تازہ ترین

چناب برد ہوئی مسافر بردار گاڑی کی تلاش تیسرے روز بھی جاری

آج بغلیہار ڈیم کا پانی روکاجائیگا،فوجی غوطہ خور وں کی خدمات طلب

تاریخ    3 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


محمد تسکین
بانہال// را م بن کے نزدیک پیر کے روز کم از کم آٹھ مسافروں سمیت چناب برد ہوئی گاڑی کے مسافروں کی تلاش کا سلسلہ بدھ کے روز بھی بغیر کسی کامیابی کے جاری رہا اور گاڑی ڈھونڈ نکالنے کیلئے نزدیکی بغلیہار ڈیم سے پانی کے اخراج کے تین میں سے دو گیٹ آج بند کر دیئے جائیںگے تاکہ پانی کی کم سطح میں گاڑی کو کھوج نکالا جاسکے۔ اس کیلئے فوجی غوطہ خوروں کی ایک پیرا کمانڈوز ٹیم دریا میں تلاش کارروائیوں کیلئے بدھ کو ہی مدد کیلئے رام بن پہنچ گئی تھی لیکن مزید کچھ ساز و سامان کی ضرورت کے پیش نظر جمعرات کی صبح تک غوطہ خوروں کے ذریعہ تلاش کارروائی ملتوی کی گئی۔ ایس ایچ او رام بن سنیل شرما نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ تلاش کارروائی کا سلسلہ پولیس ، ایس ڈی آر ایف اور کیو آر ٹی رضاکاروں کی مدد سے تیسرے روز بھی جاری رہا لیکن کوئی کامیابی حاصل نہیں ہو سکی جبکہ تلاش آپریشن کوچناب کے کناروں پر بہت نیچے تک توسیع دی گئی۔ انہوں نے کہا کہ آج جمعرات کو فوج کے پیرا کمانڈوز پانی میں اتر کر پہلے گاڑی کا پتہ لگانے کی کوشش کریںگے تاکہ گاڑی کو ہْک کرکے باہر کھینچا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ گاڑی کے مل جانے سے گاڑی سے بہہ گئے مسافروں کا صحیح اندازہ ہوگا اور ایسے حادثوں میں بعض اوقات کئی مسافر گاڑی میں ہی پھنس بھی جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ رام بن پولیس لاشوں اور گاڑی کو ڈھونڈ نکالنے کیلئے میسر تمام وسائل بروئے کار لاکر رات دن کام پر لگی ہے اور پورا ٓپریشن ضلع حکام کی نگرانی میں جاری ہے لیکن دریائے چناب میں پانی کی سطح اور بہائو کے سامنے کوئی کوشش کامیاب ثابت نہیں ہوسکی۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلے میں جمعرات کے روز بغلیہار ہائیڈرو الیکٹرک پاور پروجیکٹ ڈیم کا پانی بند کرنے کیلئے ڈپٹی کمشنر رام بن نے احکامات جاری کئے ہیں جس سے پانی کی گرتی سطح کے دوران تلاش کارروائیوں میں مثبت مدد ملے گی۔ادھر پوگل پرستان سے تعلق رکھنے والے ماں بیٹے کلجیت سنگھ اور انکی چھیالیس سالہ والدہ شیشان دیوی کے رشتہ داروں نے بھی بچائو کارروائیوں میں حصہ لیا ااور اس آپریشن میں بلاک چیئرمین اکڑال پوگل پرستان کرلیپ سنگھ بالی بھی شامل تھے۔ دریا برد ہوئے ماں بیٹا ان کے رشتے دار ہیں۔ واضح رہے کہ پیر کی شام جموں سے ادہمپور آرہی ایک ونگر کم از کم آٹھ مسافروں سمیت دریا میں گر گئی تھی اور پولیس کے مطابق اس گاڑی میں چار جموں و کشمیر پولیس اہلکاروں، ڈرائیور، ایک ماں بیٹے اور ایک غیر ریاستی ارکان انٹرنیشنل ملازم سمیت آٹھ افراد سوار تھے جبکہ ایک چناب کے کنارے گر کر معجزاتی طور اس حادثے سے بچ نکلا تھا۔