اسلام ،میڈیا اور مسلمان

خود فریبی اور غلط روی سے دائمی کامیابی نہیں ملتی

تاریخ    2 مارچ 2021 (00 : 01 AM)   


اے مجید وانی
بہت سے حقائق اور فضیلت کی باتیں ناپید ہوگئی ہوتیں اور انسانیت وحشی درندوں کا ایک ریوڈ بن گئی ہوتی اگر اسلام رونما نہ ہوا ہوتا۔اسلام اللہ کا دین ہے اور اس دین سے ناواقف لوگوں کو اس طرف متوجہ کرنا چاہئے کہ یہ دین ِ فطرت ہے کیونکہ زندگی کے مختلف پہلوئوں سے متعلق اس کی تعلیمات فطرت ِ سلیمہ اور صحت مندانہ نظریات کے تقاضوں کے عین مطابق ہیں اور اس کے اصول و ضوابط انسان کو درجۂ کمال تک پہنچانے اور اُسے سکون و اطمینان میسر کرنے کے لئے ہی ہیں۔ لفط فطرت کے تعلق سے اختلاف ِ رائے ہوسکتا ہے ،یہ ممکن ہے کہ کوئی شخص اپنی طبیعت کے مطابق کسی چیز کو اچھا قرار دے اور کوئی اپنی طبیعت کے مطابق بُرا ،مگر فطرت کا لفظ جب بھی بولا جائے گا اس سے مُراد فطرت ِ سلیمہ ہی ہوگی،اگر اس میں کوئی خرابی دَر آئے تو اُسے قابل لحاظ نہیں سمجھا جائے گا ۔فطرت میں جو بھی نقص لاحق ہوگا وہ شاذ سمجھا جائے گا اور اس پر چُپ رہنے اور نہ ماننے کے بجائے اُسے دور کرنے کی کوشش کرنی چاہئے۔انسانی معاشرے کو اسی راہ پر گامزن رہنا چاہئے ۔جو لوگ ذہنی و نفسیاتی طور پر صحت مند ہوں ،کامل طبیعت اور معتدل مزاج رکھتے ہوں،اُنہی کی بات سُنی اور مانی جائے گی ورنہ ذہنی و نفسیاتی امراض کے شکار لوگ فطرت ِ سلیمہ کی مثال نہیں بن سکتے اور اُن کے فیصلوں اور رایوں کو قبول نہیں کیا جاسکتا ،چاہے وہ بزعم خود فطرت کے تقاضوں کے مطابق بات کرنے کا دعویٰ ہی کیوں نہ کریں۔جب ایک سوال کرنے والے نے رسول اللہ ؐ سے نیکی کے بارے میں سوال کیا تو آپؐ نے یہی جواب دیا کہ’’اپنے دل سے پوچھو‘‘۔یہ جواب کسی مُجرم کو نہیں دیا گیا تھا کہ وہ اُسے خونریزی اور حق تلفی کے لئے بہانہ بنالے بلکہ یہ شریفانہ جواب اُسی شخص کو دیا گیا تھا جو سلیم الفطرت اور خیر پسند تھاس اور چھوٹے گناہوں کے بارے میں فکر مند رہتا تھا ،رسول اللہ ؐ نے اُسے بار بار سوال کرنے کی زحمت سے بچانے کے لئے یہ ہدایت فرمائی کہ جب کسی چیز کے بارے میں شک و شبہ ہو تو اپنے دل سے رہنمائی حاصل کرو۔فطرت ِ سلیمہ رکھنے والے ایسے ہی افراد معیارِ میزان کی حیثیت رکھتے ہیں اور ایسے لوگوں کے بغیر زندگی بے کار ہے۔
اسلام ایک ایسا مذہب ہے جس کے بارے میں گفتگو کرنا اور اُس کی تشریح و توضیع کرنا کسی مخصوص طبقے کی اجارہ داری نہیں ہے البتہ اتنا ضرور ہے کہ جو لوگ کافی مطالعہ کرچکے ہیں اور فکری و روحانی کُشادہ ذہنی سے بہرہ اندوز ہیں وہی اس کے اہل ہیں اور اسی کے ساتھ سچے دل سے عمل بھی ضروری ہے کیونکہ وہی انسان لوگوں کے مسائل اور امراض کا حل پیش کرسکتا ہے جو خود اپنے مسائل کا حل کرچکا ہو اور دینی حقائق کے ساتھ اپنے امراض کا علاج کرچکا ہو۔انسانوں کی بہت بڑی تعداد آج بھی اسلام سے دور ہے کیونکہ وہ اس کی تعلیمات سے قطعی ناواقف ہے اور ان لوگوں تک یہ تعلیم پہنچ ہی نہیں پارہی ہے جبکہ اسلام فطرت کی نمائندگی کرتا ہے اور حضرت محمد ؐ نے اُسے واضح طور پر دنیا کے سامنے پیش کردیا ہے ۔یہ دین حضرت موسی ٰ ؑ و حضرت عیسیٰ ؑ کا موئد ہے جن کی تعلیمات کو یہودیوں اور عیسائیوں نے پامال کر ڈالا۔اسلام ہر اُس انسان کا تائید کرتا ہے جو اوہام و خرافات چھوڑ کر واضح ایمان اور صالح اعمال کے ذریعہ اللہ کی طرف گامزن ہونے کا فیصلہ کرے۔اسلام ایک جامع نظام ہے جو زندگی کے تمام پہلوئوں کا احاطہ کرتا ہے چاہے وہ مُلک و قوم سے متعلق ہوں یا حکومت سے ،اخلاق و عادات سے متعلق ہوں یا رحم وانصاف سے ،تہذیب و قانون سے متعلق ہوں یا علِم و سائنس سے ۔الغرض اسلام صحیح عقیدہ ،صحیح عبادت اور صحیح عمل کے ساتھ ساتھ نمائندگی کرتا ہے۔
انسانی تاریخ بتاتی ہے کہ زمین پر آدم کے آتے ہی حق و باطل کی معرکہ آرائی کا بھی آغاز ہوا ہے اور حق ہمیشہ سے باطل کی دشنام طرازیوں ،ستم ظریفیوں ،طعنوں اور تنقیدوں کا شکار رہا ہے۔آج سے چودہ سو سال پہلے یہودی اور عیسائی علماء حق کے بجائے حسد کی راہ میں آخری حد تک چلے گئے ،انہوں نے اپنے پیرو کاروں کو نئے دین اور اُس کے نبی ؑ کے خلاف چھوٹے اور مکروہ پروپیگنڈے کرکے خوب بھڑکایا، یہاں تک کہ خوفناک جنگوں تک بات جا پہنچی ۔اگر دل حسد اور خود پرستی سے پاک ہوتے تو دنیا کو ان جنگوں کی کیا ضرورت تھی۔آج بھی تمام اسلام دشمن طاقتیں بیدار ہیں اور اس دین ِ حق کے درپے ہیں ۔پورا بین الاقوامی میڈیا اسلام اور مسلمانوں کے خلاف برسر پیکار ہے۔ہزاروں عیسائی مشینریاں رات دن کروڑوں ڈالر صَرف کرکے مسلمانوں کے خلاف زہر افشانی کرنے میں ہمہ تن مشغول ہیں ۔ریڈیو اور ٹلی ویژن کے سہارے کبھی مسلمانوں کو بنیاد پرست جیسے اعزاز سے نوازا جارہا ہے تو کبھی دہشت گرد کا لقب دیا جارہا ہے ،ایسے لفظوں کا مطلب سمجھے بغیر مسلمانوں کے خلاف نفرت پھیلاکر جہاں ایک طرف اُن کا خون بہایا جارہا ہے وہیں دوسری طرف اللہ کی پسندیدہ دین کو نشانہ ٔ تنقید بنانے اور اُسے بدنام کرنے کا کوئی بھی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا جاتا ہے۔ بنیاد پرست اُس شخص کو کہتے ہیں جو سختی سے اپنے اصولوں پرکار بند رہے،بے شک دین کے معاملے میں جب تک ایک مسلمان اسلام کے بنیادی اصولوں پر شدت سے قائم نہیں رہتا تب تک وہ ایک صحیح مسلمان ہو ہی نہیں سکتا ہے۔اس لحاظ سے دشمنوں کی طرف سے بنیاد پرست جیسا لقب ملنے پر مسلمانوں کو فخر کرنا چاہئے نہ کہ ندامت یا کوئی شرم ۔رہا سوال ایک مسلمان کا دہشت گرد ہونے تو کا یہاں بھی اسلام سے ناواقف ہونے کے سبب غیر مسلم دھوکہ کھا جاتے ہیں ،دہشت گرد وہ ہے جو معاشرے یا معاشرے سے باہر دہشت پھیلاکر لوگوں کے دلوں میں ڈر اور خوف پیدا کرلے۔اسلام کہتا ہے کہ انسان کے ساتھ اگر ظلم ہوتا ہے اور وہ اُسے دور کرسکتا ہے تو اس پر صبر کرنا جرم اور اس پر رضا مند ی گناہ ہے،اب کیا وہ شخص دہشت گرد کہلائے گا جو اپنے ساتھ ہورہی حق تلفی اور اپنے اوپر ہورہے ظلم و ستم کو روکنے میں مصروف ہو یا وہ شخص دہشت گرد ہے جو زور و زبردستی اور طاقت کے بل بوتے پر کسی کے گھر میں گھُس کر اُس کے سیاہ و سفید کا مالک بن جانے پر بضد ہو ؟
مغربی میڈیا ،ریڈیو اور ٹیلی ویژن کے علاوہ آج کل ہزارہا اخبارات ،رسالے اور میگزین بھی اسلام اور مسلمانوں کے خلاف زہر اُگلنے میں پیچھے نہیں ہیں ۔ایک عام خیال ہے جو غیر مسلموں کے ذہنوں میں جونک کی طرح چِپک کے رہ گیا ہے کہ اسلام بزورشمشیر پھیلاہے حالانکہ صدیاں گزرجانے کے باوجود وہ اس کی ایک بھی مثال پیش نہیں کرسکتے ہیں ،اگر ایسا ہوتا تو روئے زمیں پر مسلمانوں کے سِوا کوئی اور قوم ہوتی ہی نہیں ۔دو سو سال تک ہندوستان پر حکومت کرنے کے باوجود جن مسلمانوں نے کبھی اس ملک کا نام بدلنے کی نہ سوچی وہ بھَلا تلوار کے ذریعے اپنے دین کو کیسے پھیلا سکتے کہ اُن کے لئے اللہ کا واضح حُکم ہے کہ دین میں کوئی زور ززبردستی نہیں ہے۔
بہر حال اسلام اور مسلمانوں کے خلاف آج کل بین الاقوامی میڈیا جس طرح کا کردار نبھا رہا ہے اس میں اگر چہ وہ معذور ہیں کہ وہ اس دین ِ حق اور اس کی تعلیمات میں بالکل کورے ہیں مگر اسلام اور مسلمانوں کے تئیں وہ اپنی ناپسندیدگی کا اظہار کرنے میں کچھ حق بجانب بھی ہیں کیونکہ آج کے مسلمان خود اسلامی تعلیمات کی راہ میں بُری طرح حائل ہیں۔آج اسلام کو بہت سے چلینج درپیش ہیں لیکن  بیرونی چیلنجوں سے کہیں زیادہ اندرونی چیلنج مہلک ثابت ہورہے ہیں ۔ہم مسلمان دنیا کے سامنے کیا پیش کررہے ہیں؟باہمی رحم و محبت صرف تقریروں کی چیزبن کر رہ گئی ہے ۔موروثی طور پر ہم مسلمان ہیں لیکن عمل و فکری اعتبار سے اسلام سے دور دور نظر آتے ہیں ۔ہم عالمی دعوت کے علمبردار ہیں لیکن اپنی حدوں سے آگے نگاہ دوڑا نے کی زحمت ہی نہیں کرتے ،نہ یہ جاننے کی کوشش کرتے ہیں کہ دنیا کی دیگر قومیں کسی طرح زندگی گذار رہی ہیں۔صدیوں سے ہمارے دشمن ماضی کی چھان بین کررہے ہیں اور ہمارے حال و مستقبل پر غور و فکر کررہے ہیں اور وہ ہماری ایک ایک چیز سے واقف ہیں اور ہم جہالت کے سمندر میں غوطے کھا رہے ہیں ،دنیا میں کیا کیا تبدیلیاں آرہی ہیںہمیں کچھ پتہ نہیں ،تمام اسلام دشمن قومیں بیدار ہیں ،اُن کے پاس زبردست فوجی طاقت ہے اور مسلمان خواب غفلت میں پڑے ہوئے آپسی تنازعات اور انتشار کے ذریعے اُن کے لئے مزید آسانیاں فراہم کررہے ہیں۔دنیاوی امور میں غفلت و ناکامی کا اس سے بڑا ثبوت اور کیا ہوسکتا ہے کہ آج یہ ملت دوائوں سے لے کر دفاعی آلات تک ایک ایک چیز میں دوسروں کے محتاج ہیں اور خود دینی امور میں ہماری بے حسی اپنی آخری حدوں کو چھُو رہی ہے ۔عبادات اور چند معاملات میں روائتی نقالی اور غیر اہم چیزوں پر ساری توجہ دینے کے علاوہ کچھ بھی ظاہر و نمایاں نہیں ہوتا ،مسلمانوں کی نئی نسلوں کو بس اسلام کے نام سے واقفیت تو ہوجاتی ہے لیکن اسلام کی روح اور حقیقت سے انہیں دور رکھا جارہا ہے۔امت اور اسلام کے درمیان خلیج وسیع ہوتی جارہی ہے ،اسلامی نظام ناپید ہے ،اسلامی معیشت کا کہیں بول بالا نظر نہیں آتا ،مسلم علاقے پسماندگی میں تیسری دنیا میں شمار کئے جاتے ہیں ۔ہم نے ایسا معاشرہ تعمیر کرنے کی کتنی کوشش کی ،جس میں عہد کی پاسداری ،امانت داری اور قول و عمل میں یکسانیت کا بول بالا ہو؟پھر کچھ عادتیں بالکل حُکمِ خداوندی کی مخالفت پر مبنی ہیں مثلاً شادیوں میں نمود و نمائش کے لئے اسراف ِ بے جا نے شادی کو دشوار بنادیا ہے۔پُرانے مذاہب اسی طرح افراط و تفریط کے سبب زوال کا شکار ہوئے تھے کہ کبھی وحی ِ الٰہی میں بھی اپنی خواہش کے مطابق حذف و اضافہ کیا گیا اور کبھی کبھی احکامات پر عمل ہی معطل کردیا گیا۔ مسلمانوں کی خوش نصیبی ہے کہ اُن کی کتاب خدا کے فضل و کرم سے محفوظ ہے اور یہ بھی خوش بختی کی بات ہے کہ اسلامی ارکان اور بنیادی چیزوں پر مکمل اتفاق بھی ہے ۔اب مسلمانوں کو اپنے عمل سے اپنے دین کو عام انسانی ،اخلاقی معیار سے بلند تر ثابت کرنے کی ہر ممکن کوش کرنی ہوگی ورنہ مسلمان اسلام پر بوجھ بنتے جارہے ہیں اور جب تک وہ قرآن و سُنت کے ساتھ انصاف نہیں کرتے اور صدیوں سے جاری اپنی جہالت اور فکری انتشار کو ختم نہیں کرتے اُنہیں زندہ رہنے کا حق بھی حاصل نہیں ہوسکتا ۔
رابطہ۔احمد نگر سرینگر،کشمیر
فون نمبر۔9697334305
 

تازہ ترین