یوتھ ونگ میٹنگ میں ایک سال بعد پارٹی لیڈران جمع

پی ڈی پی کی محدود سیاسی سرگرمیوں کا آغاز

تاریخ    17 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


بلال فرقانی

جموں کشمیر کی شناخت واپس لانے کیلئے کوئی سمجھوتہ نہ کرنیکا عزم

 
سرینگر//پی ڈی پی نے کہا ہے کہ حکومت ہند کی کشمیر پر سنگین دھوکہ بازی نا قابل قبول ہے اور جموں کشمیر کی شناخت اور حقوق کیلئے جدوجہد پر کوئی بھی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔جموں کشمیر کی آئینی تخصیص اور تقسیم کے بعد سابق حکمران جماعت پی ڈی پی کی یوتھ میٹنگ پہلی بار منعقد ہوئی ۔ پولو ویو ہیڈ آفس میںپارٹی کی یوتھ ونگ میٹنگ میں جنرل سیکریٹری ایڈوکیٹ جی این ہانجورہ  نائب صدر عبدالرحمان ویری، محمد خورشید عالم، وحید الرحمان پرہ ، اعجاز احمد میر اور روف بٹ بھی موجود تھے۔عبد الرحمان ویری نے بتایا یہ میٹنگ پارٹی کے یوتھ ونگ کے جانب سے منعقد ہوئی ہے جہاں بعد میں دیگر لیڈران نے وہاں پہنچ کرایک سال بعد منعقد ہ پہلی میٹنگ میں شرکت کی ۔ میٹنگ میں دفعہ370کی تنسیخ کے بعد صورتحال اور پارٹی صدر محبوبہ مفتی کی مسلسل نظربندی  پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔پارٹی لیڈران نے کہا’’ ایک جانب بی جے پی طالبان کے ساتھ بات چیت میں شمولیت کر رہی ہے،لداخ کے ایک حصے پر قابض چینی فوج کے ساتھ صلاح کرنے پر زور دے رہی ہے اور ناگالینڈ کے شورش پسندوں سے تبادلہ خیال کر رہی ہے،اور دوسری جانب کشمیر میں خاموشی اختیار کی ہوئی ہے‘‘۔پارٹی نے یہ عزم دہرایا کہ وہ جموں کشمیر کے لوگوں کے احساسات اور حقوق کیلئے اپنی جدوجہد جاری رکھے گی اور جموں کشمیر کو مرکز کی طرف سے نشانہ بنانے کے خلاف جمہوری طریقوں سے لڑے گی۔ میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے نائب صدر ویری نے  اتحاد کو بنائے رکھنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ’’ہمیں امید کی مشعل جلائے رکھنی چاہیے،اور اس عزم کا اعادہ کرنا چاہیے کہ ہم اپنے وقار اور حقوق کی نگہبانی کریں گے‘‘۔انہوں نے کہا’’بر سر اقتدار جماعت کی جانب سے اطلاق شدہ غیر جمہوری عمل کو ہم مسترد کرتے ہیں، ہمارے سینکڑوں نوجوان نا جائز طور پر جیلوں میں ہیں،اور انہیں کورونا وائرس کا زبردست خطرہ ہے، ہماری آواز کو یک طرف کیا جا رہا ہے اور اداروں کو مسمار کیا جا رہا ہے‘‘۔ویری نے کہا کہ اس صورتحال میں وہ خاموش نہیں رہیں گے،اور اپنے وقار کی بحالی کیلئے ضروری ہے کہ ہم اس وقت خاموش نہیں رہ سکتے۔ میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے جنرل سیکریٹری ہانجورہ نے کہا کہ جموں کشمیر کے لوگوں کو مشکل ترین اوقات سے گزرنا پڑا ہے،تاہم انہوں نے لوگوں کی طرف سے مزاحمت کی بھی سراہنا کی۔انہوں نے کہا’’ جموں کشمیر میں کئی لاک ڈائون اور بحران پیدا ہوئے،اور ہر وقت ہم نے دکھا دیا کہ ہم ایک دوسرے کے اتحاد کے ساتھ اس کا مقابلہ کر سکتے ہیں۔ محمد خورشید عالم نے کہا کہ لوگوں کے حقوق کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے شروع کی گئی تحریک کو کسی بھی طرح ختم نہیں کیا جاسکتا۔میٹنگ کے بعد  وحید الرحمان پرہ نے بتایاکہ اگر ہندوستان لداخ میں چین کے ساتھ،طالبان،یا ملک کے اندر کئی حصوں میں درپیش مسائل حل کرنے کی خاطربات چیت کے لئے تیارہے تو ہمارے ساتھ ایسا کیوں سلوک کیوں ہے ۔انہوں نے تمام سیاسی لیڈران بشمول محبوبہ مفتی کو فوری طور رہا کرنے کا مطالبہ کیا  ۔انہوں نے کہا کشمیر میں90جیسے حالات پھر سے پیدا ہوئے ہیں ۔ اعجاز احمد میر نے کہا ’’ نوجوانوں میں آبادی کے تناسب کی تبدیلی ،اراضی حقوق،تمدن و زباں اور حصول روزگار اورعدم تحفظ کے خدشات سے لامتناہی سلسلہ چل پڑا ہے۔میٹنگ میں پارٹی کے سنیئر لیڈراں عبدالمجید کوشین،بشیر احمد میر،روف بٹ،طاہر سعید،ہربخش سنگھ،عارف لائیگرو اور دیگر یوتھ لیڈراں بھی موجود تھے۔
 

تازہ ترین