جموں میں روہنگیا پناہ گزینوں کی موجودگی

بجرنگ دل کی احتجاجی مظاہروں کی دھمکی

تاریخ    7 جون 2020 (00 : 03 AM)   


یو این آئی
جموں// راشٹریہ بجرنگ دل جموں وکشمیر یونٹ کے صدر راکیش بجرنگی نے مرکزی ویونین ٹریٹری حکومتوں سے جموں میں مقیم روہنگیا اور بنگلہ دیشی پناہ گزینوں کو فوری طور نکالنے کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی سرکار نے عدالت عظمیٰ میں ایک حلف نامہ دائر کیا ہے جس میں مانا گیا ہے کہ یہ لوگ ملک کی سیکورٹی کے لئے بہت بڑا خطرہ ہیں۔انہوں نے دھمکی دی کہ اگر ان لوگوں کو جلد از جلد یہاں سے نہیں نکالا گیا تو جموں کے لوگ ایک بار پھر احتجاج پر اتر آئیں گے۔ہفتہ کے روز یہاں احتجاج درج کرنے کے بعد میڈیا کے ساتھ بات کرتے ہوئے راکیش بجرنگی نے کہا: 'ہمارا احتجاج یوٹی اور مرکزی حکومت کے خلاف ہے، ہم لگاتار احتجاج کررہے ہیں کہ جموں کے الگ الگ علاقوں میں مقیم روہنگیا اوربنگلہ دیشی لوگ بسے ہیں انہیں یہاں سے جلد از جلد نکالا جائے'۔انہوں نے کہا کہ مرکزی سرکار نے عدالت عظمیٰ میں ایک حلف نامہ دائر کیا ہے جس میں یہ مانا گیا ہے کہ یہ لوگ بھارت کے لئے بہت بڑا خطرہ ہیں۔بجرنگی نے یہاں مقیم روہنگیا اور بنگلہ دیشی لوگوں پر الزامات کی بوچھاڑ کرتے ہوئے کہا: 'ہمیں کہا گیا تھا کہ بائیو میٹرک کے بعد ان کو نکالا جائے گا لیکن دو سال گزر جانے کے بعد بھی کوئی کارروائی نہیں کی گئی‘۔انہوں نے ان لوگوں کو جموں وکشمیر اور ملک کے لئے بہت بڑا خطرہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اگر جموں کو ان سے خالی نہیں کیا گیا تو جموں کے لوگ ایک بار پھر احتجاج کریں گے۔

تازہ ترین