خواہوں سے اپیل کرتا ہوں کہ اس وقت کورونا وائرس کے اصولوں پر سختی سے عمل کریں اور سماجی دوری کے سلسلے میں پرعزم رہیں اور کسی بھی اجتماعی انعقاد میں جانے سے بچیں۔“  پٹیل کی عمر71سال تھی اور وہ ایک مہینے پہلے کورونا وائرس سے متاثر ہوئے تھے۔انہیں 15 نومبر کو میدانتا اسپتال کے آئی سی یو میں داخل کرایا گیا تھا۔ سونیا گاندھی کے سیاسی مشیر رہے پٹیل کی پیدائش 21 اگست 19

ہر شخص کو ویکسین فراہم کرنا حکومت کی ترجیح: مودی

نئی دہلی// وزیر اعظم نریندر مودی نے آج کہا کہ حکومت کووڈ ویکسین تیار کرنے کے عمل پر کڑی نگرانی کر رہی ہے اورتمام شہریوں کو اسے آسانی سے میسر کرانا ان کی ترجیح ہے-انہوں نے کہا کہ جس طرح کووڈ کے خلاف مہم میں ہر شخص کی زندگی کو بچانا حکومت کی ترجیح رہی ہے اب بھی اس کا زور ویکسین فراہم کرکے ہر شخص کی جان بچانے پر ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ویکسین کے منفی اثرات کے بارے میں افواہیں پھیلائی جاسکتی ہیں لہذا سرکاری مشینری اور باقی سب کو مل کر لوگوں کو حقیقی صورتحال سے آگاہ کرنا ہوگا۔مختلف ریاستوں میں کووڈ انفیکشن میں اضافہ کے پیش نظر، مسٹر مودی نے آج ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ آٹھ متاثرہ ریاستوں اور مرکزی علاقوں کے وزرائے اعلی سے ایک میٹنگ کی۔ اجلاس میں کووڈ انفیکشن کی صورتحال ، اس سے نمٹنے کے لئے تیاری اور انتظامیہ سے خصوصی تبادلہ خیال کیا گیا۔ نیز لوگوں کو ویکسین کی فراہمی ، تقسیم اور فراہمی جیسے

کوروناکے نئے کیسز میں تیزی تھم گئی ، فعال معاملات میں بھی کمی واقع

نئی دہلی//ملک میں کورونا کیسوں میں تیزی پچھلے کچھ دنوں سے کم ہوگئی ہے اور اس بیماری میں مبتلا افراد کی تعداد میں اضافے نے فعال کیسوں کو کم کیا ہے اور اس کی شرح کم ہوکر پانچ فیصد کے قریب رہ گئی ہے۔پچھلے پانچ دن سے ، کورونا انفیکشن کے 45 ہزار کیس آ رہے تھے ، لیکن منگل کو نئے معاملات میں کمی واقع ہوئی اور یہ تعداد 38 ہزار سے کم رہی۔مرکزی وزارت صحت و خاندانی بہبود کے مطابق ، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 37،975 نئے کیس سامنے آئے ہیں اور متاثرہ افراد کی تعداد 91.77 لاکھ ہوگئی ہے۔ اس مدت کے دوران ، 42،314 مریض صحت مند ہوگئے ، جس کے نتیجے میں فعال معاملات میں 4819 کی کمی واقع ہوئی ہے اور اس کی تعداد بڑھ کر 4.38 لاکھ ہوگئی ہے۔ اسی عرصے میں ، 480 مزید مریضوں کی ہلاکت کے ساتھ مرنے والوں کی تعداد 1،34،218 ہوگئی ہے۔ملک میں زیر علاج مریضوں کی شرح کم ہوکر 4.78 ہوگئی ہے اور بازیابی کی شرح 93.76 فیصد ہے

کیجریوال کی مرکز سے 1000 اضافی آئی سی یو بستر محفوظ رکھنے کی اپیل

نئی دہلی// دہلی میں کورونا وائرس کا قہر بڑھنے کے درمیان وزیر اعلی اروند کیجریوال نے منگل کے روز مرکزی حکومت سے سرکاری اسپتالوں میں 1000 اضافی آئی سی یو بیڈ محفوظ رکھنے کی اپیل کی ہے۔وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ ملاقات میں مسٹر کجریوال نے دہلی میں کورونا وائرس کے بڑھنے کے خدشے کے پیش نظر یہ اپیل کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دارالحکومت میں کورونا وائرس کے معاملے بڑھنے کے پیچھے آلودگی بھی ایک بڑی وجہ ہے۔وزیراعلیٰ کے دفترکے مطابق وزیر اعلی نے پڑوسی ریاستوں میں پرالی جلانے سے ہونے والی آلودگی سے نجات کے لئے وزیر اعظم سے مداخلت کرنے کی اپیل کی۔وزیر اعلی نے کہا کہ دہلی میں کورونا وائرس کی تیسری لہر کے اثرات رہنے تک مرکزی سرکاری اسپتالوں میں اضافی ایک ہزار آئی سی یو بستردہلی کے لیے محفوظ رکھنے کی درخواست کی ہے۔مسٹر مودی عالمی وبا کورونا وائرس سے فی الحال سب سے زیادہ متاثرہ ریاستوں کیرالہ، مغربی

بنگال میں صورت حال قابو میں :ممتا بنرجی

کلکتہ//کلکتہ میں کورونا وائرس کے معاملات کی تعداد ایک لاکھ سے تجاوز کر گئی ہیاورمغربی بنگال میں کورونا وائرس کے 4.6لاکھ کیس آچکے ہیں تاہم آج وزیر اعظم نریندرمودی کے ساتھ ورچوئیل میٹنگ میں ممتا بنرجی نے کہا ہے کہ بنگال میں کورونا وائرس کی صورت حال قابو میں ہے۔وزیرا عظم مودی نے آج آٹھ ریاستوں کے وزرائے اعلی کے ساتھ کورونا کی صورتحال کا جائزہ ورچوئل میٹنگ میں کیا۔ اس میٹنگ میں مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ ، وزیر صحت ہرش وردھن ، نیتی آیوگ (صحت) کے ممبر اور سینٹر کی کوڈ ٹاسک فورس کے چیف وی کے پال موجود تھے۔ مغربی بنگال ، مہاراشٹر ، دہلی ، گجرات ، ہریانہ ، راجستھان ، چھتیس گڑھ اور کیرالہ کے وزرائے اعلی کے ساتھ میٹنگ میں کورونا کی دوسری لہر کو روکنے اور ویکسین کی تقسیم پر بات چیت کی گئی۔ مرکز کے مطابق ان آٹھ ریاستوں میں صورتحال زیادہ خراب ہے۔ریاستی سیکریٹریٹ کے ایک اعلی عہدیدار نے بتایا کہ

۔26نومبر کو کامگاروں کی ملک گیر ہڑتال

نئی دہلی//مرکزی تجارتی انجمنوں نے منگلوار کواُمیدظاہر کی کہ26نومبرکی ملک گیرعام ہڑتال،جس کیلئے تیاریاں زورشور سے جاری ہیں، میں 25کروڑ مزدور شرکت کریں گے۔دس مرکزی ٹریڈ انجمنوں ،انڈین نیشنل ٹریڈیونین کانگریس، ہند مزدور سبھا، سینٹرآف انڈین ٹریڈ یونینز،آل انڈیاٹریڈ یونین سینٹر، ٹریڈیونین کارڈنیشن سینٹر،سیلف ایمپلائیڈوومنزایسوسی ایشن،آل انڈیا سینٹرل کونسل آف ٹریڈ یونینز،لیبر پروگریسیوفیڈریشن اوریونائیٹڈٹریڈیونین کانگریس نے ایک مشترکہ بیان جاری کیا ہے۔مشترکہ پلیٹ فارم میں آزاد فیڈریشنزاورانجمنیں بھی ہیں۔مشترکہ فورم نے بیان میں کہا ،’’26نومبر کی کل ہند ہڑتال کیلئے تیاریاں زوروشور سے جاری ہیں۔ہمیں اُمید ہے کہ اس بار اس ہڑتال میں25کروڑ مزدور حصہ لیں گے۔اس دوران بھارتیہ جنتاپارٹی طرفدار بھارتیہ مزدورسنگھ نے اس بات کو واضح کیاہے کہ وہ اس ہڑتال میں شامل نہیں ہوں گے۔ایک بیان میں من