ٹرمپ کا سابق جنرل جیمس میٹس پر پلٹ وار

تاریخ    5 جون 2020 (00 : 03 AM)   


واشنگٹن //امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مینیسوٹا صوبے میں ایک سیاہ فام شہری کی پولیس حراست میں موت کے بعد بڑھکے تشدد میں ان کے کردار اور بد انتظامی کی مذمت کرنے والے سابق وزیر دفاع جنرل جیمس میٹس پر جمعرات کو نشانہ لگایا اور کہا کہ وہ دنیا کے سب سے زیادہ ‘اوورریٹیڈ جنرل ’ ہیں۔سابق جنرل میٹس نے مسٹر ٹرمپ پر ملک کو تقسیم کرنے کا الزام لگایا تھا اور کہا تھا کہ امریکی صدر احتجاجی مظاہرے کو کچلنے کے لئے فوج کا استعمال کررہے ہیں۔اس کے بعد امریکی صدر نے یہ بیان دیا ہے ۔مسٹر ٹرمپ نے ٹویٹ کرکے کہا ‘‘براک اوباما اور میرے اندر ممکنہ ایک ہی بات یکساں ہے کہ ہم دونوں کو دنیا کے سب سے زیادہ اوورریٹیڈ جنرل جم میٹس کو برخاست کرنے کا اعزاز حاصل ہے ۔جب میں نے ان سے استعفی لیا تو مجھے کافی اچھا لگا تھا۔’’امریکی صدر نے لکھا کہ جیمس میٹس کی ترجیحی طاقت فوج نہیں بلکہ نجی رابطہ عامہ تھی۔انہوں نے ،‘‘میں نے انہیں ایک نیا زندگی دیا،کام کرنے کا موقع دیا لیکن وہ کچھ خاص نہیں کر پائے ۔مجھے ان کی قیادت کا طریقہ یا ان میں زیادہ کچھ پسند نہیں اایا اور اس سے زیادہ لوگ متفق ہوں گے ۔خوش ہوں کہ وہ چلے گئے ۔’’واضح رہے کہ جنرل میٹس نے ایک بیان میں کہاتھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ ملک کو تقسیم کرنے کی کوشش میں جٹے ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مسٹر ٹرمپ پہلے ایسے صدر ہیں،جو امریکی لوگوں کوساتھ نہیں بلکہ الگ کرنے کی کوشش کرنے میں لگے ہیں۔انہوں نے کہا مسٹر ٹرمپ پہلے ایسے صدر ہیں،جو امریکی لوگوں کے ساتھ نہیں بلکہ الگ کرنے کی کوشش کرنے میں ہیں۔انہوں نے فوج اور عام لوگوں کے درمیان بھی ایک دیوار بنا دی ہے ۔یواین آئی
 

تازہ ترین