افسران کاتبادلہ اور تعیناتی ، صرف لیفٹیننٹ گورنر مجاز

تاریخ    2 اکتوبر 2020 (00 : 02 AM)   


سید امجد شاہ
 جموں//انتظامی محکموں کو سختی سے کہا گیا ہے کہ وہ جموں وکشمیر یوٹی سے افسروں کے تبادلے اور ان کی پوسٹنگ آرڈر جاری کرنے سے گریز کریں کیونکہ ایسے احکامات جاری کرنے کا اختیارصرف لیفٹنٹ گورنر منوج سنہا کوحاصل ہے۔یہ سخت ہدایات یہ منظرعام پر آنے کے بعد جاری کی گئیں کہ کچھ انتظامی محکموں نے جموں وکشمیر کے یونین ٹیریٹری سے اہلکار وںکو مجاز اتھارٹی سے منظوری کے بغیر مرکز ی زیر انتظام علاقے لداخ میں تعینات کرنے کا حکم دیا ہے۔بین یوٹی منتقلی اور پوسٹنگ پالیسی کیلئے محکمہ عمومی انتظامی(جی اے ڈی) نے ایک سرکولر جاری کیا جس میں اس نے بتایا ہے کہ’’کچھ انتظامی محکمہ جات جموں و کشمیر میں اس وقت کام کرنے والے افسران کے حوالے سے تبادلے اور پوسٹنگ آرڈر جاری کررہے ہیں،ان کو بغیر کسی مجاز اتھارٹی کی اجازت کے لداخ تعینات کرنے کو منظوری دی گئی‘‘۔جموں وکشمیر تنظیم نو ایکٹ2019 کا حوالہ دیتے ہوئے عہدیداروں نے سرکولر کے حوالے سے بتایا ’’وہ افسران جو مرکزی زیر انتظام اکائیوں جموں و کشمیر اور لداخ کے معاملات کے سلسلے میں اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں،کو ایک یونین ٹریٹری سے دوسری یونین ٹیریٹری لیفٹنٹ گورنر کے ذریعہ تعینات کیاجاسکتاہے‘‘۔جی اے ڈی نے واضح کیا کہ ’’مجاز اتھارٹی کی منظوری کے بغیر ایسے تمام احکام قانونی طور پر قابل عمل نہیں ہیں، اس سے انتظامی پیچیدگیاں بھی پیدا ہوجائیں گی ‘‘۔ تمام انتظامی محکموں کو مشورہ دیا گیا ہے کہ جی اے ڈی کو اس طرح کی تجاویز کو مذکورہ ایکٹ کے تحت مجاز اتھارٹی کی منظوری کے لئے بھیجیں تاکہ مناسب عمل اورطریقہ کار کی پیروی کو یقینی بنایا جاسکے۔