تازہ ترین

وبائی امراض کے مضر اثرات کا مقابلہ کرنے کیلئے برداشت اورنمٹائو کی حامل حکمت عملی مددگار

’کوویڈ 19 اور ذہنی صحت‘کے موضوع پرمنعقدہ ویبنار میںماہرین کااظہار خیال

تاریخ    29 نومبر 2020 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//کشمیریونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر طلعت احمد نے ماہرین تعلیم پر زور دیا کہ وہ وبائی مرض کورونا وائرس کے نفسیاتی اثرات سے نمٹنے کے لئے اپنے طلبا کو ہر ممکن تعاون فراہم کریں۔’کوویڈ 19 اور ذہنی صحت‘کے موضوع پر ویبنار سریز میںبطور مہمان خصوصی شرکت کرتے ہوئے پروفیسر طلعت نے کہا کہ کہ اساتذہ کے لئے یہ ضروری تھا کہ وہ اس وبا کے ناجائز اثرات سے نمٹنے کے لئے طلباء برادری کو اپنی مکمل حمایت فراہم کریںتاکہ اس  وبائی مرض کا ان کی ذہنی صحت پراثر نہ پڑے ۔ویبینار سیریز کا انعقاد یونیورسٹی کے یو جی سی(ہیومن ریسورس ڈیولپمنٹسنٹر) نے گورنمنٹ ڈگری کالج پانپور اورسنٹرل یونیورسٹی کے بائیوٹیکنالوجی شعبہ کے تعاون سے کیا ہے۔افتتاحی سیشن کی صدارت کرتے ہوئے پروفیسر طلعت نے کہا " صدیوں پرانے طریقوں اور انمول اوزار کا احترام کرنے کی ضرورت ہے جو ملک کی ثقافت میں بنے ہوئے ہیں اور نوجوان طلباء  اس خلل کے درمیان پریشانی اور تناؤ سے نمٹنے کے لئے ان کا استعمال کرسکتے ہیں"۔
انہوں نے طلباء پر زور دیا کہ وہ مسلسل ورزش کریں ، مناسب آرام کریں اور اپنے دوستوں اور رشتہ داروں کے ساتھ آزادانہ گفتگو کریں۔ڈائریکٹر یو جی سی(ایچ آر ڈی سی) پروفیسر شبیر احمد بٹ نے مشکل حالات میں قیادت کے کردار پر زور دیا۔انہوں نے کہا کہ کوویڈ۔19 نے پوری دنیا میں تباہی مچا دی ہے اور وبائی مرض سے لوگوں کی ذہنی صحت پر تباہ کن اثرات مرتب ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس تناظر میں اس قسم کے ویبنارایسے افراد کو مشکل حالات میں ہمت اور معنی تلاش کرنے اور مصیبتوں کو عبور کرنے کی صلاحیت کو بڑھانے اور مضبوطی سے نمٹنے میں مدد کرنے کے لئے اہم ہیں۔گورئمنٹ میڈیکل کالج سرینگر کی پرنسپل اور ڈین ڈاکٹر ثامیہ رشید جوکہ ویبنار میں مہمان ذی وقار کی حیثیت سے شریک ہوئیں ،نے کوویڈ 19 کے مضر اثرات سے نمٹنے کے لئے درکار اقدامات کا ایک تفصیلی جائزہ پیش کیا۔انہوں کہا  "بزرگ افراد ، معذور مریضوں ، پسماندہطبقوں اور دور دراز علاقوں میں رہنے والے لوگوں کی ذہنی صحت سے متعلق امداد کی ضروریات کوپورا کرنے کی ضرورت ہے۔"
جی ایم سی سرینگر کے شعبہ نفسیات کے پروفیسر ڈاکٹر ارشد حسین نے ویبنار سیریز کا پہلا لیکچر دیتے ہوئے کہا کہ ہمیں اس خوف سے اتنا مغلوب نہیں ہونا چاہئے کہ ہم غیر معقول حرکتیں کرنا شروع کردیں بلکہ وبائی بیماری کے مضر اثرات کا مقابلہ کریں۔ڈاکٹر ارشد نے کالجوں اور یونیورسٹیوں میں کام کرنے والے اساتذہ تک پہنچنے کے لئے اپنی مدد کی یقین دہانی کروائی تاکہ وہ اس طرح کے مقابلہ کی حکمت عملی کو فروغ دینے میں تربیت دیں ۔اس موقعہ پر گورئمنٹ ڈگری کالج پانپور کی پرنسپل داکٹر سیما ناز ،سنٹرل یونیورسٹی  بائیوٹیکنالوجی شعبہ کے ڈاکٹر عابد حمید نے  ویبنار کے موضوع پر اظہار خیال کیا۔