کیا یہی ہماری منزلِ مقصود تھی؟

ندائے حق

تاریخ    25 جنوری 2021 (00 : 01 AM)   


اسد مرزا
آج آزادی کے 75برس بعد اور بھارت کے ایک عوامی جمہوریہ بننے کے 72برس بعد جوش کے احساس کو محسوس کرنے اور اپنے کارناموں کو مجتمع کرنے کے بجائے ہمیں اس سوال پر غور کرنے پر مجبور کردیا گیا ہے کہ آیا یہ وہی ہندوستان ہے جس کا خواب ہمارے مجاہدین آزادی، قائدین اور معمارانِ دستور نے دیکھا تھا؟ آج ہم ایک ایسے دوراہے پر کھڑے ہیں جہاں ہندوستانی شہریوں کی ایک بڑی تعداد اپنے قانونی موقف اور مستقبل کے تعلق سے الجھن میں مبتلا ہے اور ساتھ ہی ہندوستانی سماج کے سیکولر اور شمولیاتی کردار کے تعلق سے بھی تشویش مند ہے۔ لاکھوں ناخواندہ افراد، بے زمین لوگ، پسماندہ طبقات اور درج فہرست قبائل و طبقات سمیت ملک کی ایک بڑی اکثریت کو اس سوال پر غور کرنے پر مجبور کردیا گیا ہے کہ آیا ملک میں ان کی قانونی شناخت کیا ہے؟ حالانکہ وہ دستور کے اس دیباچہ کو پڑھتے ہیں: ’’ہم ہندوستان کے عوام …… سیکولر عوامی جمہوریہ ہیں اور اپنے تمام شہریوں کا تحفظ کرتے ہیں۔‘‘ حکومت وقت نے سارے ملک کو ایک ایسے شورہ ہنگامے میں ڈھکیل دیا ہے جہاں سے باہر آنا بہت مشکل ہوگا۔ اب ہر ایک کو ایک ہندوستانی شہری کی حیثیت سے اپنے وجود سے متعلق سوالات کا جواب دینا ہے۔ یہ ایک ایسا کٹھن اور جاں گسل کام ہے کہ اس کے لیے کئی برس درکار ہوں گے اور آبادی کا ایک بڑا فیصد مکمل طور پر ایک لاحاصل اور غیرمطلوب کام میں مصروف ہوجائے گا۔ حکومت نے پارلیمنٹ میں اپنی بھرپور اکثریت سے فائدہ اٹھا کر عوام کو ایک ایسے کام میں لگادیا ہے کہ جس کے بارے میں خود اسے یقین نہیں ہے کہ کس طرح یہ پایہ تکمیل کو پہنچے گا۔ 
ملک کے سب سے بڑے اقلیتی طبقہ کو گزشتہ 18مہینوں میں اتنے چیلنجوں میں گھیر دیا گیا ہے کہ وہ الجھن اور تذبذب کا شکار ہے کہ وہ کیا کرے۔مزیدبراں وہ اس ہندوستان کا حصہ ہونے کی حقیقت سے ہم آہنگ ہونے کے لیے مشکل محسوس کررہے ہیں جہاں ان طاقتوں کی حکومت ہے جو ہمیشہ اس کے خلاف رہی ہیں۔ لیکن اہم اور خاموش سوال یہ ہے کہ یہ کیسے ممکن ہوگیا اور کس نے اس کی اجازت دی؟ ہمارے سامنے اس سے بھی زیادہ حساس اور خلجان میں ڈالنے والا سوال یہ ہے کہ آیا ہندوستان ابھی بھی حقیقی معنوں میں ایک سیکولر عوامی جمہوریہ ہے؟
ہندوستانی شہریوں کے درمیان موجود باہمی سماجی تعلقات سے کوئی بھی انکار نہیں کرسکتا۔ وہ ضرورت اور مشکل کے وقت ایک دوسرے کا خیال رکھتے ہیں اور اپنی تکلیف آپس میں بانٹ لیتے ہیں۔ صدیوں سے پرامن بقائے باہمی کے ساتھ رہتے آئے ہیں۔ یہ باہمی میل جول استعماری طاقتوں کی جانب سے دو نمایاں مذاہب کے درمیان تفریق ڈالنے سے پہلے تک قائم و دائم رہا تھا۔ اگرچہ یہ باور کیا گیا تھا کہ آزاد ہندوستان بلالحاظ ذات و برادری کے اپنے تمام شہریوں کو پھلنے پھولنے کا یکساں مواقع  فراہم کرے گا لیکن حقیقت بڑی حد تک مختلف ہے۔ ینگ انڈیا کے لیے لکھتے ہوئے گاندھی نے سوراج کے حق میں آواز اٹھائی تھی۔ ینگ انڈیا مورخہ16اپریل1931میں انھوں نے سوراج کی تشریح تمام عوام کی حکومت اور انصاف کی حکمرانی کے طور پر کی تھی۔
اقلیتوں نے ہمیشہ اسی زمین پر جدوجہد کی ہے جس زمین پر ملک کے اکثریت طبقے نے کی ہے اور ان کی قوم پرستی پر متعدد طعنوں کے باوجود انھوںنے اپنی مشقت جاری رکھی اور کئی ممتاز فرزندان اور دختران پیدا کیے جنھوں نے راکٹس سائنس سے لے کر تعلیم، صحت، سماجی خدمات اور تجارت تک ہر شعبے میں خود کو منوایا ہے۔ تاہم سیکولر ہونے کا سوالیہ نشان ہمیشہ ہر اقلیتی شہری کی گردن پر لٹکتا رہا ہے۔ درحقیقت اقلیتی طبقہ سے  ہمیشہ ان کے اعتبار کو ثابت کرنے کا سوال کیا جاتا رہا ہے اور بعضوں کو پاکستان چلے جانے کے لیے کہا گیا ہے۔
آج ملک میں جو کچھ ہورہا ہے اس پر کسی کو زیادہ حیرت زدہ نہیں ہونا چاہیے کیونکہ یہ اپنی ان داخلی پیچیدگیوں کے سبب ہورہا ہے ، جب نام نہاد سیکولر پارٹیاں اقتدار میں تھیں تو انھوں نے کبھی بھی سخت ہندوتوا عناصر پر لگام کسنے کی کوشش نہیں کی بلکہ حقیقت یہ ہے کہ انھوں نے نرمی برتی اور ہر مذہب کے لیے مساوی حقوق کی بات کرتے ہوئے شدت پسند عناصر کو پروان چڑھایا، ساتھ ہی ان کے دلوں کے اندر یہ خواہش بھی پنپتی رہی کہ وہ ایک دن ہندوستان کو ہندو راشٹر بنانے میں کامیاب ہوجائیں گے۔ ہندوستانی مسلمان آزادی کے بعد سے اب تک ایک طویل جاں گسل راستے پر چلتے رہے۔ تقسیم کے بعد پہلے 20برسوں کی نسل اس آگ میں جھلستے ہوئے اپنے نقصانات کی پابجائی میں مصروف رہی اور بحیثیت ایک قوم کو درپیش  مختلف چیلنجوں کا حل تلاش کرتے ہوئے ایک نئی جمہوریت میں اپنی بقاء کا سامان کرتے رہے۔ اس سفر کے دوران مسلم ملت کو اپنے کئی عظیم سپوتوں کو گنوانا پڑا جنھوںنے جدوجہد آزادی کے دوران ان کی رہنمائی اور نمائندگی کی تھی۔ اس کے بعد بدقسمتی سے قوم کی قیادت ان درمیانی سطح کے قائدین کے ہاتھ لگی جو صرف  اپنی فلاح و بہبود کے لیے گامزن تھے۔
اس دور میں مسلم برادری کو تعلیمی پسماندگی کے ساتھ ساتھ معاشی انحطاط کا بھی سامنا کرنا پڑا تاہم 70کے دہے میں مشرقِ وسطیٰ میں روزگار کے باعث ان کے معاشی حالات میں کسی قدر سدھار آیا لیکن دوسری جانب وقتاً فوقتاً ملک کے مختلف شہروں میں بار بار فسادات کرواکر ان کی معاشی کمر توڑنے کی کوششیں بھی بدستور جاری رہیں،غور کرنے کی بات یہ ہے کہ  زیادہ تر فسادات اس وقت ہوئے جب نام نہاد سیکولر پارٹیاں ریاست اور مرکز دونوں جگہ پر برسراقتدار تھیں۔ 70کے دہے کے بعد سے ملت نے اپنے معاشی فائدوں کو مجتمع کرکے تعلیم و سماجی خوشحالی کے راستے پر اپنے سفر کو آگے بڑھایا۔ 90کے دہے میں ملک کی معیشت میں آنے والی مثبت تبدیلیاں بھی ملت کی ترقی میں مزید معاون ثابت ہوئی اور ملت کے نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد نے ٹیکنالوجی بالخصوص آئی ٹی کے مختلف شعبوں  میں ملٹی نیشنل کمپنیوں (ایم این سیز) میں ملازمتیں حاصل کرکے اپنا اور اپنی قوم کا نام آگے بڑھایا اور اپنی پیشہ وارانہ صلاحیتوں سے کامیابی کے نئے راستے ہموار کیے۔ 
اس معاشی آزادی نے اور پیشہ وارانہ کامیابیوں نے ہماری موجودہ نسل کو اپنا مذہبی ، سیاسی اور سماجی تشخص برقرار رکھنے میں ایک بڑا کردار ادا کیا ہے۔ یہ وہ نسل ہے جو تقسیم کے بوجھ کے زیر اثر نہیں ہے اور جو مساوی طور پر اپنے دشمنوں سے ٹکر لینے کے لیے سماجی اور علمی طور پر بااختیار ہے۔ یہی وہ چیز ہے جس نے ہندوتوا فورسس کو مایوس کیا ہے اور وہ اس نسل سے ڈرے ہوئے ہیں جسے اپنے تشخص یا اپنے مذہب کو درپیش چیلنج کا سامنا کرنے میں کوئی جھجھک نہیں ہے۔ ساتھ ہی موجودہ نسل وہ نسل ہے جو اپنی ترقی اور مذہبی تشخص کے درمیان ایک توازن قائم رکھنے کے قابل بھی ہے۔ 
موجودہ تناظر میں ہمارے سیکولر اور جمہوری رہنماؤ ں کی یہ ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ ملک میں نافذ کی جانے والی نئی نئی پالیسیوں کے تعلق سے پارلیمنٹ اور دیگر فورمس میں سوال اٹھائیں ساتھ ہی ساتھ ایک ایسی سیاست کو آگے بڑھانے کی جدوجہد کریں جس کے ذریعے ہم اپنے ملک کو اس کے معمارِ وطن کی خواہشات کے مطابق ایک بہتر ملک بنانے میں کامیاب ہوں، جہاں سبھی قومیں مل جل کر ساتھ رہ سکیں اور ملک کی ترقی و بہبود میں یکساں کردار ادا کرسکیں ساتھ ہی موجودہ دور میں قوم کے مذہبی رہنماؤں اور اکابرین کی بھی یہ ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ قوم کو صحیح سمت میں لے جانے کی کاوشیں اور تحریکات عملی طور پر شروع کریں۔
(مضمون نگارسینئر سیاسی تجزیہ نگار ہیں ۔ ماضی میں وہ بی بی سی اردو سروس اور خلیج ٹائمز ،دبئی سے بھی وابستہ رہ چکے ہیں)
ای میل۔asad.mirza.nd@gmail.com
 

تازہ ترین