کنزل ون گریز کاسرپنچ بھاجپا سے مستعفی

تاریخ    1 نومبر 2020 (00 : 01 AM)   


عازم جان
سرینگر// گریز میں ایک سرپنچ نے بھارتیہ جنتا پارٹی سے مستعفی ہونے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ آج سے اس کا کسی بھی سیاسی جماعت کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہوگا ۔ شمالی کشمیر کے بانڈی پورہ ضلع کے گریز  سب ڈویژن کے ہلہ کنزل ون نامی علاقے سے تعلق رکھنے والا ایک سرپنچ غلام محی   الدین لون ولد محمد حسین لون ساکن اِز مرگ کنزل ون گریز نے بھارتیہ جنتا پارٹی سے استعفیٰ دیا ہے ۔ مذکورہ سرپنچ نے کہاکہ وہ بی جے پی سے کنارہ کشی کا اعلان اس لئے کررہا ہے کیوں کہ بی جے پی ان کے حلقہ میں تعمیر و ترقی کے کام انجام دینے میں ناکام ہوئی ہے۔ اس کے علاوہ اُس نے کہا ہے کہ وہ کسی اور سیاسی جماعت سے بھی وابستگی نہیں رکھنا چاہتے ہیں، تاہم سرپنچ کے عہدے پر وہ برابر رہیں گے جس پر انہوں نے بطور آزاد امیدوار کامیابی حاصل کی تھی ۔
 
 

بھاجپا کارکنوں کی ہلاکت سیکورٹی چوک کا نتیجہ :الطاف ٹھاکر

یواین آئی
 
سرینگر// بھارتیہ جنتا پارٹی کے جموں و کشمیر یونٹ کے ترجمان الطاف ٹھاکر نے کہا ہے کہ کولگام میں بی جے پی کے تین کارکنوں کی ہلاکت سیکورٹی میں چوک کا نتیجہ ہے۔انہوں نے کہا کہ مہلوکین کو سیکورٹی فراہم کرنے کے لئے متعلقین کے ساتھ رابطہ کیا گیا تھا لیکن اس کو غیر ذمہ داری سے ٹالا گیا۔موصوف نے ان باتوں کا اظہار ہفتے کے روز یہاں پارٹی کے دفتر میں مہلوک کارکنوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کی ایک تقریب کے حاشیے پر نامہ نگاروں کے ساتھ بات کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا،’’جہاں تک میری جانکاری کا تعلق ہے تو یہ سیکورٹی لیپس کا معاملہ ہے، متعلقہ ایس پی کی لاپرواہی سے ہمارے تین لوگ ہلاک ہوئے۔ پہلے ہی ان کو سیکورٹی فراہم کرنے کے لئے اپروچ کیا گیا تھا لیکن متعلقہ ایس پی نے غیر ذمہ داری سے کہا تھا کہ جب کچھ ہوگا تب دیکھا جائے گا‘‘۔ ٹھاکر نے کہا کہ جنگجو کشمیر میں امن نہیں چاہتے ہیں اس لئے ہمارے لوگوں کو نشانہ بناتے ہیں اور ہم ضلع ترقیاتی کونسل انتخابات کے لئے بھی تیاریاں کر رہے ہیں لہٰذا یہ لوگ ان کو بھی تہس نہس کرنا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا،’’پانچ لاکھ تیس ہزار لوگوں کو سیکورٹی فراہم کرنا نا ممکن ہے لیکن ہم صرف عہدیداروں اور جن کو خطرات لاحق ہیں ان کو سیکورٹی فراہم کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں‘‘۔قابل ذکر ہے ضلع کولگام کے قاضی گنڈ کے یور خوشی پورہ علاقے میں جمعرات کی شام قریب ساڑھے آٹھ بجے مشتبہ جنگجوؤں نے بی جے پی کے تین کارکنوں کو ہلاک کر دیا تھا۔ 
 

 

تازہ ترین