تازہ ترین

جموں میں اپنی پارٹی کا احتجاجی دھرنا | سیلف ہیلپ گروپ اسکیم تحلیل کرنے کے فیصلے پر نظر ثانی کی اپیل

تاریخ    15 اکتوبر 2020 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
جموں//اپنی پارٹی نے جموں وکشمیر کے تعلیم یافتہ بے روزگار انجینئروں کو روزگار فراہم کرنے کیلئے شروع کی گئی ’سیلف ہیلپ گروپ‘اسکیم کو تحلیل کرنے کے خلاف احتجاجی دھرنا دیا۔ صوبائی صدر منجیت سنگھ کی قیادت میں اپنی پارٹی لیڈران ڈوگرہ چوک میں جمع ہوئے اور مطالبہ کیاکہ جموں وکشمیر میں دوباہ سے ایس ایچ جی اسکیم شروع کی جائے جوکہ انجینئروں کو روزگار فراہم کرنے کا منفرد طریقہ تھا۔ اسکیم کو تحلیل کرنے کے یکطرفہ فیصلہ کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئے اپنی پارٹی لیڈران نے الزام لگایاکہ حکومت کے اس غیر دانشمندانہ فیصلے سے ہزاروں کنبہ جات متاثر ہوئے ہیں، لہٰذا فیصلے پر نظرثانی کی ضرورت ہے۔ دھرنے میں پرنو شگوترہ، رقیق احمد خان، فقیر ناتھ، صوبائی صدر خواتین ونگ نمرتہ شرما، شنکر سنگھ چب، آر کے للوترہ، سردیش رانا، گورو کپور، ابہے بقایہ، جوگیندر سنگھ، وجے ہاتشی، غلام محمد شاہ، وائی بہو مٹو، جگمیت سنگھ بالی، سمرنجیت سنگھ، پرکشت سگوترہ، محمد افضل جعفری، اکھل شرما، ردھر پرتاپ سنگھ، سنجے دھر، وکی شرمابھی شامل تھے۔ منجیت سنگھ نے کہاکہ سیلف ہیلپ گروپ جیسی کامیاب اسکیم کو بند کر دینے سے عوام بالخصوص بے روزگار نوجوانوں کو دھچکا لگا ہے جوکہ مختلف سرکاری اسکیموں کی معاونت سے روزگار کے متمنی تھے۔ اس فیصلے نے تعلیم یافتہ نوجوان بے سہارا ہوگئے ہیں کیونکہ ہنریافتہ اور کوالیفائی انجینئروں کو بہترین کارکردگی کے بعد بھی کام سے محروم کردیاگیا۔ دھرنے پر بیٹھے اپنی پارٹی لیڈران نے حکومت پرزوردیاکہ لاکھوں کنبوں کے وسیع تر مفاد کی خاطر فیصلے پر نظرثانی کی جائے۔
 

تازہ ترین