تازہ ترین

ڈاکٹر جتند ر سنگھ نے جمو ں یونیورسٹی میںنیشنل سائنس ڈے پر کلیدی خطبہ پیش کیا

تاریخ    1 مارچ 2021 (34 : 12 AM)   


نیوز ڈیسک
جموں//مرکزی وزیر مملکت برائے ترقی و شمال مشرقی خطے ڈاکٹر جتندر سنگھ نے جموں یونیورسٹی کے جنرل زور آور سنگھ آڈیٹوریم کمپلیکس میں نیشنل سائنس ڈے کے موقعہ پر کلیدی خطبہ پیش کیا۔ اِس موقعہ پر مہمان خصوصی کی حیثیت سے اَپنے خیالا ت کا اظہار کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ اَب خلائی ٹیکنالوجی مختلف صورتوں میں ہر ہندوستانی گھر میں پہنچ چکی ہے اور اِس ٹیکنالوجی کو ہر جگہ چاہئے وہ سمارٹ سٹی منصوبے ہوں، زرعی ٹیکنالوجی ، ریموٹ سنسنگ ہو ، ریلوے ٹیکنالوجی ہواور آفاتِ سماوی سے نمٹنا ہو یہ ٹیکنالوجی ہرطر ف بروئے کار لائی جارہی ہے ۔ماہرین تعلیم ، علما ء اورطلبا سے خطاب کرتے ہوئے اُنہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی نگرانی میں خلائی ٹیکنالوجی میں ترقی دیکھنے کو آرہی ہے اور عنقریب بھارت گگن یان مشن کے ذریعے انسانوں کو خلا میں بھیجا جائے گا۔اُنہوں نے انہیں اہم سائنسی اداروں جیسے باباآٹامک ریسرچ سینٹر،وکرم سرابھائی سپیس سینٹر اور دیگر اہم سائنسی تنصیبات کا دورہ کرنے کے لئے کہا تاکہ وہ یہ جان سکیں انتھک محنت کے بغیر کچھ بھی حاصل نہیں کیا جاسکتا ہے۔پروگرام میں بوٹینی، سٹیٹسٹکس، بائیوٹیکنالوجی ، کیمسٹری ، کمپیوٹر سائنسز ، فزکس اور ریاضی کے ریسرچ سکالروںنے 2019-20ء کے دوران شائع ہونے والے بہترین مقالات کو بھی نوازا گیا۔اِس موقعہ پروائس چانسلر جموں یونیورسٹی پروفیسر منوج کے دھر نے اَپنی تفصیلی پرزنٹیشن میں یونیورسٹی کی کچھ بڑی کامیابیوں پر روشنی ڈالی جس میں آر یو ایس اے ۔ 1 کے تحت 20 کروڑ ، وزارت انسانی وسائل کے محکمہ سے 100 کروڑ ، آر یو ایس اے 2.0 کے تحت ملک کی دیگر نو یونیورسٹیوں کے ساتھ شامل ہے۔اُنہوں نے مزید کہا کہ  کہ یونیورسٹی ایک این اے اے سی اے پلس ہے اور یو جی سی نے اسے مکمل آٹو نامی کے ساتھ کیٹگری۔ 1 یونیورسٹی سے نوازا ہے۔وائس چانسلر نے کہا کہ بزنس سکول کو ممتاز این بی اے اور اے آئی سی ٹی ای کے ذریعہ اس کے فلیگ شپ ایم بی اے پروگرام کی منظوری دی گئی ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ اسکول آف بائیوٹیکنالوجی کو اے کا درجہ دیا گیا ہے۔ اس کی تشخیص محکمہ بائیوٹیکنالوجی حکومت ہند نے کی ہے اور یہ ملک کے 10 پہلے محکموں میں ہے جسے ڈی بی ٹی کے ذریعہ فنڈس کے لئے مزید منتخب کیا گیا ہے۔ ڈی ایس ٹی نے پورس پروگرام کے تحت یونیورسٹی کو پہچان لیا ، ہم اس وقت پی یو آر ایس ای کے فیز ۔II پروگرام کے تحت 16.75 کروڑ ہیں۔ پروفیسر دھر نے کہا کہ ہمارے پاس یو جی سی  ایس اے پی کے سپارنسر شدہ محکموں ، ڈی ایس ٹی (ایف آئی ایس ٹی) کے محکموں اور ایکسٹورل فنڈنگ والے بہت سے تحقیقی منصوبے ہیں