تازہ ترین

لداخ شاہراہ پر دونوں طرف برف ہٹائی گئی | ناشری ٹنل کے آر پار بدترین ٹریفک جام، ہلکی بارشوں کا آغاز

تاریخ    8 مارچ 2021 (54 : 12 AM)   


غلام نبی رینہ+محمد تسکین
کنگن +بانہال//سرینگر لداخ شاہراہ سے برف ہٹانے کا کام دونوں طرف مکمل کیا گیا ۔ اگرچہ رواں برس مقررہ وقت سے قبل ہی باڈر روڈ آرگنائزیشن نے سرینگر لداخ شاہراہ پر 15مارچ کو برف ہٹانے کا کام مکمل کیا  تھا لیکن 28مارچ کے روز بھاری برفباری کی وجہ سے شاہراہ دوبارہ بند ہوگئی۔حکام نے بتایا کہ شاہراہ کے دونوں طرف  پروجیکٹ وجیک اور باڈر روڈ آرگنائزیشن نے دوبارہ برف ہٹانے کا کام شروع کیا تھا اور کافی مشقت کے بعد اتوار کو شاہراہ کے دونوں طرف  برف ہٹانے کا کام مکمل کیا گیا ۔ اس دوران اتوار کے روز اگرچہ دن بھر مطلع ابرآلود رہا تاہم شام کے بعد زوجیلا، سونہ مرگ، گگن گیر کے علاقوں میں ہلکی بارشوں کا سلسلہ شروع ہوگیا ۔ادھر اتوار صبح سے ہی ناشری ٹنل کے دونوں طرف ٹریفک جام رہا جس کی وجہ سے مسافروں کو اپنی منزلوں تک پہنچنے میں تاخیر کا سامنا کرنا پڑا۔ ٹریفک پولیس نے بتایا کہ ناشری ٹنل پر ٹول کی ادائیگی کیلئے گاڑیوں پر فاسٹیگ لگانے کی وجہ سے وقفے وقفے سے ٹریفک جام لگا رہا۔ انہوں نے کہا کہ جن گاڑیوں کو فاسٹیگ نہیں لگے ہیں وہ بھی جام کا سبب بن رہی ہیں اور وہاں ہر گاڑیوں کو Fastage لگائے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دوپہر بعد سے ٹریفک جام پر قابو پایا گیا۔ اس دوران اتوار کی سہ پہر بعد چار بجے سے بانہال اور اس کے پہاڑوں پر بارشوں کا ہلکاسلسلہ شروع ہوا  تاہم اس سے ٹریفک کی نقل وحرکت متاثر نہیں ہوئی۔
 
 
 

 رام بن میں زیر تعمیر ریلوے پل پر حادثہ | 3افراد گر گئے ، ایک کی موت ، رام بن میں مظاہرے

محمد تسکین
بانہال// کشمیر ریل پروجیکٹ پر رام بن کے سمبڑھ علاقے میں ایک زیر تعمیر ریلوے پل پر جاری کام کے دوران تین افراد نیچے گرنے کی وجہ سے زخمی ہوگئے، جن میں سے ایک کی موت واقع ہوئی جبکہ ایک زخمی کو میڈیکل کالج جموں منتقل کیا گیا۔۔ پولیس نے ہلاک ورکر کی شناخت 39 سالہ ظہور احمد سوہل ولد محمد افضل سوہل ساکن ہی وگن رامسو کے طور کی ہے جبکہ دو زخمیوں میں 22 سالہ پردیپ کمار ولد دولت رام ساکن کشتواڑ اور 20 سالہ فیصل بشیر ولد بشیر احمد ساکن ٹنگمرگ ضلع بارہمولہ شامل ہیں۔ رامسو اور رام بن کے کئی لوگوں نے ضلع ہسپتال رام بن کے احاطے میں ریلوے تعمیراتی کمپنی ہندوستان کنسٹرکشن کے خلاف احتجاجی مظاہرے کئے۔  ان کا الزام ہے کہ کمپنی کی طرف سے زخمیوں کو ایمبولینس فراہم نہ کرنے کی وجہ سے ایک کی موت واقع ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایمبولینس کے بجائے انہیں پک اپ میںضلع ہسپتال رام بن پہنچایا گیا۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ  تعمیراتی کمپنی اور اس کے ٹھیکیدار کے خلاف مبینہ لاپرواہی اور ورکروں کی زندگی اور سیفٹی پر سمجھوتہ اور قتل  کے الزامات کے تحت مقدمہ درج کیا جائے۔  پولیس نے بتایا کہ حادثے میں ایک ہی شخص زخمی ہوا ہے اور کیس درج کرکے مزید کارروائی کی جارہی ہے۔