تازہ ترین

کورونا کی ڈیلٹا قسم | امریکہ کاسفری پابندیاں برقرار رکھنے کا فیصلہ

تاریخ    28 جولائی 2021 (00 : 12 AM)   


یو این آئی
واشنگٹن //وائٹ ہاؤس نے تصدیق کی ہے کہ کورونا وائرس کی تیزی سے پھیلنے والی نئی قسم ڈیلٹا ویریئنٹ کے حوالے سے تحفظات اور کووڈ 19 کے کیسز میں اضافے کی وجہ سے امریکہ اس وقت کوئی سفری پابندیاں نہیں اٹھائے گا۔ یہ فیصلہ وائٹ ہاؤس میں ینیئر حکام کی میٹنگ کے بعد سامنے آیا ہے جس کا مطلب ہے کہ طویل عرصے سے عائد کی گئیں سفری پابندیاں جنہوں نے دنیا کی آبادی کی بڑی تعداد کو امریکہ میں داخلے سے روک رکھا ہے، مختصر مدت میں ختم نہیں کی جائیں گی۔وائٹ ہاؤس کی ترجمان جین ساکی نے بتایا کہ ’ڈیلٹا ویرئینٹ کی تازہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے ہم اس وقت موجودہ سفری پابندیاں برقرار رکھیں گے، یہاں کیسز کی تعداد بڑھ رہی ہے خاص طور پر ان افراد میں جن کی ویکسینیشن نہیں ہوئی ہے اور ایسا نظر آ رہا ہے کہ آئندہ ہفتوں میں یہ تعداد بڑھے گی۔‘امریکہ کی حالیہ پابندیاں ان غیرملکیوں کو ملک میں داخلے سے روکتی ہیں جو سفر سے پہلے 14 دنوں سے برطانیہ، 26 شینگن ممالک، آئرلینڈ، چین، انڈیا، جنوبی افریقہ، ایران اور برازیل میں رہے ہوں۔یو ایس ٹریول ایسوسی ایشن، ایئر لائنز کی نمائندگی کرنے والے، کسینوز، ہوٹلوں، ایئرپورٹس، طیارے بنانے والے اداروں اور دیگر کمپنیوں پر مشتمل گروپ نے امریکی انتظامیہ سے گذشتہ سال 15 جولائی سیعائد پابندیوں میں نرمی کا مطالبہ کیا تھا۔یہ غیرمعمولی سفری پابندیاں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے سب سے پہلے جنوری 2020 میں چین پر لگائی گئی تھیں۔ بعد میں دیگر ممالک پر بھی یہ پابندیاں عائد کی گئیں، انڈیا میں رواں سال مئی کے اوائل میں پابندی لگائی گئی۔گذشتہ ہفتے امریکہ کے ہوم لینڈ سکیورٹی ڈیپارٹمنٹ نے کہا تھا کہ امریکہ کینیڈا اور میسکیکو کے ساتھ سرحدیں غیرضروری سفر کے لیے 21 اگست تک بند رہیں گی حالانکہ کینیڈا نے ان امریکی سیاحوں کو نو اگست سے ملک میں داخلے کی اجازت دینے کا اعلان کیا ہے جو ویکسین لگوا چکے ہیں۔15 جولائی کو امریکی صدر جو بائیڈن سے جب یہ پوچھا گیا کہ امریکہ یورپی ممالک سے سفری پابندیاں کب اٹھائے گا تو انہوں نے کہا تھا کہ وہ آئندہ کچھ دنوں میں اس سوال کا جواب دے سکیں گے۔‘