اگست2019کے بعد کشمیری صنعتوں کو بھاری نقصان کا سامنا

کشمیر چیمبرکا صنعت و حرفت اور دستکاری محکموں کے ناظمین سے تبادلہ خیال

تاریخ    19 جون 2020 (00 : 03 AM)   


سرینگر//کشمیر چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری نے صنعت و حرفت کے ڈائریکٹر محمود شاہ اور ڈائریکٹر ہینڈی کرافٹس اینڈ ہینڈلوم کشمیرمسرت الاسلام کے ساتھ ملاقات کی اوردستکاری شعبے سے وابستہ افرا کو درپیش مسائل سے آگاہ کیا۔ چیمبر صدر شیخ عاشق احمد نے دستکاری سے تعلق رکھنے والے مینوفیکچررز اور کاریگروں کو درپیش مساکو اجاگر کیا۔ انہوں نے کہا کہ اگست 2019 کے بعد اس شعبے کو بہت زیادہ نقصان ہوا اور کاریگر سب سے زیادہ متاثر ہوئے ۔ شیخ عاشق نے کاریگروں اور بافندوں کو حکومت کے تشکیل کردہ مزدوروں کے ترقیاتی بورڈ کے رہنما خطوط کے تحت اس شعبے تک فوائد کو وسعت دینے اورہنر مند مزدورں وبنکروںکواس زمرے کے تحت تسلیم کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔انہوںنے حکومت کو ہینڈ ی کرافٹ ایکسپورٹ پروموشن کونسل بنانے کے لئے بھی زور دیاجبکہ یہ تجویز بھی پیش کی کہ اڑیسہ گورنمنٹ کے ایم ایس ایم ای (دستکاری) پالیسی کی طرز پر دستکاری ، صنعت کاروں اور کاریگروں کو چھوٹی و درمیانہ درجے کی صنعتوں کی اکائیوں کے طور پر تسلیم کیا جائے۔برآمد کنندگان(ایکس پوٹرس) اور دستکاری مصنوعات کو تیار کرنے والوں نے حکومت کی جانب سے مارکیٹنگ میں تعاون کے فقدان اور دستکاری کے یونٹوں کو ایم ایس ایم ای یونٹ قرار نہ دینے کا معاملہ اٹھایا۔ انہوں نے اگست ، 2019 کے بعد سے اسٹاک کی خریداری اور ہینڈی کرافٹ کی سرگرمیوں کی بحالی اور تزئین و آرائش کے خاتمے کے لئے لاک ڈاؤن کی مدت کے بعد اسٹاک کی خریداری کے لئے فوری مداخلت کی تجویز پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ ہینڈی کرافٹ سیکٹر میں 500 کروڑ روپے سے زائد مالیت کے اسٹاک فروخت نہیں ہوئے تھے اور سرکار سے اس سلسلے میں مداخلت کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ شیخ عاشق احمد نے کہا کہ اس معاملے کو لیفٹیننٹ گورنر ، چیف سکریٹری اور پرنسپل سکریٹری خزانہ کے ساتھ اٹھایا جائے گا تاکہ فریقین کیلئے غیرمتزلزل راستہ تلاش کیا جاسکے۔ میٹنگ کے دوران فریقین نے بتایا ملکی اور بین الاقوامی نمائشوں میں کہ انہیں جگہوں کی  تفویض کے حوالے سے پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت چیمبرکو جگہیں الاٹ کرے جو ان کی شرکاء میں مزید آسانی پیدا کرے۔پیپر ماشی کاریگروں کے نمائندوں نے حکومت کی طرف سے خاص طور پر مذہبی مقامات پر الاٹ کیے جانے والے پیپر ماشی کے کام میں شامل ہونے کی خواہش کی۔ چیمبر نے دست کاری شعبے کی ترقی کے لئے حکومت کی جانب سے مناسب مالی مدد کے ساتھ سیلف ہیلپ گروپ / معاشرے بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔۔ڈائریکٹر ، ہینڈکرافٹس اینڈ ہینڈلوم ، مسرت الاسلام نے دستکاری مصنوعات کو تیار کرنے والوں کو انتظامیہ کی شمولیت کے ساتھ ایم ایس ایم ای یونٹس کی حیثیت سے اہل بننے کے لئے صنعت ادھار کارڈ کے حصول کے لئے تیار  نظام کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ڈائریکٹر صنعت و حرفت محمود شاہ نے فریقین کو آگاہ کیا کہ ایم ایس ایم ای کی نئی درجہ بندی کے ساتھ ہی زیادہ سے زیادہ یونٹ چھوٹی اور درمیانہ درجے کی اسکیموںکے زمرے میں آئیں گے جن میں دستکاری یونٹ بھی شامل ہیں اور اس کی ضرورت ایوارڈ ادھار کارڈ کے تحت رجسٹریشن کی ہے۔ انہوں نے فریقین سے بھی کہا کہ وہ مختلف ہینڈکرافٹ مصنوعات کے لئے مشترکہ سہولت مراکز کے قیام میں شامل ہوں۔
 

تازہ ترین