تازہ ترین

ملک کوجُڑواں آفات کا سامنا

معیشت خستہ،ایام کوویڈ میں جمہوریت پر بھی یلغار

تاریخ    15 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


پرکاش کرأت
کچھ ہی دنوں میں وبائی مرض اور معیشت سے متعلق دو پیشرفت ہوئیں جو تشویش ناک ہیں۔ برازیل کو پیچھے چھوڑتے ہوئے ہندوستان دنیا میں دوسرے نمبر پر کوویڈ 19 کیسوں کا ملک بن گیا۔ اس سے پہلے یہ خبر آئی تھی کہ پہلی سہ ماہی (اپریل تا جون) میں جی ڈی پی میں 24 فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔ دنیا کی 25 بڑی معیشتوں میں یہ بدترین زوال ہے۔
 وبائی بیماری بہت بڑھ رہی ہے اور یہ چھوٹے چھوٹے شہروں اور دیہات میں پھیل گئی ہے۔ انفیکشن کی تعداد میں روزانہ اضافے میں ہندوستان نے تمام ممالک کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ اس میں اموات کے سب سے زیادہ واقعات بھی ریکارڈ کیے جارہے ہیں۔ ماہرین صحت کے مطابق اس شرح پر ہندوستان اکتوبر کے دوسرے ہفتے تک چارٹ میں سبقت لے گا اور امریکہ سے آگے نکل جائے گا۔
 لیکن ایسا لگتا ہے کہ ان دونوں آفات نے وزیر اعظم اور حکومت کو خوف زدہ نہیں کیا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ مودی سرکار نے فیصلہ کر لیا ہے کہ اس کا ایک واحد راستہ یہ ہے کہ وبائی مرض کو اپنا راستہ چلانے دیا جائے۔ اس طبی بحران سے ڈھٹائی کا دعویٰ شامل ہے کہ اس لاک ڈاؤن نے بہت سی جانوں کو بچایا اور ہندوستان میں اموات کی شرح دنیا میں سب سے کم ہے۔ دوسرا راستہ یہ ہے کہ یہ دعویٰ ہے کہ چیلنج کا مقابلہ کرنے کے لئے حکومت تیزی سے کمر بستہ ہوگئی ہے۔ مودی نے ایک حالیہ تقریر میں دعویٰ کیا ہے کہ بھارت دنیا میں پی پی ای بنانے والا دوسرا بڑا ملک بن گیا ہے۔
 پچھلے چھ ماہ کے دوران صحت عامہ پر سرکاری اخراجات میں خاطر خواہ اضافہ نہیں کیا گیا ہے ، سوائے اس کے کہ مالی پیکیج میں ہیلتھ سیکٹر کیلئے15ہزار کروڑ روپے کا اعلان کیاگیا ہے۔ یہاں بھی ان ریاستوں کو صرف ایک چھوٹا سا حصہ مختص کیا گیا تھا جو صحت کے بحران سے نمٹ رہی ہیں۔ دراصل مرکزی حکومت ریاستوں کو رقوم کیلئے ترسا رہی ہے اور اس طرح ریاستی حکومتوں کو صحت عامہ کے نظام کو اپ گریڈ اور بڑھانے کی کوششوں میں رکاوٹ بن رہی ہے۔
 انسانی قیمت کے لحاظ سے نتائج خوفناک ہیں۔ مناسب طبی سہولیات کی عدم فراہمی کی وجہ سے بہت سارے موت کا شکار ہو جائیں گے۔ نجی اسپتالوں اور نرسنگ ہومز میں علاج کی بے جا قیمت کے سبب متوسط طبقے کے ہزاروں گھرانے قرضوں میں ڈوب جائیںگے۔ صحت کا بحران معاشی سرگرمیوں کو متاثر کرے گا اور ترقی کے احیاء کے امکانات کو روک دے گا۔
 معیشت کا شدید بحران بنیادی طور پر اپریل اور مئی میں دو ماہ کے لئے لاک ڈا ئون کی وجہ سے ہوا۔ اگر عوامی اخراجات میں اضافے کے لئے بروقت اقدامات کیے جاتے تو بحران کے اثرات کوکم کیا جاسکتا تھا جس میں غریبوں میں نقد رقم کی منتقلی،تمام غریب خاندانوں میں مفت اناج کا بڑا ذخیرہ تقسیم کرنا اورچھوٹی و درمیانہ درجے کی صنعتوں کو مالی مدد فراہم کرناشامل ہیں۔ لیکن حکومت نے یہ سب کرنے سے انکار کردیا۔ مالی محرک پیکج میں اضافی عوامی اخراجات جی ڈی پی کا صرف 1 فیصد تھا۔
 حکومت کے اعلیٰ معاشی مشیر کرشنامورتی سبرامنیم نے استدلال کیا ہے کہ جی ڈی پی کی کمی کوویڈ 19 کی وجہ سے ہو ئی ہے اور اس نے دعویٰ کیا ہے کہ اَن لاک مرحلے میں معیشت مضبوطی سے بحال ہورہی ہے۔ اُسے وی شکل کی بحالی کی توقع ہے۔ جی ڈی پی کی 24 فیصد منفی نمو کا مطلب یہ ہے کہ روزگار ، آمدنی اور کھپت میں بڑے پیمانے پر کمی واقع ہوئی ہے۔ سی ایم آئی ای کے مطابق ، اپریل سے اگست تک 21 ملین (2.1 کروڑ) تنخواہ دار ملازمتیں ختم ہوگئیں۔ غیر رسمی شعبے سے وابستہ اور بھی بہت سے لاکھوں افراد اپنی روزی روٹی سے محروم ہوگئے ہیں۔ جب معاشی سرگرمیاں بحال ہونگیں توان تمام ملازمتوں کی بحالی نہیں ہونے والی ہے۔ کوویڈ سے پہلے ہی معیشت کافی سست ہوگئی تھی۔ اب کوویڈ سے پہلے کی سطح پر واپس آنا بھی مشکل ہوگا۔ معیشت میں ’ بحالی‘ اور وی شکل کی بازیابی کی بات کرنا حکومت کی جانب سے سخت حقائق  سے صرف پردہ پوشی کی کوشش ہے۔
 اس بات کی کوئی علامت نہیں ہے کہ حکومت عوامی اخراجات اور عوامی سرمایہ کاری میں ایک بھاری اضافہ کرنے پر غور کر رہی ہے جس سے نہ صرف طلب میں اضافہ ہوگا بلکہ کھپت میں اضافہ ہوگا اورنجی سرمایہ کاری کیلئے راہ ہموار کرنے کے علاوہ پیداوار کا بھی احیاء کرسکتی ہے۔ لیکن مودی حکومت کا اپنایا ہوا طریقہ مختلف ہے ،ایف ڈی آئی لائو ، معدنی وسائل سے فائدہ اٹھانے کے لئے کارپوریٹس کو مفت لائسنس دو ، PSUs کی بڑے پیمانے پر نجکاری کرو، تمام شعبوں میں نجکاری کو فروغ دواور مزدور قوانین کو ختم کرتے ہوئے کارکنان کو منضبط کرو۔ یہ نو لبرل راستہ ہے جو ہندوستان کے بڑے کاروبار اور غیر ملکی سرمایے کے ذریعہ لوگوں اور ملک کے وسائل کے استحصال کو تیز کرنے میں مدد فراہم کرتا ہے۔
 یہی عوام دشمن نقطہ نظر ہے جو ملک کو درپیش تیسرے بحران یعنی جمہوریت کے بحران کی عکاسی کرتا ہے۔ 24 مارچ کو لاک ڈاؤن شروع ہونے کے بعد سے ساڑھے چھ ماہ میں جمہوریت اور جمہوری حقوق پر ایک منظم حملہ ہورہا ہے ۔سی اے اے کے خلاف احتجاج کرنے والوں پربغاوت اور یو اے پی اے کے تحت مقدمے درج کرنا،بھیما کوریگائوں کیس میں دانشورروں اور کارکنوں کو جھوٹے طریقے سے ملوث کرنا،تمام جمہوری سرگرمیوں کو دبانے کے لئے مہاماری ایکٹ اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ کا استعمال، جموں و کشمیر میں ڈومیسائل قانون کو آگے بڑھانا اور آخر کار پارلیمنٹ کومحدود کرناایسے اقدامات ہیں جن سے جمہوریت کا قتل کیا جارہا ہے۔
پارلیمنٹری اسٹینڈنگ کمیٹیوں کے کام کومحدود کردیا گیااورآن لائن ملاقاتوں کی اجازت نہیں دی گئی۔جاریہ اجلاس کے لئے وقفہ سوالات کو ختم کردیا گیا اور یوں ممبروں کو حکومت سے سوالات کرنے کے بنیادی حق سے محروم کیاگیا۔ ریاستوں کے حقوق پامال ہو رہے ہیں۔فہرست لامتناہی ہے۔
ایسے وقت میں جب حکومت یہ عذرپیش کررہی ہے کہ ریاستوں کو جی ایس ٹی معاوضے کی ادائیگی کے لئے اس کے پاس پیسے نہیں ہیں ، وزارت داخلہ نے فنانس کمیشن سے کہا ہے کہ وہ 50ہزار کروڑ روپے کے ابتدائی سرمایہ کے ساتھ ایک قومی اندرونی سیکورٹی فنڈ (این آئی ایس ایف) قائم کرے ۔یہ سرمائے کے اخراجات کو پورا کرنا ہے ، جس کا ایک اچھا حصہ ہمہ وقت نگرانی اور انٹیلی جنس اکٹھا کرنے والی ٹکنالوجی کے لئے ہوگا۔ اہمیت یہ ہے کہ اندرونی تحفظ کی مالی اعانت کو فنانس کمیشن کے حوالہ کی شرائط میں شامل کیا گیا ہے۔ وزیر داخلہ نے یہ کہتے ہوئے ایک الگ فنڈ قائم کرنے کا جواز پیش کیا ہے کہ یہ مرکز اور ریاستوں کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔ لہذا ، شاید ریاستوں کو حاصل کرنے والے کچھ وسائل کو داخلی سلامتی کے مقاصد اور نگرانی ریاست کے لئے موڑ دیا جائے گا۔
 جمہوری حقوق اور شہری آزادیوں پر ایگزیکٹو کے حملے کے ساتھ ساتھ ایک تابع اور ماتحت عدلیہ کے ہوتے ہوئے وبائی امراض کے دوران آمریت کے فن کو مزید تقویت ملی ہے۔ لوگوں کی صحت اور معاشی بہبود اس کا شکار ہیں۔ کوویڈ کے دور میں مودی حکومت کا اصل چہرہ یہی ہے۔
( پرکاش کرأت سی پی آئی (ایم) کے پولیٹ بیورو ممبر ہیں)