کرشنا ڈھابہ مالک کا بیٹا10روز بعد دم توڑ بیٹھا | جموں میںپرنم آنکھوں کے ساتھ آخری رسوم ادا

تاریخ    1 مارچ 2021 (34 : 12 AM)   
(عکاسی: میر عمران)

نیوز ڈیسک
جموں//سرینگر میں اقوام متحدہ فوجی مبصر آفس سونہ وار کے نزدیک10روز قبل کرشنا ڈھابہ فائرنگ واقعہ میں زخمی آکاش مہرہ ہسپتال میں چل بسا۔ لیفٹیننٹ گورنر نے اسکی ہلاکت پر گہرے رنج و غم کا اظہار کیا۔17فروری کو کرشنا ڈھابہ ملک کے بیٹے آکاش مہرہ پر نزدیک سے گولیاں چلائی گئیں جس کے نتیجے میں وہ شدید طورپر زخمی ہوا تھا۔ 10روز تک موت و حیات کی کشمکش میں مبتلا رہنے کے بعد آکاش مہرہ صدر اسپتال میں اتوار کی صبح دم توڑ بیٹھا۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ جنگجو کبھی اپنے عزائم میں کامیاب نہیں ہونگے۔ایک بیان میں منوج سنہا نے کہا کہ آکاش مہرہ کی ہلاکت سے افسوس ہوا اور غم زدہ خاندران سے دلی ہمدردی ہے۔انہوں نے کہا کہ اس گھناونے جرم میں ملوثین کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جائیگا۔اس کے جسد خاکی کو جموں منتقل کیا گیا اور متوفی نوجوان کی آخری رسومات کنبہ کے ممبران ، لواحقین اور مقامی لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے ادا کی۔جانی پور کے علاقے میں دکانیں سوگوار لواحقین کے ساتھ یکجہتی کے لئے بند رہیں۔میڈیا سے بات کرنے والے لواحقین اور پڑوسی ممالک نے اس پر تشویش کا اظہار کیا کہ انہیں خصوصی علاج معالجے کے لئے جموں و کشمیر کے باہر دہلی یا کسی اور اسپتال کیوں منتقل نہیں کیا گیا۔
 

تازہ ترین