دہلی میں کورونا وائرس متاثرین کی تعداد 15 ہزار کے پار

نئی دہلی// دارالحکومت میں عالمی وبا کورونا وائرس کا قہرتیزی سے بڑھتا جا رہا ہے اور گزشتہ 24 گھنٹوں میں 792 نئے معاملے سامنے آئے اور 15 مریضوں کی اس سے موت ہوئی ہے۔ دہلی کے محکمہ صحت کی جانب سے بدھ کو جاری اعداد و شمار کے مطابق 792 نئے معاملات سے کل تعداد 15 ہزار 257 تک پہنچ گئی ہے۔ اس دوران 15 مریضوں کی موت سے اس انفیکشن سے ہلاکتوں کی تعداد 303 ہو گئی۔ دہلی صحت ڈائریکٹوریٹ جنرل کے اعداد و شمار کے مطابق فی الحال وائرس کے فعال معاملے 7690 ہیں۔ اس دوران 310 مریض ٹھیک ہوئے ہیں اور اب تک 7264 مریض صحت مند ہو چکے ہیں۔ دہلی میں پر کورونا کے لئے بنائے گئے خصوصی کووڈ ہسپتالوں میں 2118 مریضوں کا علاج چل رہا ہے۔ ان میں سے 191 انتہائی نگہداشت مرکز (آئی سی یو) اور 32 وینٹی لیٹر پر ہیں۔ سب سے زیادہ متاثرہ 602 لوک نائک جے پرکاش نارائن ہسپتال (ایل این جے پی) میں داخل ہیں جن میں 22

ملک میں کورونا سے 4337 ہلاک ، متاثرین کی تعداد 1.50 لاکھ سے زیادہ

نئی دہلی// ملک میں گزشتہ دو دنوں کے دوران کورونا انفیکشن کے نئے معاملوں میں جزوی کمی آئی اور تقریباً 4000 لوگوں کے صحت مند ہونے سے جہاں تھوڑی راحت ملی ہے، وہیں گزشتہ 24 گھنٹے میں انفیکشن کے 6387 نئے کیس سامنے آنے سے ملک میں اس سے متاثر ہونے والے لوگوں کی تعداد 1.50 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے۔ ہندوستان اس انفیکشن سے متاثر ہونے کے معاملے میں دنیا میں 10 ویں نمبر پر ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک کے مختلف حصوں میں اس انفیکشن کے 6387 نئے معاملے درج کئے گئے ہیں اور 170 لوگوں نے اپنی جان گنوائی۔ وہیں اس مدت میں 3935 لوگ ٹھیک بھی ہوئے ہیں۔ صحت اور خاندانی بہبود کی مرکزی وزارت کی جانب سے بدھ کو جاری کئے گئے اعداد و شمار کے مطابق ملک کی مختلف ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام خطوں میں اب تک اس سے 151767 لوگ متاثر ہوئے ہیں اور 4337 لوگوں کی موت ہوئی ہے۔ ملک میں فی الحال کوروناکے کل 83004 فعا

ملک میں کورونا کے نئے معاملات میں جُزوی کمی

نئی دہلی//یواین آئی// ملک میں کورونا وائرس (کووڈ 19) کی سنگینی میں اضافہ ہوتاجارہاہے ۔ اور اب یہ دنیا بھر میں انفیکشن کے سب سے زیادہ کیسز والے ممالک میں 10 ویں نمبر پر ہے ۔ گزشتہ 24 گھنٹوں میں انفیکشن کے کیسز میں اگرچہ جزوی کمی آئی ہے جبکہ اسی مدت 2770 لوگ ٹھیک ہوئے بھی ہیں جس سے اس بیماری سے نجات پانے والوں کی تعداد بڑھ کر 60 ہزار سے زائد ہو گئی۔اس درمیان مہاراشٹر میں کورونا وائرس متاثرین کی تعداد 52 ہزار سے زائد ہو گئی۔مرکزی صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت کی جانب سے منگل کی صبح جاری تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا وائرس کے 6535 نئے کیسز سامنے آئے جس سے متاثرین کی مجموعی تعداد,45,380 1تک پہنچ گئی۔ فی الحال ملک میں کل 80, 722، ایکٹیو کیسز ہیں۔ اس سے ایک دن پہلے 6977 اور اتوار اور ہفتہ کو بالترتیب 6767 اور 6654 نئے کیسز سامنے آئے تھے ۔ملک میں کووڈ -19 انفیکشن

ملک میں لاک ڈاؤن ناکام رہا:راہل

نئی دہلی//کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے کہا ہے کہ وزیراعظم نریندرمودی نے کورونا کو قابو میں کرنے کے لئے ملک سے 21دن مانگے تھے لیکن اب 2ماہ ہونے جارہا ہے لیکن وبا کم ہونے کے بجائے اور بڑھتی ہی جارہی ہے ،جس سے ثابت ہوتا ہے کہ ہندوستان میں لاک ڈاؤن ناکام رہا ہے ۔راہل گاندھی نے منگل کو پریس کانفرنس میں کہا کہ مودی 21دن میں کورونا کو روکنے میں ناکام رہے اور پھر اس میں تین مرتبہ اضافہ کیا گیا۔اب لاک ڈاؤن کو 60روز ہونے والے ہیں لیکن حالات بہتر ہونے کے بجائے بہت زیادہ خراب ہوگئے ہیں۔حکومت کے پاس کورونا سے لڑنے کے لئے کوئی مضبوط حکمت عملی نہیں ہے اس لئے اسے قابو کرنے میں ہم ناکام ہورہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ کورونا سے لڑنے کے لئے دنیا کے تجربات کو دیکھیں تو ہندوستان ہی واحد ملک ہے جہاں اس کے تیزی سے پھیلنے کے درمیان لاک ڈاؤن کھولا جارہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ لاک ڈاؤن کا ہدف حاصل نہیں ہوا ہے ۔اس

لاک ڈاؤن کے تعلق سے کانگریس کا میعار دوہرا :جاوڈیکر

نئی دہلی//یو این آئی// اطلاعات و نشریات کے مرکزی وزیر پرکاش جاوڈیکر نے کورونا اور لاک ڈاؤن جیسے معاملات پر کانگریس پردوہرے معیار کی سیاست کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں جب لاک ڈاؤن نافذ ہواتھا تب اسے دقت تھی اور اب لاک ڈان میں رعایت دی جارہی ہے توبھی اسے پریشانی ہے ،جو اس کے دوہرے معیار کی عکاسی کرتا ہے ۔ جاوڈیکر نے کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی کے بیان پر ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے منگل کو کہا کہ جس وقت ملک میں لاک ڈاؤن شروع ہوا تھا اس وقت کورونا کے معاملوں کے دوگنا ہونے کی شرح تین دن تھی اور اس وقت کورونا کے دوگنا ہونے کی شرح 13روز ہے اور اس میں کافی بہتری آئی ہے ۔ جاوڈیکر کے مطابق ‘‘دنیا کے متعدد ممالک نے ہندوستان کے وقت رہتے کئے گئے اس فیصلے کی تعریف کی ہے ۔یہ ہندوستان کی کامیابی ہے ۔مجھے تعجب ہوتا ہے کہ اس وقت کانگریس نے واویلا مچایا تھا اور کہا تھا کہ اس

تازہ ترین