سرکاری نوکریاں ،ماہانہ امداد اور دیگر مطالبات

گنپت یار مندر میں کشمیری پنڈت سنگھرش سمتی کی بھوک ہڑتال جاری

تاریخ    25 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


یو این آئی
سرینگر//کشمیری پنڈت سنگھرش سمتی کی مطالبات منوانے کے حق میں بھوک ہڑتال کل بھی جاری رہی۔بتادیں کہ کے سمتی کے اراکین21 ستمبر سے گنیش مندر گنپت یار حبہ کدل میں اپنے کئی مطالبات کو لے کر بھوک ہڑتال پر ہیں۔سنگھرش سمتی کے صدر سنجے کمار ٹکو نے بتایا کہ جب تک حکومت کی طرف سے مثبت جواب نہیں آئے گا تب تک بھوک ہڑتال جاری رہے گی۔انہوں نے کہا کہ بھوک ہڑتال میں سمتی کے باقی ممبران بھی شرکت کریں گے۔موصوف سے جب یہ پوچھا گیا کہ ایڈمنسٹریٹو کونسل نے دونوں کشمیری مہاجر و نان مائیگرنٹ پنڈتوں کو وزیر اعظم کے پیکیج کے تحت بھرتی کے مستحق قرار دیا ہے اب کیا مسئلہ ہے تو ان کا جواب تھا: 'ہمیں اس سلسلے میں تحریری یقین دہانی چاہئے، ہم نے ایسی منظوریوں کے بارے میں ماضی میں بھی سنا ہے جب تک نہ ہمیں تحریری یقین دہانی دی جائے گی ہماری بھوک ہڑتال جاری رہے گی'۔انہوں نے کہا کہ ضلع مجسٹریٹ دفتر سری نگر سے پیر کی شام کو دو ملازم ہم سے ملے تھے جن کو ہم نے پوری تفصیلات فراہم کی تھیں لیکن اس کے بعد وہ دوبارہ نظر نہیں آئے۔انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر کے خصوصی پوزیشن کے خاتمے کے بعد یہاں کشمیری پنڈتوں کو ریلیف محکمہ ہراساں کر رہا ہے۔موصوف نے کہا کہ ہائی کورٹ کی طرف سے جاری کی گئی کئی ہدایات اور مرکزی وزارت امور داخلہ کی سفارشوں پر متعلقہ محکمہ عمل نہیں کرتا ہے۔قابل ذکر ہے کہ سنگھرش سمتی کے مطالبات میں تعلیم یافتہ کشمیری پنڈت بے روزگار نوجوانوں کو نوکریاں فراہم کرنے کے بارے میں ہائی کورٹ اور وزارت امور داخلہ کے احکامات کی عمل آوری، کشمیر میں ہی رہائش پذیر 808 پنڈت گھرانوں کو ماہانہ مالی امداد کی فراہمی اور ہجرت نہ کرنے والے مستحق کشمیری پنڈتوں کو رہائشی سہولیات کی فراہمی خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

تازہ ترین