تازہ ترین

جوبائیڈن انتظامیہ سے مشرق وسطیٰ کی پالیسیاں تبدیل کرنے کی امید: سربراہ عرب لیگ

تاریخ    20 جنوری 2021 (00 : 01 AM)   


یو این آئی
قاہرہ//22رکنی تنطیم پر مشتمل عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل احمد ابوالغیط نے اس اُمید کااظہار کیا ہے کہ نومنتخب امریکی صدر جوبائیڈن انتظامیہ موجودہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیوں میں تبدیلی لائے گی اور فلسطینیوں کی آزادی کے حصول کے لیے علاقائی اور بین الاقوامی جماعتوں کے تعاون سے ایک سیاسی عمل کا آغاز کرے گی۔ایک غیر ملکی خبررساں ایجنسی کے مطابق احمد ابوالغیط نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو بتایا کہ کئی دہائیوں سے جاری اسرائیل اور فلسطین تنازع کے دو ریاستی حل کو 'مرکزی ثالث (امریکا) نے دبا دیا ہے'۔انہوں نے کہا کہ 'اس سے اسرائیلی حکومت کو آباد کاری کی سرگرمیاں تیز کرنے اور مقبوضہ اراضی پر قبضہ کرنے جیسے خطرناک اور تباہ کن اقدام اٹھانے کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے'۔انہوںنے اسرائیل-فلسطین تنازع کے وسیع تر پہلوؤں اور مشرق وسطیٰ کے تنازع پر بریفنگ دی۔انہوں نے کہاکہ 'چند علاقائی قوتیں بین الاقوامی تجارت کے لیے انتہائی ضروری سمندری راستوں کی سلامتی پر منفی اثر ڈالتے ہوئے عرب خطے کے امور میں مداخلت کر رہی ہیں'۔ابوالغیط نے شام میں 10 سال خانہ جنگی، یمن کی جنگ ساتویں سال میں داخل ہونے اور 'لیبیا میں محصور ڈویڑنز' کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ کورونا وائرس اور جاری تنازع اور بحرانوں نے 'ایک خطرناک صورتحال پیدا کی ہے جس کی وجہ سے خطے کے عوام کو بھاری نقصان پہنچا ہے'۔ انہوں نے یہ بات امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے دفتر چھوڑنے سے قبل آخری لمحات میں منظوریوں کے تحت اسرائیلی حکام کی جانب سے مغربی کنارے کی بستیوں میں 800 کے قریب مکانات تعمیر کرنے کے منصوبے کو آگے بڑھانے کے ایک روز بعد بات کی۔ان کا کہنا تھا کہ آبادکاری میں بڑھتی آبادی تقریبا 5 لاکھ لوگوں تک پہنچ چکی ہے جس سے ان کی آزادی کے خواب کو حاصل کرنا مشکل سے مشکل تر ہوتا جارہا ہے۔ابوالغیط نے کہا کہ دو ریاستی حل کی توثیق کے لیے آنے والے مہینوں میں تمام فریقین کو 'اہم کوششیں' کرنے کی ضرورت ہے۔