ایل جی نے 10 بجلی پروجیکٹوں کا ای افتتاح ،7 کا سنگِ بنیاد رکھا

’ سرما کے دوران کشمیر میں بجلی کٹوتی میں 6 سے 8 گھنٹے کی کمی ہوگی‘

تاریخ    14 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


نیوز ڈیسک
سرینگر//کشمیر میں بجلی شعبے کی بڑے پیمانے پر ترقی کیلئے لفٹینٹ گورنر گریش چندر مرمو نے  19.51 کروڑ روپے کی مالیت کے دس بجلی پروجیکٹوں کا ای افتتاح کیا ۔ یہ پروجیکٹ سرینگر ، شوپیاں ، اننت ناگ ، بڈگام اور کلگام میں قائم کئے گئے ہیں ۔ انہوں نے سرینگر ، پلوامہ ، اننت ناگ اور بارہمولہ اضلاع کیلئے 30.35 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کئے جا رہے 7 بجلی پروجیکٹوں کا سنگِ بنیاد بھی رکھا ۔ اس کے علاوہ دو مزید پروجیکٹوں جس میں 33/11 کے وی رسیونگ سٹیشن یاری پورہ کلگام کی صلاحیت کو 2X6.3 ایم وی اے سے بڑھا کر 2X10 ایم وی اے تک توسیع دینے اور ترال پلوامہ کے بٹہ گنڈ گُل باغ میں 6.3 ایم وی اے رسیونگ سٹیشن کی تعمیر کے دو پروجیکٹ بھی شامل ہیں جن پر بالترتیب 2.40 کروڑ روپے اور 3.13 کروڑ روپے کی لاگت آئی ہے اور جن کا لفٹینٹ گورنر نے اُن اضلاع کے حالیہ دورے کے دوران افتتاح کیا تھا ۔اس طرح عوام کے نام نئے وقف کئے گئے بجلی پروجیکٹوں کی کُل تعداد 12 تک پہنچ چکی ہے جن کی تعمیر و تنصیب پر 25 کروڑ روپے صرف کئے گئے ہیں ۔ اس موقعہ پر لفٹینٹ گورنر کے مشیر بصیر احمد خان ، چیف سیکرٹری بی وی آر سبھرامنیم ، پرنسپل سیکرٹری محکمہ بجلی اور منیجنگ ڈائریکٹر کے پی ڈی سی ایل ، چیف انجینئران اور دیگر اعلیٰ افسران موجود تھے ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ نئے پروجیکٹوں کو عوام کے نام وقف کرنے سے کشمیر میں سرما کے دوران بجلی کی کٹوتی 6 سے 8 گھنٹے تک کم ہو گی ۔ یہ پروجیکٹ پی ایم ڈی پی ، آئی پی ڈی ایس ، ڈی ڈی یو جی جے وائی اور کے پی ڈی سی ایل اور آر ای سی پی ڈی سی ایل کی جانب سے عمل میں لائے جا رہے التوا میں پڑے پروجیکٹوں کے تحت تعمیر کئے گئے ۔ واضح رہے کہ سرما کے دوران صوبہ کشمیر کے کچھ حصوں میں بجلی کی کٹوتی 12 سے 16 گھنٹے تک ہوتی تھی اور 12 رسیونگ سٹیشنوں کو چالو کرنے سے بجلی کے تقسیم کاری نظام کی صلاحیت میں بہتری آئے گی ۔ پرنسپل سیکرٹری محکمہ بجلی نے اس موقعہ پر بتایا کہ ان پروجیکٹوں کو چالو کرنے سے صوبہ کشمیر کے 35 ہزار کنبے مستفید ہوں گے ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ حکومت جموں کشمیر بجلی شعبے میں خود انحصاری کے مقصد کے حصول کیلئے کوشاں ہے اور اس ضمن میں کوششیں جاری ہیں تا کہ صارفین کو قابلِ اعتماد بجلی کی ترسیل یقینی بنا کر زیادہ سے زیادہ دو گھنٹے کی کٹوتی رہ سکے ۔ لفٹینٹ گورنر نے کہا کہ گذشتہ دو برسوں کے دوران جموں کشمیر میں بڑے ترقیاتی پروجیکٹوں کی تیز تر عمل آوری اور تکمیل دیکھنے میں آئی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پی ایم ڈی پی کے تحت یہ پروجیکٹ 2015 میں منظور کئے گئے تھے تا ہم ان میں سے اکثر پروجیکٹوں پر 2018-19 میں ہی کام شروع کیا گیا اور ایک قلیل مدت کے اندر ہی انہیں مکمل کر کے چالو کیا گیا ہے ۔ لفٹینٹ گورنر نے جن 7 بجلی پروجیکٹوں کا  آج سنگِ بنیاد رکھا ان کی تکمیل کیلئے نومبر 2020 کی مدت مقرر کی ۔

تازہ ترین