تازہ ترین

منگل کو مزید 5اموات اور260متاثرین میں اضافہ، مہلوکین کی تعداد 101

جون کے مہینے میں 73اموات اور 5051 کی تعداد بڑھ گئی

تاریخ    1 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


پرویز احمد
سرینگر //جموں و کشمیر میں بدھ 30جون کو مزید5اموات کے بعد وائرس سے مرنے والوں کی تعداد101تک پہنچ گئی ہے جن میں سے 12جموں جبکہ89کشمیر میں تعلق رکھتے ہیں۔ ابتک جون مہینے میں 73افراد کورونا سے لقمہ اجل بن گئے ہیں، جبکہ وائرس متاثرین کی مجموعی تعداد میں رواں ماہ کے دوران5051کا اضافہ ہوگیا ہے۔ بدھ 30جون کو2فوجی، 11پولیس اور 60سی آر پی ایف اہلکاروں سمیت مزید 260افراد کی رپورٹیں مثبت آنے کے بعد کورونا وائرس متاثرین کی تعداد 7497تک پہنچ گئی ہے جن میں1611جموں جبکہ 5886کشمیر صوبے سے تعلق رکھتے ہیں۔ 260متاثرین میں سے 46 سرینگر،44بارہمولہ،64کولگام،19شوپیان،17اننت ناگ،ایک کپوارہ،14پلوامہ،19بڈگام،3بانڈی پورہ، ایک گاندربل، 12جموں،7ادھمپور،5رام بن،5کٹھوعہ، ایک سانبہ اور 2راجوری سے تعلق رکھتے ہیں۔ 

مزید 5اموات

 بدھ کو کورونا وائرس مریضوں کی اموات کا سلسلہ جموں سے شروع ہوا جہاں بسوہلی کی رہنے والی ایک 85سالہ خاتون فوت ہوگئی۔ پرنسپل گورنمنٹ میڈیکل کالج جموں ڈاکٹر نصیب چند ڈوگرا نے بتایا ’’خاتون سانس لینے میں تکلیف کی بیماری میں مبتلا تھی اور تب سے لیکر آکسیجن پر تھی‘‘۔ڈاکٹر ڈوگرا نے بتایا ’’ وہ 25جون کو اسپتال میں داخل ہوئی لیکن بدھ کی صبح 7بجکر 30منٹ پر فوت ہوگئی‘‘۔کورونا وائرس سے دوسری موت سرینگر کے جے وی سی اسپتال میں ہوئی اور یہاں دیوان باغ بارہمولہ کے رہنے والا52سالہ شخص فوت ہوگیا ۔ خاتون میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر شفادیوا نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’ فوت ہونے والا شخص 27جون کو اسپتال میں نمونیا اور پانی جمع ہونے کی وجہ سے داخل ہوا ‘‘۔ انہوں نے کہا ’’ڈاکٹروں کی تمام تر کوششوں کے بائوجود بھی بدقسمتی سے مریض کو نہیں بچا سکے۔ سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ میں ٹریفک حادثہ کا شکار ایک 23سالہ نوجوان اور 65سالہ خاتون بھی فوت ہوگئے۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر محمد سلیم ٹاک نے بتایا ’’شوپیان کا 23سالہ نوجوان ٹریفک حادثے کا شکار ہوکر زخمی ہوگیا  تھالیکن رپورٹ مثبت آنے کے بعد 29تاریخ کو نوجوان کو سی ڈی اسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ فوت ہوگیا ۔ڈاکٹر سلیم ٹاک نے بتایا ’’ اس کے علاوہ برزلہ کی ایک 65سالہ خاتون فوت ہوگئی ہے جو پہلے وائرس سے متاثر تھی‘‘۔ڈاکٹر ٹاک نے بتایا’’ خاتون کی رپورٹ منفی آئی تھی اور اب اسکی دوسری رپورٹ بھی منفی آئی ہے‘‘۔

ماہ جون

31مئی تک جموں کشمیر میں کورونا وائرس متاثرین کی تعداد2446جبکہ مہلوکین کی مجموعی تعداد 28تھی۔جون کے مہینے میں نہ صرف ہر روز مہلوکین کی تعداد بڑھتی گئی بلکہ متاثرین کی تعداد میں بہت برا اضافہ دیکھا گیا۔ یکم جون سے30جون تک جموں کشمیر میں73 افراد فوت ہوئے اس طرح فوت ہونے والوں کی مجموعی تعداد 101تک پہنچ گئی ہے۔اس عرصے کے دوران5051معاملات کا اضافہ ہوا، اس طرح مجموعی تعداد7497تک پہنچ گئی ہے۔

سکمز صورہ

میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق احمد جان نے بتایا ’’ سرینگر ائیر پورٹ سے اتوار کو موصول 547نمونوں میں سے 6مثبت جبکہ 541کی رپورٹیں منفی آئیں ہیں‘‘۔ڈاکٹر جان نے بتایا کہ 6متاثرین میں سے 4سرینگر، ایک بارہمولہ اور ایک بانڈی پورہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ڈاکٹر جان نے بتایا ’’ سرینگر کے 4متاثرین میں سے ایک نٹی پورہ، ایک حضرت بل  اور 2منوار آباد سرینگر سے تعلق رکھتے ہیں۔‘‘ڈاکٹر جان نے بتایا کہ اس کے علاوہ ایک شخص پٹن بارہمولہ اور ایک بانڈی پورہ سے تعلق رکھتا ہے۔ڈاکٹر فاروق احمد جان نے بتایا ’’ مختلف اسپتالوں کی جانب سے بھیجے گئے 1731نمونوں میں سے139مثبت جبکہ 1592افراد کی رپورٹیں منفی آئیں ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا کہ 139متاثرین میں سے58سی آر پی ایف، 19شوپیان، 18اننت ناگ،13 پلوامہ، 13سرینگر، 6بارہمولہ،4کولگام،2گاندربل،2بڈگام، ایک بانڈی پورہ اور ایک کولگام سے تعلق رکھتا ہے۔ڈاکٹر فاروق احمد جان نے بتایا ’’ضلع اسپتال کولگام سے موصول نمونوں میں سے 2داڈی پورہ کولگام، ایک سندرو کولگام، ایک مٹی بگ کولگام سے تعلق رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا ’’ اس کے علاوہ کولگام میں تعینات 18بٹالین سی آر پی ایف کے58اہلکاروں کی رپورٹیں بھی مثبت آئیں ہیں‘‘۔ ڈاکٹر جان نے بتایا کہ شوپیان کے 19متاثرین میں سے 4دمال خوشی پورہ، 2خوجی پورہ،2باگندڈ ، 3ندی گام،2مین ٹائون شوپیان،ایک دیو پورہ ، ایک رام نگری اور ایک شمسی پورہ سے تعلق رکھتا ہے۔ ڈاکٹر جان نے بتایا کہ اننت ناگ کے18متاثرین میں سے 7کھنہ بل ، 3سلی گام،2بجبہاڑہ ، ایک گاسی پورہ،ایک ککرناگ، ایک ماگام ، ایک دتھو اور ایک مین ٹائون اننت ناگ سے تعلق رکھتا ہے۔  انہوں نے کہا کہ 28جون کو سی آر پی ایف سے موصول نمونوں مین سے 2کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں جن میں سے ایک29بٹالین سی آر پی ایف پنتھ چوک اورایک 44بٹالین سی آر پی ایف ایچ ایم ٹی سرینگر  کا ایک اہلکار شامل ہے۔ ڈاکٹر جان نے بتایا’’ ضلع اسپتال پلوامہ سے موصول نمونوں میں سے13کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں جن میں پولیس اسٹیشن پلوامہ کے 11اہلکار ، ایک لجورہ پلوامہ اور ایک ڈاڈ سرہ پلوامہ سے تعلق رکھتا ہے۔ ڈاکٹر جان نے بتایا کہ سرینگر ضلع میں بھی 13افراد کی رپورٹین مثبت آئیں ہیں جن میں سے 5پیر باغ، ایک فتح کدل، ایک خواجہ بازار،ایک زکورہ، ایک صورہ، ایک سرائے بالا،  ایک راج  باغ،  ایک کاکہ سرائی اور ایک ایچ ایم ٹی سرینگر سے تعلق رکھتا ہے۔انہوں نے کہا کہ بارہمولہ کے6متاثرین میں سے  ایک بونیار، ایک اولڈ ٹائون ، ایک ٹنگمرگ، ایک سوپور بارہمولہ اور ایک پٹن بارہمولہ سے تعلق رکھتا ہے۔   انہوں نے کہا کہ گاندربل کے 2متاثرین میں سے ایک کاووسہ بڈگام اور ایک مین ٹائون بڈگام سے تعلق رکھتا ہے۔  انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ ایک مریض کا تعلق ہائے ہا مہ  کپوارہ اور ایک کرالہ پورہ بڈگام سے تعلق رکھتا ہے۔  انسٹی ٹیوٹ کے شعبہ عوامی رابطہ کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کی جانب سے جاری کئے گئے اعدادوشمار میںبتایا گیا ہے کہ ابتک کل743مشتبہ مریضوں کا داخلہ کیا گیا جن میں سے574مریضوں کو قرنطینہ کی مدت مکمل کرنے کے بعد گھر روانہ کردیا گیا جبکہ89مثبت قرار دئے گئے مریضوں کو گھر بھیجا گیا ہے۔ابتک117465نمونوں کی تشخیص کی گئی ہے جن میں سے113690کو منفی قرار دیا گیا ہے جبکہ2612مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔   

سی ڈی اسپتال 

سی ڈی اسپتال مین قائم لیبارٹری میں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران 45افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں جن میں 92بیس اسپتال سرینگر کے 2فوجی اہلکار، سعید کریم کالونی بارہمولہ کے 2، اری بابا کالونی بارہمولہ کے6افراد، ایک خانیار ، ایک چھتہ بل،6 کچھہ مقام،5نیو کالونی سوپور،7صدیق کالونی سوپور،3نور باغ  اور ایک قمرواری سرینگر سے تعلق رکھتا ہے۔ 

سکمز  بمنہ

میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر ریاض احمد ایتو نے بتایا ’’ پچھلے 24گھنٹوں کے دوران501نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں سے 36مثبت جبکہ465نمونوں کی رپورٹیں منفی آئیں ہیں‘‘۔ڈاکٹر ریاض ایتو نے بتایا کہ 36متاثرین میں سے 20سرینگر اور 16جموں سے تعلق رکھتے ہیں۔ ڈاکٹر ریاض ایتو نے بتایا ’’ سرینگر کے20متاثرین میں سے 3زنی مر،  2بڈشاہ نگر،  2 کاٹھی دروازہ،  2خیام،  2صورہ،  2بٹہ مالو، ایک قمرواری،  ایک لسجن،  ایک لال بازار،  ایک فکیر گجری،  ایک جواہر نگر اور ایک اچھہ بل سے تعلق رکھتا ہے‘‘۔انہوں نے کہا کہ بڈگام ضلع کے 16متاثرین میں سے 9چاڈورہ، ایک دریا گام، ایک چری پورہ، ایک کاووسہ ماگام، ایک آرتھ، ایک شمس آباد اورافراد سمسان بڈگام سے تعلق رکھتے ہیں۔ 

جموں

جموں صوبے مین پچھلے 24گھنٹوں کے دوران 30افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں ہیں جن میں سے 10جی ایم سی جموں، 8کمانڈ اسپتال ادھمپور، 12کرشنا لیبارٹری اور 2آئی آئی آئی ایم سے مثبت قرار دئے گئے ہیں۔

حکومتی بیان

حکومت نے کہا ہے کہ پچھلے چوبیس گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے260نئے مثبت معاملات سامنے آئے ہیںجن میں سے228کا تعلق کشمیر صوبے سے اور 32کا تعلق جموں صوبے سے ہیں اور اس طرح مثبت معاملات کی کل تعداد7,497تک پہنچ گئی ہے۔ میڈیا بلیٹن میں بتایا گیا ہے کہ نوول کورونا وائرس کے7,497ت معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے 2,674سرگرم معاملات ہیں ۔ اب تک4,722اَفراد شفایاب ہوئے ہیں ۔جموں وکشمیر میں کوروناوائرس سے مرنے والوں کی تعداد101تک پہنچ گئی ،جن میں سے 89کا تعلق کشمیر   صوبہ سے اور12کاتعلق جموں صوبہ سے ہیں۔اِس دوران  بدھ کو مزید137مریض صحتیاب ہوئے ہیںجن میںجموں صوبے کے22 اور کشمیر صوبے کے 115اَفراد شامل ہیں ، جن کو جموں و کشمیر کے مختلف ہسپتالوں سے رخصت کیا گیا۔بلیٹن میں مزید کہا گیا ہے کہ اب تک 3,65,058ٹیسٹوں کے نتائج دستیاب ہوئے ہیں جن میں سے  30؍جون2020ء کی شام تک 3,57,561نمونوں کی رِپورٹ منفی پائی گئی ہے ۔علاوہ ازیں اب تک2,81,581افراد کو نگرانی میں رکھا گیا ہے جن کا سفر ی پس منظر ہے اور جو مشتبہ معاملات کے رابطے میں آئے ہیں۔ ان میں 39,866اَفراد کو ہوم قرنطین میں رکھا گیا ہے جس میں سرکار کی طرف سے چلائے جارہے قرنطین مراکز بھی شامل ہیں ۔ اس کے علاوہ36 اَفراد کو ہسپتال قرنطین میں رکھا گیا ہے۔2,674کو ہسپتال آئیسولیشن میں رکھا گیا ہے جبکہ46,912 اَفراد کو گھروں میں نگرانی میں رکھا گیا ہے۔اسی طرح بلیٹن کے مطابق1,91,992اَفرادنے 28روزہ نگرانی مدت پوری کی ہے۔
 
 

پاکستان سے لوٹے  راجوری کے تین شہری وائرس میں مبتلا 

سمت بھارگو
 
راجوری //راجوری میں منگل کو 3افراد کورونا وائرس سے متاثر ہوئے جن میں 2پولیس اہلکار اورایک پاکستان سے لوٹنے والا شہری شامل ہے ۔ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر راجوری شیرسنگھ نے بتایاکہ پلمہ راجوری سے تعلق رکھنے والے ایک شہری میں کورونا کی تصدیق ہوئی ہے جو حال ہی میں گجرانوالا پاکستان سے واپس لوٹاتاہم وہ پہلے سے ہی انتظامی قرنطینہ میں تھا۔انہوں نے بتایاکہ پیر کے روز مہاری گائوں کے میاں بیوی میں کورونا کی تصدیق ہوئی تھی وہ بھی حال ہی میں پاکستان سے واپس لوٹ کر آئے ہیں ۔انہوں نے مزید بتایاکہ منگل کے رو ز جموں وکشمیر پولیس کے 2اہلکار بھی کورونا میں مبتلا پائے گئے جن دونوں کو کووڈ کیئر سنٹر منتقل کردیاگیاہے۔ انہوں نے بتایاکہ دونوں اہلکاروں نے انتظامیہ کو بیوقوف بنایا اور اپنانام اور ٹریول ہسٹری چھپاتے ہوئے انتظامی قرنطینہ سے گھر چلے گئے ۔ انہوں نے بتایاکہ ان دونوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی ۔
 

 

 

فورسز کے مزید 73اہلکار متاثر

پر ویز احمد
 
سرینگر// وادی میںمنگل 30جون کو پولیس و فورسز کی مختلف ایجنسیوں سے وابستہ مزید73اہلکار وں میں وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔اسکے ساتھ ہی وادی میں کورونا وائرس سے متاثرہ پولیس و فورسز اہلکاروں کی تعداد 588پہنچ گئی ہے۔ منگل کو سی آر پی ایف18بٹالین کولگام کے 58اہلکار،29بٹالین سی آر پی ایف پانتہ چھوک کا ایک اہلکار اور44بٹالین سی آر پی ایف ایچ ایم ٹی کا ایک اہلکار متاثر پایا گیا۔اس طرح متاثرہ سی آر پی ایف کی مجموعی تعداد 260 ہوگئی ہے۔منگل کو ہی پولیس سٹیشن راجپورہ پلوامہ کے 11کانسٹیبل بھی متاثر پائے گئے ہیں۔ اس طرح وادی میں مجموعی طور پر متاثرہ پولیس اہلکاروں کی تعداد 235تک پہنچ گئی ہے۔اسکے علاوہ50  فوجی اہلکار،19 بیکن اہلکار، بی ایس ایف کے23  اہلکار اورسی آئی ایس ایف کا ایک اہلکار بھی وائرس سے متاثر ہوا ہے۔
 

۔150نئے قیدی قرنطینہ میں 

سید امجدشاہ 
 
جموں //ڈائریکٹر جنرل جیل خانہ جات جموں وکشمیر وی کے سنگھ نے بتایاکہ پورے جموں و کشمیر میں 150کے قریب قیدیوں کو کورونا نمونے حاصل کرنے کے بعد قرنطینہ کیاگیاہے ۔انہوں نے کہا’’ہم نے پورے جموں وکشمیر میں نئے قیدیوںکیلئے کورونا نمونے اورپھر قرنطینہ کو لازمی قرار دیاہے اور فی الوقت ہمارے پاس سبھی جیلوں میں150ایسے نئے قیدی ہیں جنہیں قرنطینہ میں رکھاگیاہے ‘‘۔تاہم انہوں نے بتایاکہ ابھی تک نہ ہی کوئی قیدی کورونا میں مبتلا پایاگیااور نہ ہی کسی بھی جیل کے اہلکار میں اس وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔انہوں نے بتایاکہ 80فیصد قیدیوں کے معاملات زیر سماعت ہیں ،7فیصد پی ایس اے کے تحت حراست میں ہیں اور 5فیصد دیگر مختلف کیسوں کے تحت قید ہیں ۔وی کے سنگھ نے بتایاکہ کورونا وائرس کے پھیلنے کے ساتھ ہی قیدیوں کے ساتھ جیلوں میں ملاقات پر قدغنیں ہیں اور اس دوری کو پورا کرنے کیلئے انہوں نے قیدیوں کیلئے ٹیلی فون سہولیات کا سلسلہ شروع کیاہے تاکہ وہ اپنے گھروالوں سے بات چیت کرسکیں ۔انہوں نے بتایاکہ یہ سہولت تین جیلوں ضلع جیل جموں، مرکزی جیل جموں اور مرکزی جیل سرینگر میں رکھی گئی ہے۔ڈائریکٹر جنرل جیل خانہ جات نے مزید بتایاکہ کورونا وائرس کے دور میں قیدیوں کو کردار سازی کی تھیراپی (Cognitive Behavioural Therapy)فراہم کی جارہی ہے تاکہ وہ ذہنی اور جسمانی طور پر صحت مند رہ سکیں ۔انہوں نے بتایاکہ اس پروجیکٹ کوپورے جموں وکشمیر میں متعارف کروایاگیاہے ۔