تازہ ترین

لڑاکا طیاروں، کروزمزائل سسٹم اور اہم دفاعی آلات

خریداری کیلئے 38ہزار900 کروڑ روپے منظور

تاریخ    3 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


یو این آئی
نئی دہلی// چین کے ساتھ کشیدگی کے درمیان، حکومت نے تینوں افواج کو ضروری ہتھیاروں اور جنگی طیاروں سے لیس کرنے کیلئے 38000 کروڑ روپے سے زائد کی دفاعی خریداری کی تجاویز کو منظوری دے دی ہے ۔وزیر دفاع راجناتھ سنگھ کی صدارت میںیہاں دفاعی خریداری کونسل کا اجلاس ہوا جس میں مسلح افواج کے لئے 38 ہزار 900 کروڑ روپے کے دفاعی خریداری سودوں کو ہری جھنڈی دے دی گئی۔ فضائیہ کے لئے 21 مگ 29 طیاروں کی خریداری کے ساتھ، موجودہ 59 مگ 29 طیاروں کو اپ گریڈ کرنے کی بھی منظوری دی گئی ۔ اس کے علاوہ 12 سخوئی 30 طیارے بھی خریدے جائیں گے ۔ روس سے مگ29 طیارے کی خریداری اور طیارے کو اپ گریڈ کرنے پر 7418 کروڑ روپے لاگت آئے گی جبکہ 30 سخوئی طیارے ایچ اے ایل 10730 کروڑ روپے کی لاگت سے خریدے جائیں گے ۔حکومت کا اہم منصوبہ خود انحصار ہندوستان کو فروغ دینے کے آج کے مجموعی سودوں میں سے 31 ہزار 130 کروڑ روپے کی خریداری کی ملک کی دفاعی صنعتوں سے کی جائے گی۔ خریدی جانے والی چیزوں کے ڈیزائن اور ترقی کا کام ملک میں ہی کیا جائے گا اور ان میں چھوٹی صنعتی یونٹ اہم کردار ادا کریں گی۔ ان آلات میں سے کچھ میں لاگت کے 80 فیصد آلا ت ملکی ہوں گے ۔ یہ سازو سامان ملک کی دفاعی تحقیقی تنظیم ڈی آر ڈی او کے ذریعہ منتقل کردہ ٹکنالوجی پر مبنی ہوں گے۔ ان آلات میں فوج کے لئے پنکا راکٹ لانچر، بی ایم پی کے لئے ہتھیار اور سافٹ ویئر پر مبنی ریڈیو، اور بحریہ اور فضائیہ کے طویل دوری تک مار کرنے والے کروز میزائل سسٹم شامل ہیں۔ اس پر 20 ہزار 400 کروڑ روپے لاگت آنے کا امکان ہے ۔نئے میزائل سسٹم کی خریداری سے تینوں فوجوں کی طاقت میں اضافہ ہوگا۔ پناکا کی خریداری کے ساتھ ہی فوج میں اضافی ریجمنٹس بھی قائم کی جاسکیں گی۔ اس میزائل کے نئے نظام میں 1000 کلومیٹر کا فاصلہ ہوگا اور اس سے فضائیہ اور بحریہ حملے کی طاقت میں اضافہ ہوگا۔
 

تازہ ترین