تازہ ترین

بھاجپا مخالف اتحاد بنانے کیلئے کوششیں

عمر عبداللہ سمیت متعدد اپوزشن لیڈروں کی میٹنگ

تاریخ    23 جون 2021 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
  نئی دہلی // تقریباً سبھی اپوزیشن جماعتوں بشمول بائیں بازو کے قائدین منگل کو یہاں نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے سربراہ شرد پوار کی رہائش گاہ پر جمع ہوئے ، جہاں کئی گھنٹوں تک حکمران اتحاد بی جے پی کیخلاف مشترکہ محاذ بنانے کے امکانات کا جائزہ لیا گیا۔قابل غور بات یہ ہے کہ اس میٹنگ میں عمر عبداللہ نے بھی شرکت کی۔ سابق وزیر خزانہ اور ترنمول کانگریس کے رہنما یشونت سنہا ، سماج وادی پارٹی کے گنشیام تیواری ، راشٹریہ لوک دل (آر ایل ڈی) کے صدر جیانت چودھری ، عام آدمی پارٹی (آپ) سے سشیل گپتا ، ہندوستان کی کمیونسٹ پارٹی سے بنوئے وشوم، (سی پی آئی)کے نیلوتپال باسو اجلاس میں شرکت کے لئے پوار کی رہائش گاہ پر پہنچے۔کانگریس کے سابق رہنما سنجے جھا اور جنتا دل (متحدہ) کے سابق رہنما پون ورما بھی اس اجلاس میں شرکت کے لئے آئے تھے۔دیگر اہم شخصیات جو اجلاس میں شرکت کے لئے پوار کی رہائش گاہ پر پہنچیں ان میں جسٹس اے پی شاہ ، جاوید اختر اور کے سی سنگھ شامل تھے۔ابھی میٹنگ جاری تھی۔اس سے قبل ہی دن میں ، ایک سینئر نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) کے رہنما ، نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا ، اگرچہ پوار اجلاس کی میزبانی کر رہے ہیں ، لیکن اس کا اہتمام سنہا نے کیا ہے ، جو راشٹرا منچ کے کنوینر ہیں۔میٹنگ کے آغاز پر سی آپی آئی کے ممبر پارلیمنٹ بنائے وشوم نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا ’’یہ سیکولر اور جمہور پسند طاقتوں کا باعث نفرت اور ناکام حکومت کیخلاف اتحاد ہے، ملک تبدیلی چاہتا ہے اور لوگ اس کیلئے تیار ہیں‘‘۔