غزلیات

تاریخ    11 اپریل 2021 (00 : 01 AM)   


خواب اچھا تھا مگر تعبیر سے خالی تھا جو
جیسے خط محبوب کا تحریر سےخالی تھا جو
سایۂ دیوار سے لٹکا ہوا اٹکا ہوا
عالمی نقشہ ملا کشمیر سے خالی تھا جو
آج بھی لائی تھی سطحِ آب پر موجِ چناب
دل کسی رانجھے کا لیکن ہیر سے خالی تھا جو
چھوڑ کر یہ کون دیوانہ گیا ہے یوں قفس
دشت میں اک ڈھانچہ زنجیر سے خالی تھا جو
سرد آہوں سے بھرا صندوق جب کھولا گیا
درد کا البم ملا تصویر سے خالی تھا جو
پھینک کر آئے جنوں کی وادیوں میں صبح تک
اپنے حصے کا نشہ تاثیر سے خالی تھا جو
ہم نے دل کی روشنی نیلام کردی رات بھر
جھونپڑا شیدؔا ترا چھت گیر سے خالی تھا جو 
 
علی شیدؔا
 نجدون نیپورہ اسلام آباد،  
موبائل  نمبر؛9419045087
 
 
 
زندگی کے سراب کا مارا
ہوں مسلسل عذاب کا مارا 
پڑھ نہ پایا میں اس کی آنکھوں کو
عشق کے ہوں نصاب کا مارا
تیری زلفوں کی چھاؤں پا لے تو
کچھ جئے اضطراب کا مارا
میری عادت کھری کھری کہنا
وہ سوال و جواب کا مارا
خوف میں مبتلا حقیقت سے
ہو گیا ایک خواب کا مارا
اس کو بھاتی کہاں ہے آسائش
دل جو ہو اضطراب کا مارا
تم رہے خار خار چلاتے
یار میں تھا گلاب کا مارا
تھا وہ عارضؔ شمار رندوں میں
جس کو سمجھا شراب کا مارا
 
عارضؔؔ ارشاد
نوہٹہ سرینگر
موبائل نمبر؛7006003386
 
 
شامِ وصال اب نہیں ، اُس کا جمال اب نہیں 
 اپنا عروج ہو نہ ہو ، اُس کا زوال اب نہیں 
میری خوشی کے گرد میں، اُس کا ہی ہجر ہے سو ہے
 ہجر مکینِ دل مگر ، دل کو ملال اب نہیں 
اُس کی انا کا ہے سوال،  میرا بھی ہے یہ امتحان
شامِ فراق کچھ نہ پوچھ ، ہم سے سوال اب نہیں 
ہے آسماں کو آگ نے راکھ اور دھواں بنا دیا 
میں بھی وہ سورج اب نہیں، تو بھی ہلال اب نہیں
 کیسا خیال تھا بہم ، اپنی تلاش میں چلا 
کیا وہ خیال اب نہیں ؟ کیوں وہ خیال اب نہیں؟
وقت ہاں! وہ میرا وقت ، جانے کہاں پہ رُک گیا
گردشیں اب کہاں کہ وہ ماہ ہ سال اب نہیں 
شکوہ ترا نہ رنج و غم ، حال و بحال ، کچھ نہیں 
صورتِ حال ہے کہ وہ صورتِ حال اب نہیں
مجھ کو نشاطِ لطف نے ایسے تباہ کر دیا 
لذتِ فراق اب نہیں لذتِ وصال اب نہیں 
مدتوں سے مرے وجود میں تو پڑا ہے نیم جان 
تیرا خیال اب نہیں !  تیرا خیال اب نہیں ! 
 
راقمؔ حیدر
حیدریہ کالونی شالیمار سرینگر (حال بنگلور )
موبائل نمبر؛ 9906543569
 
 
ستم جب جب بھی وہ برپا کریں گے
اُسے ماتھے پہ ہم لکھا کریں گے
 
یہی داغِ ستم دھونے کی خاطِر 
دیوانے جان کا سودا کریں گے
 
لگیں گےڈوبنے جب وہ بھنور میں
کنارے رہ کے ہم دیکھا کریں گے
 
حسیں ہو گا نظارا خوب وہ بھی
وہ جِس دم گِر کے پھر سنبھلا کریں گے
 
اگر موجود محفل میں رہے ہم
بہت سےراز ہم بھی وا کریں گر
 
کدورت کے چمن میں دیکھنا تُم
وفا کے پھول پھر مہکا کریں گے
 
یقیں جانو میری یادوں کے چشمے 
تمہاری آنکھ سےپُھوٹا کریں گے
 
دلِ مضطر سمندر ہو گیا ہے
کریں گر وہ بُرا، اچھا کریں گے
 
 اعجاز الحق مضطرؔ
کشتواڑ،جموں
موبائل نمبر؛9419121571
email :  ejazkishtwari@gmail.com
 
 
 
غزلیات
پت جھڑ میں موجِ تند نہ بکھرا گئی مجھے
کچھ دھوپ ہی بہار کی جھلسا گئی مجھے
حیرت نہیں کہ چاک قبائیں عدو نے کی
سازش کسی عزیز کی چونکا گئی مجھے
الزام میں نصیب کو دیتا رہا عبث
اپنی نظر ہی آپ یہاں کھا گئی مجھے
دو پل ملی نجات غموں کے حصار سے
صورت کوئی خیال میں بہلا گئی مجھے
احسان زندگی پہ کیے لاکھ بدلے میں 
زنجیر اک قصور پہ پہنا گئی مجھے
آئی نہیں پلٹ کے بہاریں کبھی مگر
اک عمر انتظار میں تڑپا گئی مجھے
عارف ؔوکیل کس لیے ہے التماس کیا
مجرم میری ذات ہی ٹھہرا گئی مجھے
 
جاوید عارف ؔ
پہانو،شوپیان کشمیر
موبائل نمبر؛7006800298
 
 
محبت حق پہ آئی تو ملے صدمے زمانے سے
اُصولِ عشق  ہے  توحید ڈرنا کیوں  زمانے سے
دہکتی آگ پر چلنا مجھے تسلیم ہے جانم
اگر تم کو یقیں ہوگا مجھے یوں آزمانے سے
ہمارے عشق کا معیار اُفق شاہیں سا لگتا تھا
جُھلس جاتے زمانے جب ہمارے حق جتانے سے
تَوکُل وصل کا میں نے کیا ہے اِن چراغوں پر
نہیں چاہت تو آکے فیصلہ کرلے بُجھانے سے
محبت میں ستم کرنا کروں آئین میں شامل
مسرت تم کو ملتی ہے اگر مجھکو ستانے سے
پچھڑ کے بھی مرے تحفے ادا کرلیں گے اپنا حق
صنم راحت ملے گی جب تمہیں اُن کو جلانے سے
رَعُونت ساز مرتے ہیں مگر واپس نہیں آتے
وَلے تم حق ادا کرنا مجھے ہر دم بُلانے سے
اجازت چاہیے معصومؔ کو تم کو بُھلانے کی
سُکونِ قلب ہوگا اب تجھے دل سے  مٹانے سے
 
معصوم فرمانؔ
طالب علم، ہرد شیوہ سوپور
موبائل نمبر؛6005809201
 
 
غمِ دہر سے فرصت ہی نہیں
اب وصل کی حسرت ہی نہیں
 
اب مجھے عادت سی ہو گئی
ہر شب، شبِ فرقت ہی نہیں
 
مل کر بھی فرحت ملی نہیں
حالِ دل کی کوئی حالت ہی نہیں
 
اب کہ وہ روگ ملا ہی نہیں
اب ہستئی آتش حسرت ہی نہیں
 
عادتِ مے کشی سعادت ہی مجھے
پر ترے سوا کوئی عادت ہی نہیں
 
میر شہریار
سریگفوارہ، اننت ناگ
 
 
ڈگری کالج بھدرواہ کے نام
کس قدر نم ہے مری آنکھ تجھے پانے پر
اور یہ دل تو مچلتا ہی چلا جاتا ہے
تیری جانب کو لپکتے ہوئے خوش رو چہرے
اس یقیں سے کہ انہیں تجھ سے سکوں حاصل ہو
ان کو امید ہے اس تری عطا کردی سے
کہ یہ سب لوٹ کے مایوس نہیں جائیں گے
دیکھتا بھی ہے کوئی رب کی عطائیں ، کہ نہیں
کس طرح اس نے تجھے علم کا زیور بخشا
ہو بیاں کیسے کہ یہ تیرے حسیں کوزہ گر
کس طرح خاک سے انسان بنا لیتے ہیں
جس جگہ طفلِ جہاں تھک کے ٹھہر جاتے ہوں
یہ وہاں اک نیا امکان بنا لیتے ہیں
کتنے دلکش ہیں ترے باغ میں کھلتے ہوئے پھول
جیسے بدلی سے کوئی چاند نکل آتا ہے
کیا کہوں کیسی ملائم ہے ترے لان کی گھاس
دل مچلتا ہوا اک پل میں بہل جاتا ہے
یہ ترے صحن میں سالوں سے کھڑا ایک چنار
تیرے بچوں کی نگاہوں کو سکوں دینے کو
سبز ہوتا ہے ، کبھی سرخ ہوا جاتا ہے
چار جانب سے پہاڑوں کی قطاروں میں گھرا
تو مجھے جان سے بڑھ کر مرے پیاروں میں سے ہے
رب سدا تجھ کو رکھے اپنی نگہبانی میں
ہر تموّج میں ہر اک جذر میں طغیانی میں
 
جعفر تابش(طالب علم ۔پی جی)
ڈگری کالج بھدرواہ،موبائل نمبر؛8492956626
 

تازہ ترین