تازہ ترین

کورونا وائرس| نئے معاملات589،اموات 9

مہلوکین کی کل تعداد1397،مجموعی تعداد 88958تک پہنچ گئی

تاریخ    21 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


پرویز احمد
سرینگر //جموں و کشمیر میں کورونا وائرس سے مزید 9افراد فوت ہوگئے۔ مہلوکین کی مجموعی تعداد1397ہوگئی جن میں 463جموں جبکہ 934افراد کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ منگل کو50سفر کرنے والوں سمیت مزید 589افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں۔ متاثرین کی مجموعی تعداد  88958تک پہنچ گئی۔ ان میں 348کشمیر جبکہ جموں میں 241افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔ کشمیر کے 348متاثرین میں 136سرینگر، 34بڈگام، 32بارہمولہ، 30پلوامہ، 4کپوارہ، 39اننت ناگ، 32بانڈی پورہ، 21گاندربل، 12کولگام اور 8شوپیان سے تعلق رکھتے ہیں۔ جموں کے 241متاثرین میں سے 118ضلع جموں،10ریاسی، 10ادھمپور، 25ڈوڈہ، 9کٹھوعہ، 13پونچھ، 7سانبہ، 25کشتواڑ،11رام بن اور13ریاسی سے تعلق رکھتے ہیں۔ 
۔ 9اموات
 جموں و کشمیر میں کورونا وائرس سے مزید 9افراد فوت ہوگئے۔ مرنے والوں میں سے 6کشمیر جبکہ 3جموں سے تعلق رکھتے ہیں۔ کشمیر کے 6متاثرین میں 2سرینگر، ایک بارہمولہ، ایک پلوامہ، ایک کولگام اور ایک شوپیان سے تعلق رکھتا ہے۔سرینگر میں تعینات محکمہ صحت کے ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ رعناواری سے تعلق رکھنے والی ایک 38سالہ خاتون کورونا وائرس سے پیدا ہونے والے نمونیا سے فوت ہوگئی۔ سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ مومن آباد بٹہ مالو سے تعلق رکھنے والا ایک 90سالہ معمر شخص فوت ہوگیا۔ سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ 38سالہ خاتون سکمز جبکہ 90سالہ معمرشخص صدر اسپتال سرینگر میں فوت ہوگیا۔بارہمولہ میں تعینات محکمہ صحت کے ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا ’’ پیر اور منگل کی درمیانی رات کو اوڑی سے تعلق رکھنے والا60سالہ معمر شخص کورونا وائرس پیدا ہونے والے نمونیا سے فوت ہوگیا ہے‘‘۔پلوامہ میں تعینات محکمہ صحت کے ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ چھتری پورہ پلوامہ سے تعلق رکھنے والا 58سالہ شخص پیر اور منگل کی درمیانی شب کو اچانک گھر میں حرکت قلب بند ہونے سے فوت ہوگیا ‘‘۔سینئر ڈاکٹر نے بتایا ’’ مذکورہ شخص ہائی بلڈ پریشر اور شوگر بیماری پہلے سے مبتلا تھا  اور اسلئے اسکے نمونے حاصل کئے گئے جو بعد میں مثبت آئے‘‘۔کولگام میں تعینات محکمہ صحت کے ایک سینئر ڈاکٹر نے بتایا ’’ چیولن سے تعلق رکھنے والی ایک 65سالہ خاتون صدر اسپتال سرینگر میں داخل کیا گیا تھا ۔ سینئر ڈاکٹر نے بتایا کہ مذکورہ خاتون کو 14اکتوبر کو اسپتال میں نمونیا کی وجہ سے داخل کیا گیا لیکن وہ منگل کی صبح صدر اسپتال میں فوت ہوگئی۔ جموں صوبے کے 3متوفین میں جموں 2اور ایک ادھمپورسے تعلق رکھتا ہے۔ 
حکومتی بیان
حکومت کی طرف سے جاری کئے گئے روزانہ میڈیا بلیٹن میں بتایا گیا ہے کہ نوول کورونا وائرس کے88,958معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے8,124سرگرم معاملات ہیں ۔ اَب تک79,437اَفراد صحتیاب ہوئے ہیں ۔وائرس سے مرنے والوں کی مجموعی تعداد1,397تک پہنچ گئی ،جن میں سے 934کا تعلق کشمیر صوبہ سے اور463کاتعلق جموں صوبہ سے ہیں۔اِس دوران منگل کو770افرادشفایاب ہوئے ہیںجن میںجموں صوبے کے349اَفراداور کشمیر صوبے کے 421اَفرادشامل ہیں۔ اَب تک 20,48,631ٹیسٹوں کے نتائج دستیاب ہوئے جن میں سے  20؍اکتوبر 2020 کی شام تک 19,59,673نمونوں کی رِپورٹ منفی پائی گئی ۔علاوہ ازیں 6,31,601افراد کو نگرانی میں رکھا گیا جن کا سفر ی پس منظر ہے اور جو مشتبہ معاملات کے رابطے میں آئے ہیں۔ اِن میں21,785اَفراد کو ہوم قرنطین میں رکھا گیا ۔8,124  اَفراد کوآئیسولیشن میں رکھا گیا،52,269اَفراد کو گھروں میں نگرانی میں رکھا گیا اور5,48,026اَفرادنے 28روزہ نگرانی مدت پوری کی ۔
 

اسپتالوں کیلئے آکسیجن کی بر وقت فراہمی

۔13اراکین پر مشتمل کمیٹی ذمہ دار ہوگی

نیوز ڈیسک
 
سرینگر //جموں و کشمیر کے سرکاری اسپتالوں میں آکسیجن کی سپلائی یقینی بنانے کیلئے حکومت نے فائنانشل کمشنر صحت و طبی تعلیم کی سربراہی میں 13ممبران کی اعلیٰ کمیٹی تشکیل دی ہے۔ حکومت کی جانب سے منگل کو اس ضمن میںحکم نامہ زیر نمبر959 سال 2020 بتاریخ 20 اکتوبر جاری کیا گیا ۔ حکم نامہ کے مطابق محکمہ مال کے پرنسپل سکریٹری،کمشنر سیکریٹری انڈسٹریز اینڈ کامرس،کمشنر سیکریٹری ٹرانسپورٹ،ڈویژنل کمشنر جموں، ڈویژنل کمشنر کشمیر، ڈائریکٹر نیشنل ہیلتھ مشن،ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز جموں، ڈائریکٹر ہیلتھ سروسز کشمیر،ڈائریکٹر سکمز صورہ، پرنسپل گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگراورپرنسپل گورنمنٹ میڈیکل کالج جموں کو بطور ممبران جبکہ منیجنگ ڈائریکٹر جے اینڈ کے میڈیکل سپلائی کارپوریشن کو بطور ممبر سیکریٹری کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔ کمیٹی کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ مرکزی زیر انتظام جموں و کشمیر میں آکسیجن کی خبر ملتے ہی بھارت سرکار کے وزارت صحت و سماجی بہبود میں قائم کنٹرول روم کو کمی کی رپورٹ بھیجیں گے۔کمیٹی کویہ بھی اختیار دیا گیا ہے کہ میڈیکل آکسیجن کی سپلائی میں کسی بھی رکاوٹ کو حائل نہیں ہونے دیں۔ حکم نامہ میں مزید کہا گیا ہے کہ کمیٹی اس بات کو بھی یقینی بنائے گی کہ جموں و کشمیر میں میڈیکل آکسیجن بنانے والی فیکٹریوں اور کارخانہ داروں پر کسی قسم کی پابندی عائد نہ کی جائے۔ حکم نامہ میں بتایا گیا ہے کہ کمیٹی آکسیجن لانے اور لیجانے میں استعمال ہونے والے ٹرانسپورٹ کی بر وقت نقل و حرکت کو یقینی بنائے۔