تازہ ترین

پتھر بھی گرتے رہے | گاڑیاں چلتی رہیں | شاہراہ پر بدترین ٹریفک جام

تاریخ    7 ستمبر 2020 (00 : 01 AM)   


محمد تسکین
بانہال// سنیچر کی رات دس بجے سے جموں جانے والی گاڑیاں را م بن اور بانہال کے درمیان کئی مقامات پرجام کا شکار ہوئیں۔ ٹریفک جام اتوار کے روز بھی جاری رہا اور گاڑیاں سست رفتاری سے آگے بڑھیں۔متعدد مقامات پر زیر تعمیر فورلین شاہراہ کی خرابی ،جاری تعمیراتی کام اور گرتے پتھروں کی وجہ سے شاہراہ پر ٹریفک پچھلے دس روز سے بار بار متاثر ہوتا رہا۔تاہم دوپہر بعد سے اس میں کمی آئی۔ ٹریفک جام کی وجہ سے بانہال اور چندرکوٹ کے درمیان مسافر گاڑیوں کو پچاس کلومیٹر سے بھی کم مسافت طے کرنے کیلئے پانچ چھ گھنٹوں تک کا وقت لگا۔ کئی مسافروں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ مخالف سمت سے فورسز کانوائے کے علاوہ ٹرکوں کی بڑی تعداد کو چھوڑا گیا تھا جو بانہال سے چندرکوٹ تک ٹریفک جام اور سست رفتاری کا باعث بنے۔ ڈی ایس پی ٹریفک رام بن اجے آنند نے کہا کہ وادی کشمیر سے جموں کی طرف ٹریفک جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ وادی کشمیر سے قریب چار ہزار گاڑیاں جموں کی طرف چھوڑدی گئیں۔ انہوں نے کہا کہ شاہراہ کے کئی مقامات پر ہلکی بارشوں کا سلسلہ وقفے وقفے چلتا رہا  اور کئی مقامات پر پتھر بھی گرتے رہے ۔