تازہ ترین

دنیا میں 3.72لاکھ افراد ہلاک ، 61لاکھ سے زائد متاثر

  جنیوا// عالمی وبا کوروناوائرس (کووڈ 19) کے متاثرین کی تعداد 61 لاکھ سے زیادہ ہو گئی ہے جبکہ اس وبا سے اب تک 3.72 لاکھ سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ اس وبا سے ہونے والی اموات کے اعداد و شمار میں بھی امریکہ پہلے نمبر پر ہے جبکہ برطانیہ دوسرے اور اٹلی تیسرے نمبر پر ہے ۔ صرف امریکہ میں ہی ایک لاکھ سے زیادہ لوگ کورونا وائرس کی زد میں آکر موت کی منہ میں سما چکے ہیں۔ امریکہ میں کورونا وائرس کی وبا سے اب تک 17لاکھ90ہزار172 لوگ متاثر ہو چکے ہیں جبکہ 1لاکھ04ہزار381 اموات ہو چکی ہے ۔ برازیل میں متاثرین کی تعداد پانچ لاکھ سے زیادہ ہو چکی ہے ۔ یہاں 5لاکھ14ہزار849 افراد اس وباکی زد میں آ چکے ہیں اور 29ہزار314 لوگوں کی موت ہو چکی ہے ۔روس میں 4لاکھ05ہزار843 لوگ متاثر ہوئے ہیں جبکہ 4693 لوگوں نے جان گنوائی ہے ۔ برطانیہ میں بھی اس وائرس کی وجہ سے حالات مسلسل خراب ہوتے جا رہے ہیں۔ یہاں اب تک اس و

امریکہ میں سیاہ فام شخص کے قتل کے خلاف مظاہرے جاری

واشنگٹن//امریکہ کے کئی شہروں میں کرفیو اور پابندیوں کے باوجود پولیس کے ہاتھوں سیاہ فام شخص کے قتل کے خلاف احتجاج اور ریلیاں نکالی گئیں۔سیئٹل سے نیو یارک تک ہزاروں افراد نے مارچ کیا، مظاہرین رکاوٹیں اور جنگلے گرا کر وائٹ ہاؤس کے قریب پہنچ گئے ۔ امریکی دارالحکومت میں رات کا کرفیو لگادیا گیا۔واشنگٹن ڈی سی میں رات 11 بجے سے صبح 6 بجے تک کر فیو رہے گا۔ ہفتے کی رات پولیس پر حملے ، ہنگاموں، جلاؤ گھیراؤ کے بعد 15 ریاستوں میں نیشنل گارڈز کا گشت جاری ہے ۔پرتشدد مظاہروں کے دوران واشنگٹن میں 11 اور نیو یارک میں 30 پولیس اہلکار زخمی ہوئے جبکہ میامی میں کرفیو کے باوجود لوٹ مار کی گئی۔پولیس نے نیویارک میں 350 اور ہیوسٹن میں 130 مظاہرین کو گرفتار کرلیا۔ اتوار کے روز پولیس پر پتھراؤ کرنے اور بوتلیں پھینکنے کے بعد مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے اورلینڈو پولیس نے آنسو گیس کے گولے چھوڑے ۔پولیس نے ٹویٹ کی

ٹرمپ خاندان کو زیر زمین بنکر میں پناہ لینی پڑی

واشنگٹن// امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور ان کے کنبہ کے اراکین کو وائٹ ہاؤس کے سامنے مظاہروں کے درمیان ایک گھنٹے کے لئے زیرزمین بنکر میں لے جایا گیا تھا۔ یہ اطلاع وائٹ ہاؤس کے افسران نے میڈیا کو دی ہے ۔ مسٹرٹرمپ اور ان کی اہلیہ میلانیا ٹرمپ اور بیٹا برون کو جمعہ کے روز ایک زیرزمین بنکر میں تقریباًایک گھنٹہ تک رکھا گیا تھا۔افریقی نژاد امریکی شہری جارج فلائیڈ کی پولیس تحویل میں موت ہوجانے کے خلاف احتجاج میں جمعہ کی علی الصبح مظاہرین کی بڑی تعداد وہائٹ ہاؤس کے سامنے جمع ہوگئی تھی اور ہفتہ کی رات تک وہیں موجود رہی۔مظاہرے کے دوران بھڑکے تشددمیں خفیہ سروس کے 60 سے زائد افسران اور ایجنٹ زخمی ہوئے ہیں۔رپورٹ کے مطابق وہائٹ ہاؤس کے ملازمین کو سیکیورٹی وجوہات کی بنائپر اتوارسے کام پرآنے سے باز رہنے کوکہا گیا تھا۔دوسری جانب نیشنل گارڈز کی تعیناتی اور کرفیو کے نفاذ کے باوجود امریکہ کے مختلف شہروں میں احت

لندن میں بھی مظاہرے، 23 گرفتار

لندن// لندن پولیس نے پیر کو امریکی سفارت خانے کے سامنے جارج فلائڈ کے ساتھ مظاہرین کے یکجہتی دکھانے کے لئے جمع ہوئے 23 افراد کو گرفتار کر لیا۔لندن کے میٹروپولیٹن پولیس سروس نے یہ اطلاع دی۔پولیس نے ٹوئیٹ کیاکہ وسطی لندن میں مختلف جلسوں سے کل 23 لوگ گرفتار کئے گئے ہیں۔ تمام پولیس کی گرفت میں ہیں۔ اس میں شامل زیادہ تر لوگوں نے اس علاقے کو چھوڑ دیا ہے۔اس سے پہلے دن میں پولیس نے کہا کہ لوگوں کو مختلف جرائم کے لئے حراست میں لیا گیا ہے ۔ اس میں ‘پولیس پر حملہ کرنے کے لئے ایک جارحانہ ہتھیار ساتھ میں رکھنا اور کورونا وائرس کی پابندیوں کی خلاف ورزی شامل تھی۔امریکہ کے منی پولس میں 25 مئی کو ایک غیر مسلح سیاہ فام امریکی جارج فلائڈ کی ایک سفید فام پولیس افسر کے ہاتھوں موت ہو گئی تھی۔ جارج کی موت کے بعد جرمنی، کینیڈا، آئر لینڈ سمیت دنیا کے کئی ممالک میں لوگ احتجاج کر رہے ہیں۔