تازہ ترین

میرا قصبہ میری شان| شہر کے کئی مقامات پر خصوصی تقریبات

لوگوں کی بھرپور شرکت، متعدد خدمات فراہم

تاریخ    20 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


 سرینگر//شہر کے اندرونی علاقوں میں رہائش پذیر شہریوں نے’’ میرا شہر میری شان‘‘ کیولین پروگرام میں مطالبات کرتے ہوئے انتظامیہ سے امیدیں وابستہ کیں،جبکہ انتظامیہ نے متعدد شہریوں میں سرٹیفکیٹ اور سازوسامان تقسیم کیا۔حال ہی میں منعقدہ’’ گائوں کی اور‘‘ پروگرام کی تسلسل کے بعد لیفٹنت گورنر انتظامیہ نے شہری آبادی تک پہنچنے کے لئے2روزہ ’’ میرا شہر میری شان‘‘ کا اعلان کیا۔اس پرجوش پروگرام میں جموں و کشمیر کے شہری علاقوں میں رہنے والے لوگوں کی دہلیز تک حکمرانی لانے کا تصور کیا گیا ہے۔ پیر کو اس پروگرام کے پہلے دن انتظامیہ نے سرینگر اور اس کے آس پاس متعدد کیمپ لگائے۔ گنج بخش پارک نوہٹہ میں منعقد ایسے ہی ایک کیمپ میں ،علاقے کے لوگوں کو پروگرام میں مختلف سرگرمیوںمیں مصروف دیکھا گیا۔ اسی نوعیت کا ایک اور کیمپ نگین کلب میں لگایا گیا تھا۔نوہٹہ میں ، ڈائریکٹر ہاسپٹیلٹی اینڈ پروٹوکول حشمت علی  دورہ کرنے والے افسر تھے جبکہ نگین کلب میں ایم ڈی جے کے کیبل کار کارپوریشن  ماجد خلیل درابو عوامی شکایات اور مطالبات کو سننے کے لئے نامزد افسر تھے۔انتظامیہ نے درجنوں اسٹال لگائے تھے جو مہمانوں کو خدمات فراہم کرتے اور انھیں معلومات فراہم کرتے تھے۔ ہر متعلقہ محکمہ نے اپنے اپنے نمائندوں کو کیمپ میں دستیاب رکھا تھا جو لوگوں کو ان کے متعلقہ محکموں کے ذریعہ نافذ اسکیموں کے فوائد کے لئے درخواست دینے یا سمجھنے میں مدد کرنے میں مصروف تھے۔محکمہ سماجی بہبود کی طرف سے لگائے گئے اسٹال میں’’ آئی ایس ایس ایس‘‘ اسکیم اور این ایس اے پی زمروں کے تحت مالیاتی معاونت کیلئے نصف درجن درخواستیں موصول ہوئیں۔ اسی طرح محکمہ اسکول ایجوکیشن طلبا کو مفت داخلہ فراہم کرنے کے علاوہ طلبہ کو مفت درسی کتابیں اور وردیاں بھی فراہم کر رہا تھا۔محکمہ زراعت کے زیرانتظام اسٹال میں لوگوں میں زرعی آلات ، پولی گرین ہاؤس جیسے ساز و سامان کو رعایتی نرخوں پر حاصل کرنے کے بارے میں آگاہی  دی گئی۔ انھوں نے اہل کاشتکاروں کو رعایتی ، اعلی پیداوار بخش بیج کی اقسام اور آبپاشی کے سازوسامان فراہم کرنے کے بارے میں بھی معلومات دی۔ محکمہ آب،تعمیرات عامہ اور بجلی کے نمائندے صارفین سے ہمہ وقت پانی کی فراہمی ، بلیک ٹاپنگ اور سڑکوں کو وسیع کرنے اور متعلقہ محکموں سے نئے ٹرانسفارمر لگانے کیلئے درخواستیں وصول کر رہے تھے۔محکمہ صحت لوگوں کو گولڈن کارڈ کی حصولیابی کیلئے رجسٹر کر رہا تھا،جبکہ وہ خواتین کو حاملہ خواتین اور ان نوزائیدہ بچوںکو ملنے والے فوائد کے بارے میں بھی آگاہ کر رہے تھے۔محکمہ مال آمدنی کے سرٹیفکیٹ اور اقامتی اسناد کی حصولیابی کیلئے اندراج کر رہا تھا،جبکہ دیگر معاملات سے متعلق درخواستیں بھی جمع کی گئیں تاکہ انھیں وہاں موجود فیلڈ ممبروں تک پہنچائیں۔اس موقع پر یوتھ سروسز اینڈ اسپورٹس ڈیپارٹمنٹ نے اسپورٹس کلب اور سرکاری اسکولوں کو مفت اسپورٹس کٹس اور سازوسامان مہیا کیے۔ مقامی اسپورٹس کلبوں کو کرکٹ ، فٹ بال ، والی بال اور کیرم اسپورٹس گیئر سمیت ایک کھیلوں کی کٹ فراہم کی گئی۔ بہت سے اسکولوں کو ٹی ٹی ٹیبل مہیا کیا گیا  جن میں گورنمنٹ گرلز ہائیر سیکنڈری اسکول ، نوہٹہ ، بوائز ہائر اسکینڈری اسکول نو پورہ اور بوائز ہائر سیکنڈ اسکول ، خیمبر شامل ہیں۔کیمپوں میں محکمہ محنت و روزگار، شہری ترقی،یو ای ای ڈی،افزئش جانور،لاوڑا،باغبانی،آبپاشی اور دیگر متعلقہ محکموں نے بھی اپنے اپنے اسٹال لگائے تھے،جہاں پر لوگوں کو متعلقہ جانکاری اور اسکیموں سے متعلق آگاہی فراہم کی جاتی تھی۔انہوں نے  محکموں کے ذریعہ چلائی جانے والی فلاحی اسکیموں کے بارے میں معلومات بھی فراہم کی۔محکموں نے ان مقامات پر دستیاب تمام متعلقہ معلومات پر مشتمل بروشرز ، بینرز اور کتابچے بھی  دستیاب رکھے تھے۔ اس کے علاوہ متعلقہ محکموں کے نمائندے مختلف فلاحی پروگراموں کے تحت اپنے محکموں سے فوائد لینے کے لئے درخواست دینے کے کام اور طریقہ کار کے بارے میں بھی آگاہی فراہم کر رہے تھے۔
 

تازہ ترین