تازہ ترین

اعلان یکطرفہ، ٹریفک دوطرفہ

شاہراہ پر 5گھنٹوں تک بدترین ٹریفک جام، 2 روز میں 14ہزار گاڑیاں پار

تاریخ    19 جنوری 2021 (00 : 01 AM)   


محمد تسکین
بانہال // جموں سرینگر شاہراہ پر پیر دوسرے روز بھی وادی سے جموں کی طرف ٹریفک کو یکطرفہ طور پر چلنے کی اجازت دی گئی۔6روز بعد جب اتوار کو بیلی برج پر گاڑیوں کو چلنے کی اجازت دی گئی تھی تب بھی سرینگر سے ہی گاڑیاں چھوڑیں گئیں۔موسم ٹھیک رہنے کی صورت میں آج جموں سے سرینگر کی طرف گاڑیاں چلیں گی۔ کیلا موڑ بیلی برج پر یکطرفہ طور پر ایک ایک کرکے گاڑیوں کو چھوڑنے کے عمل کی وجہ سے کیلا موڑ اور اور جواہر ٹنل کے آر پار ٹریفک جام رہا۔ ٹریفک جام کی وجہ سے سرینگر سے پیر کی صبح نو بجے نکلے مسافروں کو سہ پہر تک قاضی گنڈ اور ٹنل کے درمیان ہی روکا گیا اور جام میں نرمی پانے کے بعدہی مسافر گاڑیوں کوجانے کی اجازت دی گئی۔ مسافروں نے بتایا کہ یکطرفہ ٹریفک کے اعلان کے باوجود مخالف سمت سے ٹریفک چھوڑا گیا اور انہیں5 گھنٹوں تک ٹنل پہنچنے سے پہلے ہی زگ اور اپر منڈا کے آس پاس روک دیا گیا۔ ٹریفک پولیس ذرائع نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اتوار شام سے ہی وادی کشمیر سے ٹرکوں کو جموں کی طرف چھوڑ دیا گیا تھا اور کیلا موڑ بیلی پل پر ایک ہی گاڑی کو نکلنے کی گنجائش کی وجہ سے گاڑیوں کی رفتار سست رہی۔ انہوں نے کہا کہ پیر کو بانہال تک بھاری ٹریفک جمع ہونے کے بعد دوپہر بعد سے جواہر ٹنل پار بھی ٹریفک روک دیا گیاجسے بعد میں وقفے وقفے سے بحال کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ سینکڑوں کی تعداد میں مال اور مسافر گاڑیوں نے جموں کا سفر کیا اور پیر شام تک بھاری ٹریفک سست رفتاری کے ساتھ بانہال رام بن سیکٹر کو پار کررہا تھا۔قاضی گنڈ ٹریفک پولیس نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ یکطرفہ ٹریفک کی صورت میں قاضی گنڈ سے کبھی بھی گاڑیاں نہیں چھوڑی جاتی لیکن ادہمپور سے ایسا کیا جاتا ہے جس کی وجہ سے شاہراہ پر ٹریفک جام ہوجاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اتوار سہ پہر سے  پیر کی رات دیر گئے تک قاضی گنڈ سے قریب 4000چھوٹی مسافر گاڑیاں جموں روانہ ہوئیں جبکہ اس دوران قریب 10ہزار بڑی گاڑیاں بھی ٹنل کے پار کی گئیں۔
 

تازہ ترین