تازہ ترین

کسانوں کی تحریک پیر سے تیز ہوگی | بھوک ہڑتال بھی کریں گے

تاریخ    14 دسمبر 2020 (00 : 12 AM)   


یو این آئی
نئی دہلی// زرعی اصلاحاتی قوانین کے خلاف پیر کے روز کسان تنظیمیں تحریک تیز کریں گی اور حکومت پر دباؤ میں اضافہ کرنے کے لیے ہڑتال کریں گے ۔ کسان رہنما صبح آٹھ بجے سے شام پانچ بجے تک بھوک ہڑتال کریں گے ۔ یہ ہڑتال دارالحکومت کے غازی پور، ٹیکری، سنگھو بارڈر اور کچھ دیگر مقامات پر کیا جائے گا۔ کسان تنظیم تین زرعی اصلاحاتی قوانین کو رد کرنے پر اڑے ہیں۔ ہفتے کے روز کسان تنظیموں نے آج تحریک تیز کر دی جبکہ ہریانہ کے نائب وزیراعلیٰ دشینت چوٹالا نے کئی مرکزی وزراء سے ملاقات کرکے بات چیت کا دباؤ بڑھا دیا۔ کسان تینظیموں نے ملک میں کئی مقامات پر ٹول پلازہ پر مظاہرہ کرکے وصولی میں م۔ کسانوں نے کئی جتھے الگ۔الگ ریاستوں سے دہلی کو روانہ ہو گئے ۔ چوٹالا نے وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر اور اشیائے خوردنی اور سپلائی کے وزیر پیوش گویل سے ملاقات کے بعد کہا کہ حکومت کسان تنظیموں کے ساتھ 48گھنٹے میں اگلے دور کی بات چیت شروع کرے گی۔ حکومت نے کسان تنظیموں کو زرعی اصلاحاتی قوانین میں ترمیم کی تجویز دی تھی جو خارج کر دیا گئی تھی اور تحریک تیز کرنے کی دھمکی دی گئی تھی۔ تومر نے کسانوں سے تحریک ختم کرکے بات چیت سے مسائل حل کرنے کی اپیل کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ انھیں یقین ہے کہ بات چیت سے مسئلے کا حل نکلے گا۔ حکومت کا دروازہ کسانوں سے بات چیت کے لیے کھلا ہے ۔ کسان تنظیم گذشتہ 18 دن سے قومی دار الحکومت کی سرحد پر دھرنا دے رہے ہیں اور تحریک چلا رہے ہیں۔ حکومت نے دہلی کی سرحد پر سکیورٹی انتظام سخت کر دی ہے ۔ سرحد پر بڑی تعداد میں سکیورٹی اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے ۔ یو این آئی