سوپور میںبغیر اسلحہ2مقامی جنگجوئوں کی خود سپردگی

ہتھیار بند نوجوان واپس لوٹ آئیں: پولیس/فوج

تاریخ    23 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


غلام محمد
سوپور//تجر شریف سوپور میں جنگجو مخالف آپریشن کے دوران دو نوجوانوں نے والدین کی موجودگی میں خود سپردگی کی۔ شالہ پورہ تجر شریف سوپور میں جمعرات کو پولیس 22آر آر اور سی آر پی ایف نے جنگجو مخالف آپریشن عمل میں لایا ۔پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ علاقے میںکچھ جنگجو موجود ہیں ،جس کے بعد محاصرہ کر کے تلاشی کارروائی عمل میں لائی گئی ۔گولیوں کا تبادلہ ہونے سے قبل فورسز کو دو مقامی جنگجوئوں کی موجودگی کا علم ہوا، جس کے فوراً بعد انکے والدین کو  یہاں لایا گیا اور دونوں نوجوانوں کو خود سپردگی کرنے کیلئے کہا گیا۔ والدین کے زبردست اصرار اور پولیس و فورسز کی جانب سے یقین دہانی کے بعد دونوںجنگجو نوجوانوںنے سیکورٹی فورسز کے سامنے خود سپردگی کی ۔یہ اپنی نوعیت کاایسا دوسرا واقعہ ہے جس دوران دو جنگجوئوں نے فورسز کے سامنے خود سپردگی کی ۔اس سے قبل چاڈور ہ بڈگام میں ایک جنگجو نے ہتھیار ڈال کر فورسز کے سامنے خود سپردگی کی تھی ۔خود سپردگی کرنے والے مقامی جنگجو نوجوانوں کے بارے میں بتایا جاتا کہ وہ حال ہی میں جنگجویت کی راہ پر چل پڑے تھے ۔پولیس نے دونوں کی شناخت معراج الدین وار ولد فاروق احمد اور عابداحمدولد مشتاق احمد وار ساکنان واڈورہ سوپورکے بطور کی۔پولیس نے معاملے کی نسبت ایف آئی آر زیر نمبر74/2020زیر دفعہ7/251آئی ۔اے ایکٹ کے درج کیا ہے ۔خود سپردگی کے دوران دونوں نوجوانوں کی مائوں نے اپنے لخت جگروں کوگلے لگایا اور فورسز کا شکریہ ادا کیا ۔انسپکٹر جنرل آف پولیس کشمیر زون ،وجے کمار نے بتایا کہ مقامی جنگجوئوں کو خود سپردگی کا موقع دیا گیا اور دونوں کے والدین کو انکائونٹر کے مقام پر لایا گیا ،تاکہ دونوں کی جانیں بچ سکیں۔وجے کمار نے ایک بارپھر مقامی نوجوانوں کو تشدد کا راستہ ترک کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ جنگجویت کے راستے پر چلنے والے نوجوانوں کو معمولی نوعیت کی قانونی چارہ جوئی کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے ،لیکن اُنکی زندگیاں بچ جائیں گی ۔اس دوران سوپور میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے جی او سی کلو فورس میجر جنرل ایچ ایس ساہی نے بتایا کہ دونوں نوجوان جب سے جنگجوئوں کی صف میں شامل ہوئے اور البدر نامی عسکری تنظیم میں شامل ہوئے تھے ،تب سے لیکر آج تک اُنہیں ’’ٹریک ‘‘ کرنے کی کوششیں جاری تھیں ۔انہوں نے کہا کہ دونوں جنگجو نوجوان گرینیڈ دھماکوں اور دیگر جنگجویانہ سرگرمیوں میں ملوث تھے ۔انہوں نے کہا کہ شمالی کشمیر میں 4نوجوان لاپتہ تھے اور چاروں نے جنگجویت کی راہ اختیار کی تھی ۔اس سے قبل دو نوجوانوں کو سرینگر میں حراست میں لیا گیا ۔انہوں نے کہا ’دونوں جنگجو نوجوانوں کے پاس ہتھیار برآمد نہیں ہوئے ،اسکی تحقیقات کی جارہی ہے ،تاہم دونوں مختلف جنگجویانہ کارروائیوں میں ملوث تھے ‘۔
 
 

پلوامہ کی تین بستیوںکاآپریشن

شاہد ٹاک
 
سرینگر // پلوامہ قصبے کے تین مقامات کا فورسز نے کریک ڈائون کر کے تلاشیاں لیں۔ پلوامہ کے ڈلی پورہ نیو کالونی  اور چاٹہ پورہ کو دوبجے 55آر آر، پولیس ٹاسک فورس اور سی آر پی ایف 182و183 بٹالین نے محاصرے میں لیکر تلاشی کارروائی شروع کی۔پولیس کو اطلاع ملی تھی کہ ان علاقوں میں جنگجو چھپے بیٹھے ہیں۔تاہم دیر گئے تک جب فوج کو جنگجووں کے ساتھ کوئی آمنا سامنانہ ہوا تو شام دیر گئے محاصرہ ختم کرلیا گیا۔ بعد دوپہر قصبہ کی ایک اور بستی واگم کو بھی محاصرے میں لیکر تلاشیاں لی گئیں۔
 

 

تازہ ترین