تازہ ترین

یکطرفہ تبدیلی غیر قانونی اور غیر مؤثر: چین

تاریخ    7 اگست 2020 (00 : 02 AM)   


سرینگر//چین کا کہنا ہے کہ کشمیر میں یکطرفہ تبدیلی غیر قانونی اور غیر مئوثر ہے ۔چین کے دفتر خارجہ کے ترجمان وانگ وینبین نے کہا کہ کشمیرپر بیجنگ کا موقف مستقل اور واضح ہے کہ یہ مسئلہ کشمیر ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تاریخ کا چھوڑا ہوا ایک تنازعہ ہے ۔ وانگ وینبین نے نیوز بریفنگ کے دوران ایک سوال پر واضح کرتے ہوئے کہا کہ چین کشمیر کے خطے کی صورت حال کو قریب سے دیکھ رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ کشمیر پر ہمارا مؤقف مستقل اور واضح ہے، مسئلہ کشمیر پاکستان اور بھارت کے درمیان تاریخ کا چھوڑا ہوا ایک تنازعہ ہے۔مسئلہ کشمیر سے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ اقوام متحدہ کے منشور، سلامتی کونسل کی متعلقہ قراردادوں، پاکستان اور بھارت کے درمیان دوطرفہ معاہدوں کے تحت ایک تسلیم شدہ حقیقت ہے۔اپنے مؤقف کو دہراتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کشمیر کا مسئلہ متعلقہ فریقین کے درمیان مذاکرات اور پرامن بات چیت سے حل ہونا چاہے۔ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت پڑوسی ہیں جو تبدیل نہیں ہوسکتے، دونوں ممالک کے درمیان بھائی چارہ دونوں کے مفاد میں ہے اور عالمی برادری کا مشترکہ مفاد ہے۔انہوں نے کہا کہ چین امید کرتا ہے کہ دونوں فریقین اپنے اختلافات کو مذاکرات کے ذریعے سنجیدگی سے دیکھیں گے اور مشترکہ طور پر دونوں ممالک خطے کے امن و استحکام اور ترقی کو فروغ دیں گے۔(کے این ایس)
 

دفعہ370کی منسوخی اندرونی معاملہ: وینکیا نائیڈو

سرینگر//بھارت کے نائب صدر وینکیا نائیڈو نے کہا ہے کہ جموں کشمیر سے دفعہ 370کی منسوخی بھارت کا اندرون معاملہ ہے۔ انہوںنے ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ پنجاب یونیورسٹی  چندی گڑھ کے زیر اہتمام سشما سوراج میموریل لیکچر سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جموں وکشمیر میں آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے سے ملک کے اتحاد ، سالمیت اور خودمختاری کے تحفظ کیلئے بڑے مفاد میں لیا گیا فیصلہ تھااور اس معاملے پر دوسرے ممالک کو مداخلت یا تبصرہ کرنے سے گریز کرنا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کے اندرونی معاملات میںکسی بھی ملک کو بولنے کا کوئی حق نہیں ہے ۔وینکیا نائیڈو نے کہاکہ ہندوستان ایک پارلیمانی جمہوریت ہے اوردفعہ 370 کو منسوخ کرنے کا فیصلہ جس نے جموں و کشمیر کو خصوصی حیثیت دی تھی،  کو پارلیمنٹ میں تفصیلی گفتگو اور ممبران کی اکثریت کی حمایت کے بعد لیا گیا۔(سی این آئی )
 
 

 اندرونی معاملات میں چین مداخلت نہ کرے: وزارت خارجہ 

سرینگر//بھارت نے چین کو دو وٹوک انتباہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ہندوستان کے اندرونی معاملے میں مداخلت نہ کرے ۔وزارت خارجہ نے ایک بیان میں جمعرات کو کہا ہے کہ چین کی بھارت کے اندورنی معاملات میں مداخلت نا قابل قبول ہے۔ترجمان کا کہناتھا کہ چین کو ایک مرتبہ پھر بین الاقوامی برداری کی جانب سے حمایت نہیں ملی ۔نئی دہلی نے بیجنگ سے کہا ہے کہ وہ اس طرح کی کوششوں سے دور رہے ۔یہ دوسری مرتبہ ہے جب بھارت نے چین کے بیان اور کارروائی پر جوابی حملہ کیا ۔ان کا کہناتھا ’ہم نے نوٹ کیا ہے کہ چین نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ہندوستانی یونین علاقہ جموں و کشمیر سے متعلق امور پر بات چیت کا آغاز کیا۔انہوںنے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مسئلہ کشمیر اٹھانے کی چین کی کوششوں کو مسترد کرتے ہوئے اسے ملک کا داخلی معاملہ قرار دیتے ہوئے چین سے ایسی ناکام کوششوں سے سبق لینے کے لئے کہا۔ وزارت خارجہ نے کہا ، ہم نے اس بات پر غور کیا ہے کہ چین نے ہندوستان کے مرکز کے زیر انتظام جموں و کشمیر سے متعلق معاملوں پر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں بحث شروع کی۔ یہ پہلا یہ پہلا موقع نہیں جب چین نے کسی ایسے موضوع کو اٹھانے کی کوشش کی ہے جو مکمل طور پر ہندوستان کا داخلی معاملہ ہے ‘۔وزارت خارجہ نے کہا ’پہلے کی طرح اس مرتبہ بھی اس کوشش کو بین الاقوامی برادری کی بہت کم حمایت ملی ہے ۔ ہم اپنے داخلی معاملوں میں چین کی مداخلت کو سختی سے مسترد کرتے ہیں۔ اور اسے اس ناکام کوشش سے سبق لینے کی درخواست کرتے ہیں‘۔(کے این ایس)
 

 

تازہ ترین