تازہ ترین

بہار کے ووٹروں سے200 سے زیادہ قلمکاروں کی اپیل

تاریخ    28 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


نئی دہلی// بہار اسمبلی انتخابات کے پہلے مرحلے کے لئے ووٹنگ شروع ہونے کے موقع پر ادبی تنظیموں سے وابستہ دو سو سے زیادہ ادیبوں اور قلمکاروں نے ریاست کے رائے دہندگان سے اپیل کی ہے کہ ریاست میں جمہوریت اور آئین کے آگے ذات پات، نسل پرستی، بدعنوانی اور غنڈہ گردی سے خطرناک تفرقہ پرست طاقتیں سرگرم ہیں جن کو منہ توڑ جواب دینے کی ضرورت ہے۔ان ادیبوں نے اپنے دستخط سے جاری کیے گئے مشترکہ بیان میں کہا کہ "بہار کی قانون ساز اسمبلی کے لئے ووٹنگ 28 اکتوبر سے ہونے والی ہے۔ الیکشن جمہوریت کا جشن ہے۔ جمہوریت اور آئین کو ذات پات، نسل، بدعنوانی اور غنڈہ راج سے ایک خوفناک خطرہ درپیش ہے۔ سماج کوبانٹنے والی طاقتیں معاشرے میں سرگرم ہیں۔ ایسی خطرناک طاقتوں کو منہ توڑ جواب دینے کی ضرورت ہے"۔انہوں نے کہا کہ جمہوریت کی طاقت صرف عوام پر منحصر ہے۔ اس طاقت سے ڈر کر ایسی طاقتیں لوگوں کو ذات پات، نسل پرستی اور علاقائی تعصب کا خوف دلا کر اور مذہبی خوشامدی کے لبھاؤنے کے ذریعہ ایک طویل عرصے سے عوام کو دھوکہ دینے کی گندی سیاست اور کھیل کررہی ہیں۔ اور یہ کام دکھاوے کی سیکولرازم کے نام پر کیا گیا ہے۔ جمہوریت کسی ایک خاندان یا برادری کی ملکیت نہیں ہے۔ یہ تمام عوام کی ہمہ جہت ترقی کا عمل ہے۔ یہ غریبوں اور کمزوروں کی سہارا دینے کا نام ہے، انہیں نارائن شمار کرتے ہوئے بااختیار بنانے کا نام ہے۔ لیکن اس نظام میں بدعنوانی اور جرائم رکاوٹ بنتے ہیں۔ بہار میں اس کی لمبی تاریخ ہے۔ اس کا خصوصی خیال رکھنا ہوگا۔ادیبوں نے کہاکہ "ہم سب قلمکار بہار کے ووٹروں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ ان طاقتوں کے حق میں بڑی تعداد میں ووٹ دیں جو ہم آہنگی اور خوشحال بہار کی تعمیر نو کے عمل میں دلچسپی لیں اور بہترحکمرانی اور ترقیاتی سرگرمیوں کو تیز تر بنائیں۔ اس انتخاب میں باشعور شہری کی حیثیت سے اپنا تعاون یقینی بنائیں"۔
 

تازہ ترین