انڈین اکنامک سروس اور انڈین سٹیٹسٹیکل سروس

معاشیات اور شماریات میں پوسٹ گریجویٹس کیلئے نادر موقعہ

تاریخ    2 مارچ 2021 (00 : 01 AM)   


مومن فہیم احمد عبدالباری
مسابقتی امتحانات کی اہمیت سے ہم تمام واقف ہیں۔ ملک کے تمام بڑے انتظامی عہدوں کیلئے جس قابلیت کی ضرورت ہوتی ہے ان کی جانچ کے لیے ملک میں مختلف مسابقتی امتحانات مرکزی اور ریاستی سطح پر منعقد کیے جاتے ہیں۔ مرکزی سطح پر یونین پبلک سروس کمیشن جبکہ ریاستی سطح پر مختلف ریاستوں کے پبلک سروس کمیشن کے تحت یہ امتحانات منعقد کیے جاتے ہیں۔ اس کے علاوہ ریلوے کی اسامیوں کو پُر کرنے کے لئے ریلوے ریکروٹمنٹ بورڈ، مختلف مرکزی محکموں میں گریڈ بی کی سطح کی اسامیوں کوپُر کرنے کے لئے ایس ایس سی (اسٹاف سلیکشن کمیشن) ، عوامی شعبہ کی بینکوں میں پروبیشنری آفیسرس کی تقرری کے لیے آئی بی پی ایس (انڈین بینکنگ پرسونل سلیکشن) ، فوج میں شمولیت کے لیے این ڈی اے، کمبائنڈ ڈیفینس سروس و غیرہ کے تحت امتحانات منعقد کیے جاتے ہیں۔ ان تمام مسابقتی امتحانات میں کسی مخصوص شعبہ کی تعلیمی قابلیت  یا ڈگری کی ضرورت نہیںہوتی۔ اس کو ہم اس طرح سمجھ سکتے ہیں کہ ریلوے کے امتحانات میں دسویں، آئی ٹی آئی کامیاب، بارہویں اور گریجویٹ امیدوار،اسٹاف سلیکشن کمیشن کے امتحانات میں بارہویں اور گریجویٹ امیدوار ، بینکنگ کے امتحانات کے لیے گریجویٹ امیدوار، یونین پبلک سروس کمیشن اور ریاستی پبلک سروس کمیشن کے امتحانات میں گریجویٹ امیدوار شریک ہوسکتے ہیں۔ کسی مخصوص اسٹریم (فیکلٹی) سے کامیابی شرط نہیں ہوتی۔ لیکن ان کے علاوہ بھی کئی ایسے امتحانات ہوتے ہیں جن میں مخصوص قابلیت، تعلیمی صلاحیت، متعلقہ مضامین میں اعلیٰ ڈگری یافتہ افراد ہی شریک ہوسکتے ہیں۔ مثلاً انڈین انجینئرنگ سروس کے امتحانات میں انجینئر ہی شریک ہوسکتے ہیں، انڈین اکنامک سروس اور انڈین اسٹیٹسٹیکل سروس کے امتحانات میں معاشیات، ریاضی، شماریات، شماریاتی معاشیات جیسے مضامین میں اعلیٰ تعلیم یافتہ افراد ہی شریک ہوسکتے ہیں۔ آئیے ہم ان میں سے آئی ای ایس اور آئی ایس ایس کا جائزہ لیں۔ 
 آئی ای ایس اور آئی ایس ایس کیا ہیں؟
معاشیاتی اور شماریاتی سروسز:-  انڈین اکنامک سروس (آئی ای ایس) اور انڈین اسٹیٹسٹیکل سروس(آئی ایس ایس) یونین پبلک سروس کمیشن کے تحت منعقد ہونے والے ایسے امتحانات ہیں جو مرکزی حکومت کی اہم وزارتوں کے انتظامی امور، اعداد و شمار کی بنیاد پر پالیسی کی ترتیب دینے والے افراد کا تقرر کرنے کے لیے منعقد کیے جاتے ہیں۔ ہندوستان میں معاشی پالیسیوں کو ترتیب دینے اور انھیں نافذ کرنے کے لیے انڈین اکنامک سروس (آئی ای ایس) کو متعارف کروایا گیا۔1991 میں بڑے پیمانے پر معاشی اصلاحات اور حکومت کے بطور نگراں کردار کی وسعت کے لیے مختلف شعبوں میں تجزیہ کاروں اور اس طرح کی خدمات انجام دینے والے افراد کی ضرورت پہلے سے کئی گنا بڑھ گئی۔ جبکہ انڈین اسٹیٹسٹیکل سروس(آئی ایس ایس) کے لیے مختلف وزارتوں اور محکموں کی شماریاتی اسامیوں کو ان خدمات کے تحت ایک کردیا گیا۔ حکومتی قوانین کے مطابق یونین پبلک سروس کمیشن کے تحت جونیر ٹائم اسکیل خدمات کے لیے ان اسامیوں کو پُر کرنے کے لیے ایک کمبائنڈ مسابقتی امتحان ہر سال منعقد کیا جاتا ہے۔ 
ان امتحانات سے متعلق بنیادی باتیں 
یہ امتحان یونین پبلک سروس کمیشن کے تحت سال میں ایک مرتبہ ہی منعقد کیا جاتا ہے۔ ایک امیدوار زیادہ سے زیادہ چھ مرتبہ اس امتحان میں شریک ہوسکتا ہے۔ یہ آف لائن (قلم اور کاغذ) منعقد کیا جاتا ہے۔ ہر سال تقریباً بتیس سے تینتیس اسامیوں کے لیے یہ امتحان منعقد کیا جاتا ہے۔ ملک بھر سے دو لاکھ سے زائد امیدوار اس میں شریک ہوتے ہیں جنھیں تین دن کے دورانیے پر مشتمل امتحان سے گذرنا پڑتا ہے۔ امسال اس امتحان کا اعلان اپریل کے پہلے ہفتے میں متوقع ہے۔یو پی ایس سی کیلنڈر کے مطابق 7؍اپریل 2021سے 27؍اپریل 2021 کے درمیان آن لائن فارم بھرنے ہوں گے۔ ملک کے انیس (19) شہروں احمد آباد، بنگولورو، بھوپال، چندی گڑھ، چینئی، کٹک، دہلی، دِسپور، حیدرآباد، جے پور، جموں، کولکتہ، لکھنؤ، ممبئی، پٹنہ، پریاگ راج(الہ آباد)، شیلانگ، شملہ، ترواننتھاپورم میں امتحانی مراکز ہیں۔ 
امتحان کی نوعیت و طریقہ کار
یہ امتحان تحریری پرچوں اور انٹرویو پر مشتمل ہوتا ہے۔ انگریزی ، جنرل اسٹڈیز کے علاوہ آئی ای ایس منتخب کرنے والے امیدواروں کو معاشیات جبکہ آئی ایس ایس منتخب کرنے والے امیدواروں کو شماریات کے پرچے دینے ہوتے ہیں۔ یہ امتحان تین دن، ہر روز دو پرچوں پر مشتمل ہوتا ہے۔  پہلے دن انگریزی اور جنرل اسٹڈیز کا پرچہ ہوتا ہے جبکہ بقیہ دو دن دوپرچے روزانہ کے حساب سے معاشیات اور شماریات مضامین کے ہوتے ہیں۔ تحریری امتحان میں کامیاب امیدوار کو انٹرویو کے مرحلے سے گذرنا پڑتا ہے۔تحریری امتحان ایک ہزار مارکس جبکہ انٹرویو دو سو مارکس پر مشتمل ہوتا ہے۔ انٹرویو میں کامیاب امیدوار کو تقریباً دو برس تربیت حاصل کرنی ہوتی ہے اس کے بعد بحیثیت سپر ون کلاس آفیسر ملک کی مختلف وزارتوں میں اہم ذمہ داریوں کے لیے تقرری ہوتی ہے۔  
درکار تعلیمی قابلیت و عمر کی حد
انڈین اکنامک سروس (آئی ای ایس) کیلئے :  امیدوار کو انڈین اکنامک سروس کے امتحان میں شرکت کے لیے ملک یا بیرون ملک کی کسی مسلمہ یونیورسٹی سے معاشیات، اپلائیڈ معاشیات، بزنس معاشیات، شماریاتی معاشیات ان مضامین میں پوسٹ گریجویٹ ہونا لازمی ہے۔ 
انڈین اسٹیٹسٹیکل سروس (آئی ایس ایس)کیلئے : اس امتحان میں شرکت کے متمنی امیدواروں کوگریجویشن کی سطح پرایک مضمون ماریات (اسٹیٹسٹکس)، ریاضیاتی شماریات، اطلاقی شماریات(اپلائیڈ)کے ساتھ کامیاب ہونا لازمی ہے یا ملک و بیرون ملک کی مسلمہ یونیورسٹی سے شماریات، ریاضیاتی شماریات، اطلاقی شماریات ان مضامین میں پوسٹ گریجویٹ ہونا لازمی ہے۔ 
عمر کی حد : امیدوار کی عمر21 برس سے کم اور30برس سے زائد نہیں ہونی چاہیے۔ ایس سی ایس ٹی کو پانچ برس، او بی سی کو تین برس کی رعایت ہوتی ہے اس کے علاوہ دیگر کیٹیگری کے امیدواروں کو بھی حکومتی قوانین کی بنیاد پر رعایت حاصل ہوتی ہے جس کی تفصیل upsc.gov.in کی ویب سائٹ پر دستیاب ہیں۔ 
کامیاب امیدواروں کی اہمیت، کردار اور ذمہ داریاں 
یہ امتحان مرکزی خدمات میں بحیثیت گروپ ـ۔’اے‘ آفیسرتقرری کا پروانہ ہے۔ کامیاب امیدواروں کو پلاننگ کمیشن(منصوبہ بندی کمیشن)، وزارت برائے معاشی امور، نیشنل سیمپل سروے اور ان سے متعلقہ محکموں میں تقرری کی جاتی ہے جہاں بالخصوص معاشیات اور شماریات کے ماہرافسران کی ضرورت ہوتی ہے۔ کیڈر پوسٹ کے علاوہ آئی ای ایس افسران کو ملکی و غیر ملکی اداروں میں ڈیپوٹیشن پر بھیجا جاسکتا ہے۔ ان اداروں میں اقوام متحدہ، غیر ملکی حکومتیں، ریاستی حکومتیں اور ریگولیٹری ادارے شامل ہیں۔ ملک میں عام طور پر ان امیدواروں مرکزی حکومت کے محکموں، ملک کی راجدھانی میں پوسٹنگ کی جاتی ہے۔ ابتدائی عمر میں اس پوسٹ پر فائز امیدواراپنی قابلیت اور صلاحیت کی بناء پر ترقی کرتے ہوئے حکومت ہند میں سیکریٹری کی پوسٹ تک پہنچ سکتا ہے۔ 
یہ ملک کے اہم ترین امتحانات میں سے ایک ہے جس میں سخت ، مسلسل محنت اور لگن کی ضرورت ہوتی ہے۔ ہمارے سماج میں ایسی بیشتر مثالیں موجود ہیںجنھوں نے اپنی معاشی پسماندگی، ناگفتہ بہ حالات کے باوجود نمایاں مقام حاصل کیا۔ ہمارے طلبہ میں صلاحیتوں کی کوئی کمی نہیں ہے، لیکن ہر کامیابی کے لیے محنت شرط ہے !
2019 میں منعقد ہونے والے انڈین اسٹیٹسٹیکل سروس امتحان میں، مہاراشٹر کے ایک چھوٹے سے قصبے’وِٹا‘ضلع سانگلی سے تعلق رکھنے والے، ابتدائی تعلیم اردو میڈیم سے حاصل کرنے والے، سبزی فروش کے فرزند اور بچوں کو مفت ریاضی پڑھانے والے سلیم قمرالدین پانوالے نے اس امتحان میں نمایاں کامیابی حاصل کی اور پورے ملک میں بیسواں اور مہاراشٹر میں پہلا مقام حاصل کیا۔ سلیم پان والے نے بی ایس سی کیا، بی ایس سی میں ریاضی اور شماریات مضامین منتخب کیے، بانوے فیصد سے بی ایس سی کامیاب کیا۔ شیواجی یونیورسٹی سے شماریات میں ایم ایس سی اٹہتر فیصد سے کامیاب کیا۔ گیٹ امتحان میں کامیابی حاصل کی۔ پونے کی ایک فرم میں ملازمت کی، آئی ایس ایس کی تیاری کرتے رہے اور پہلی ہی کوشش میں کامیابی حاصل کی اور آل انڈیا بیسواں رینک حاصل کیا۔  
فون نمبر۔9970809093
ای میل۔mominfahim@rediffmail.com
������������
 

تازہ ترین