مزید خبرں

تاریخ    1 جون 2020 (00 : 03 AM)   


نیوز ڈیسک

ڈائریکٹر جنرل آرمڈکی صدارت میں میٹنگ

 اہلکاروں کوڈیوٹی کے دوران سماجی فاصلہ بنائے رکھنے کی تاکید

سرینگر// وادی کے ناکوں اور چیکنگ پوائنٹس پر تعینات پولیس اہلکاروں کا جائزہ لینے کیلئے پولیس کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آرمڈ اے ۔کے ۔چودھری نے کشمیر میں تعینات آرمڈ پولیس اور انڈئن رئزرو پولیس کے کمانڈنٹوں کی میٹنگ طلب کی۔ میٹنگ کے دوران  امن و قانون ،کورونا وائرس انتظامات،ناکوں پر تعیناتی اور دیگر انتظامی معاملات کے علاوہ پولیس اہلکاروں کی بہبودی کے معاملات کا جائزہ لیکر ان پر تبادلہ خیال کیا گیا۔پولیس ترجمان کے مطابق کمانڈنگ افسران کی طرف سے میٹنگ میں کئی معاملات کو اٹھایا گیا،جبکہ موقعہ پر ہی ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل  پولیس آرمڈ اے۔ کے۔ چودھری نے ان سے متعلق احکامات بھی صادر کئے۔ چودھری نے وادی میں ناکوںپر تلاشیوں اور دیگر جگہوں پر تعیناتیوں سے متعلق کمانڈنٹوں کو لازمی ہدایات بھی جاری کیں۔ میٹنگ میں ایس ایس پی پولیس کنٹرول روم اور آرمڈ پولیس ہیڈ کواٹر کے کیمپ افسران بھی موجود تھے۔ اے کے چودھری نے کرونا وائرس کے پھیلائو کو روکنے کیلئے آرمڈ پولیس اہلکاروں اور دیگر ایجنسیوں کے کردار کی سراہنا کی۔ انہوں نے کہا کہ پولیس اہلکار کرونا وائرس کے پھیلائو کو روکنے کیلئے اپنے علاقوں کے حدود کے اندر بہترین صلاحیتوں کو بروئے کار لا کر کام کر رہے ہیں۔انہوں نے تاہم کشمیر میں تعینات آرمڈ پولیس اور انڈئن رئزرو پولیس کے کمانڈنٹوں پر زور دیا کہ وہ حکومت کی طرف سے کرونا وائرس کی روک تھام کیلئے وقت وقت پر جاری رہنما خطوط کا اطلاق کرنے کیلئے تمام تر کاوشوں کو بروئے کار لائیں۔چودھری نے کمانڈنٹوں پر زور دیا کہ وہ اہلکاروں کو متواتر طور پر سماجی فاصلہ بنائے رکھنے اور اپنی خدمات انجام دینے  یا کیمپوں میں رہنے کے دوران ما سکوں کا استعمال کرنے کی تاکید کریں۔
 
 

 CRPFسب انسپکٹر حرکت قلب بند ہونے سے لقمۂ اجل

اننت ناگ//عارف بلوچ //سی آر پی ایف سب انسپکٹر حرکت قلب بند ہونے سے لقمہ اجل بن گیا ہے۔  سلر پہلگام میں 134بٹالین سے وابستہ سب انسپکٹر  56سالہ رام بھرت رام دوران ڈیوٹی حرکت قلب بند ہونے سے بیہوش ہوگیا اور اسے فوری طور پر نزدیکی اسپتال لیجانے کی کوشش کی گئی جہاں ڈاکڑوں نے انہیں مردہ قرار دیا۔ اس ضمن میں پولیس کو مطلع کیا گیا جنہوں نے معاملے کی نسبت 174سی آر پی چی کے تحت کیس درج کر کے تحقیقات شروع کی ہے۔
 
 

لسجن میں دلد وز سڑک حادثہ | 10سالہ لڑکا ہلاک، ڈرائیور گرفتار

سرینگر //لسجن میں سڑک کے ایک حادثے میں ایک کمسن بچہ ہلاک ہوگیا جبکہ پولیس نے گاڑی کے ڈرائیور کوگرفتار کرکے کیس درج کرلیا۔  پانپورلسجن میں ایک سینٹروگاڑی نے 10برس کے ایک بچے کواُس وقت ٹکر ماردی جب وہ اپنے والد کے ساتھ کہیں جارہاتھا۔سی این آئی کے مطابق سینٹروگاڑی کی ٹکر سے بچہ ہوامیں کئی فٹ اوپراُچھلااورخون میں لت پت گرپڑا۔مقامی لوگوں نے اگرچہ بچے کو فوری طور اسپتال پہنچایا لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسا۔اس دوران پولیس نے گاڑی کے ڈرائیور کوگرفتار کرکے کیس درج کرلیاہے۔ 
 
 

پٹن میں نوجوان کی لاش پرآمد

 بارہمولہ //فیاض بخاری//متی پورہ پٹن میں ایک نوجوان کی لاش کو گھر کے قریب پراسرارحالت میں پایا گیا۔تفصیلات کے مطابق اتوار کی صبح 22برس کے پیشہ سے مزدورشوکت احمد حجام ولدعبدالرحمن حجام کی لاش کو گھر کے قریب ہی مشتبہ حالات میں پایا گیا۔مقامی لوگوں نے فوری طور پولیس کو مطلع کیا۔اس دوران پولیس نے موقعہ پر پہنچ کرلاش کو اپنی تحویل میں لیکرپوسٹ مارٹم کیلئے بھیجدیا۔قانونی لوازمات پورا کئے جانے کے بعدلاش لواحقین کے سپرد کی گئی ۔پولیس نے اس سلسلے میں کیس درج کرکے تحقیقات شروع کردی ہے۔
 
 
 

اقامتی ضوابط اور حدبندی کمیشن کے ممکنہ اثرات

سیاسی جماعتوں کومشترکہ لائحہ عمل اپنانے کی ضرورت:حکیم
سرینگر//پیپلزڈیوکریٹک فرنٹ کے چیئرمین حکیم یاسین نے جموں کشمیرکی تمام بااثر سیاسی وسماجی تنظیموں پرزوردیا ہے کہ وہ حال ہی میں مرکزکی طرف سے جموں کشمیرمیں لاگو کئے گئے نئے اقامتی ضوابط اورحدبندی کمیشن کے ممکنہ اثرات کا جائزہ لینے کیلئے ایک مشترکہ پلیٹ فارم تشکیل دیں تاکہ عوامی نوعیت کے اہم معاملات پر مشترکہ لائحہ عمل اختیارکیا جاسکے۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ وقت کی اہم ضرورت ہے کہ مرکزی حکومت کے اقدامات کے بارے میں متحدطور ایسا لائحہ عمل اختیار کیاجائے جو ریاست اور یہاں کے پشتنی باشندوں کے بہترین مفاد میں ہو۔انہوں نے کہا کہ نئے اقامتی ضوابط اور حدبندی کمیشن کی وجہ سے جموں کشمیر کے سیاسی وسماجی تانے بانے پر پڑنے والے ممکنہ اثرات اور تبدیلیوں کو مدنظر رکھتے ہوئے ان معاملوں پر الگ الگ رائے زنی کرنے اور بیانات دینے کے بجائے مشترکہ لائحہ عمل اپنائے جانے کی ضورت ہے۔حکیم یاسین نے کہا کہ اس بات کاخاص خیال رکھا جانا چاہیے کہ کہیں مذکورہ قانون کی وجہ سے جموں کشمیرکے نوجوانوں کے روزگار اور ریاست کے اکثریتی کردارپر کسی قسم کے منفی اثرات نہ پڑ جائیں ۔انہوں نے کہا کہ جموں کشمیرکے سیکولر کردار کی ہرصورت میں پاسداری کی جانی چاہیے اورروزگار کے تمام مقامی وسائل کو یہاں کے نوجوانوں کیلئے ہی مخصوص رکھا جانا چاہیے۔حکیم یاسین نے کہا کہ ناموافق جغرافیائی اور غیریقینی  سیاسی صورتحال کی وجہ سے جموں کشمیرمیں صنعتی سرگرمیاں بہت ہی محدود ہیںاس لئے سرکاری ونیم سرکاری اداروں میں خالی اسامیوں کو صڑف مقامی نوجوانوں کیلئے ہی مخصوص رکھا جانا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ نئے حدبندی کمیشن کی وجہ سے ریاست کے الگ الگ خطوں کے لوگوں کے سیاسی ،سماجی اوراقتصادی مفادات کوکسی قسم کا ٹھیس نہ پہنچے۔
 
 

 دفعہ370اور35اے کی منسوخی | مرکز کی سب سے بڑی کامیابی کے دعوے غلط:کمال

سرینگر// نیشنل کانفرنس نے مرکزی حکومت کی طرف سے دفعہ 370 اور 35اے کی منسوخی کو پہلے سال کی سب سے بڑی کامیابی قرار دینے کے بیان کو غیر حقیقت پسندانہ اور ملکی عوام کو گمراہ کرنے کی ایک مذموم کوشش قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ اقدام بھاجپا کی 6سالہ حکومت کی سب سے بڑی غلطی اور ناکامی ثابت ہوا ہے۔ پارٹی کے معاون جنرل سکریٹری ڈاکٹر شیخ مصطفیٰ کمال نے ایک بیان میں مرکزی حکومت کے اس دعوے کو غیر حقیقت پسندانہ اور زمینی حقائق سے منہ چرانے کے مترادف قرارد یتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکمرانوں نے جموں وکشمیر کی خصوصی پوزیشن ختم اور اسے دولخت کرکے پورے خطے کو ایک آتش فشاں میں تبدیل کرڈالا ہے جس کا لاوا کبھی بھی پھٹ کر تباہی اور بربادی کا سبب بن سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت دعویٰ کررہی ہے کہ خصوصی پوزیشن کے خاتمے کے بعد حالات سدھر رہے ہیں جبکہ حقیقت یہ ہے کہ یہاں کے حالات کو خصوصی پوزیشن ختم کرکے خراب کیا گیا اور 10ماہ گزرجانے کے باوجود بھی مرکز یہاں انٹرنیٹ کی مکمل بحالی کرنے سے کترا رہا ہے۔ ڈاکٹر مصطفی کمال نے کہا کہ نئی دلی نے اپنے جموں وکشمیر کے لوگوں کو ہر سطح پر اندھیروں میں دھکیلنے کی کوئی بھی کسر باقی نہیں چھوڑی ہے۔ 5اگست کے بعد کے اقدامات سے آج تک جموں وکشمیر مسلسل سیاسی، جمہوری، آئینی ، اقتصادی بحران سے دوچار ہے اور مرکزی حکومت ملکی عوام کو گمراہ کرنے کیلئے جھوٹے اور من گھڑت بیانات جاری کررہی ہیں۔
 
 
 

اوڑی میں کرنٹ لگنے سے خاتون بیہوش،بکری ہلاک

اوڑی//ظفر اقبال//اوڑی میں بجلی کا کرنٹ لگنے سے خاتون بے ہوش جبکہ اس کی بکری ہلاک ہوگئی۔اطلات کے مطابق اتوار کو اوڑی کے جبلہ نامی گاوں میں 30 سالہ نصرینہ بیگم زوجہ شبیر احمد بلوٹ گھر کے نزدیک اپنے مال مویشیوں کے ساتھ تھی، جس دوران وہ علاقے سے گزنے والی ایل ٹی لائن سے ٹکراکر بے ہوش ہو گئی جبکہ اس کے ساتھ ایک بکری ہلاک ہوگئی ۔اُسے فوری طور لوگوں نے سب ضلع اسپتال اوڑی منتقل کیا ۔بلاک میڈیکل آفیسر اوڑی ڈاکٹر محمد رمضان میر نے بتایا کہ خاتون کو کوئی بھی چوٹ نہیں آئی ہے تاہم وہ کرنٹ لگنے سے بے ہوش ہو گئی تھی اور اب اْس کی حالت بہتر ہے۔ادھر مقامی لوگوں نے محکمہ بجلی پر لاپرواہی برتنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ اْن کے علاقے میں بجلی کی ترسیلی لائنیں بوسیدہ کھمبوں اور درختوں سے لٹکائی گئی ہیں جسکی وجہ سے یہ حادثہ پیش آیا۔لوگوں نے بتایا کہ محکمہ بجلی کے اہلکار کسی بڑے حادثہ کے انتظار میں ہے اسی لئے بے حال لائنوں کی مرمت نہیں کی جاتی ہے۔
 
 

ایم ٹیک طلاب پریشان | 2برسوں میں ایک سیمسٹر کاامتحان لیاگیا،نتائج آنا ہنوزباقی

سرینگر//سرینگر کے ایس ایس ایم پالی ٹیکنک  کالج میں زیر تعلیم’ایم ٹیک‘ طلاب نے کہا ہے کہ کشمیر یونیورسٹی میں گزشتہ2برسوں کے دوران صرف ایک سمسٹر کا امتحان لیا گیااور اس کے نتائج بھی اب تک ظاہر نہیں کئے گئے۔ طلاب نے کہا ہے کہ2018میں انہوں نے ایم ٹیک2سالہ کورس کیلئے یونیورسٹی داخلہ امتحانات دیا جس کے بعد اانہوں ایس ایس ایم کالج میں داخلہ لیا تاہم اب تک صرف پہلے سمسٹر کا امتحانان ہی لیا گیا اور اس کے نتائج کو ابھی تک ظاہر نہیں کیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ وہ صورتحال سے واقف ہے تاہم یونیورسٹی منتظمین نے بھی انہیں کبھی سنجیدگی سے نہیں لیا۔انہوں نے یونیورسٹی منتظمین پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ایس ایس ایم کالج میں زیر تعلیم طلاب کے مسایل کو کرونا لاک ڈائون کے دوران بھی حل نہیں کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ 2ماہ سے جاری لاک ڈائون کے بیچ یونیورسٹی گرانٹس کمیشن طلاب کیلئے بھارت بھر میں رہنما خطوط لیکر سامنے آیا،تاہم ان کا کہنا تھا کہ وہ گزشتہ ایک برس سے مسائل سے دو چار ہیں اور یونیورسٹی کی طرف سے انہیں کوئی بھی راحت نہیں دی گئی۔انہوں نے مزید کہا کہ داخلہ کے6ماہ بعد ہی ان کے کورس میں بھی تبدیلی لائی گئی اور تھرمل انجینئرنگ سے اس کو جنرل میکنیکل انجینئرنگ میں تبدیل کیا گیااور طلاب کو اس تبدیلی سے ذہنی تذبذب کا سامنا کرنا پڑا،تاہم طلاب نے یونیورسٹی کے اس فیصلے کو خندہ پیشانی سے قبول کیا۔ طلاب نے مزید کہا کہ جولائی2019میں انہوں نے پہلے پرچے کا امتحان دیا اور یونیورسٹی منتظمین کو9سے10ماہ کا وقفہ پہلا سمسٹر امتحان لینے میں لگ گیا،تاہم ابھی کوئی بھی پریکٹیکل امتحان نہیں لیا گیا،جس کے نتیجے میں پہلا سمسٹر ابھی بھی التواء میں ہی ہے۔ ان طلاب کا کہنا تھا کہ انہیں عبوری طور پر دوسرے سمسٹر میں داخلہ دیا گیا اور درس و تدریس کا سلسلہ شروع ہوا،تاہم دفعہ370کی تنسیخ کے بعد پیدا صورتحال کے نتیجے میں5ماہ تک کوئی بھی پیش رفت نہیں ہوئی۔انہوں نے کہا کہ دسمبر2020میں انکے پہلے سمسٹر کے پریکٹیکل امتحانات منعقد کئے گئے۔ مذکورہ طلاب نے بتایا کہ دوسرے سمسٹر کا نصاب بھی اس دوران تبدیل کیا گیااور مارچ2020میں وہ دوسرے سمسٹر کے ابتدائی امتحان میں شامل ہوئے اور اس بات کی توقع کر رہے تھے کہ اپریل میں اصل امتحان لیا جائے گا تاہم کرونا لاک ڈائون کے نتیجے میں سب کچھ تعطل کا شکار ہوا۔
 
 

کشمیری طلبہ کیخلاف بغاوت کا مقدمہ واپس لیاجائے | جے کے سٹوڈنٹس ایسوسی ایشن کی وزیرداخلہ سے اپیل 

سرینگر//سید اعجاز//جموں کشمیر سٹو ڈنٹس ایسوسی ایشن نے وزیر داخلہ امیت شاہ اور کرناٹک کے وزیر اعلیٰ سے اپیل کی ہے کہ کشمیری طلباء کے خلاف دائر بغاوت کے مقدمے کو واپس لیا جائے تاکہ طلبا ء کا مستقل خراب نہ ہو۔اس دوران ایسوسی ایشن کے ترجمان ناصر کھویہامی نے اتوار کے روز جاری ایک بیان میں وزیر داخلہ امیت شاہ اور کرناٹک کے وزیر اعلی بی ایس یدیورپا پر زور دیا کہ وہ طلباء کے خلاف مقدمات واپس لینے میں مداخلت کریں اور یونیورسٹی حکام سے ان کی معطلی کو واپس لینے کی اپیل کی ہے تاکہ کشمیری طلباء کا مستقبل تاریک نہ بن جائے۔ انہوں نے کہا کہ ، طلبا نے جو بھی کیا وہ ان کی غلطی تھی، ہم اسکی مذمت کرتے ہیں۔ناصر نے کہا کشمیری طلباء کو بیرون ریاست میں اس طرح کے معاملات میں الجھنے کے بجائے اپنی تعلیم پر توجہ مرکوز کرنا چاہے۔ترجمان نے بتایاہم کشمیری طلبہ سے کہاکہ وہ سوشل میڈیا پر اشتعال انگیز چیزوں کو لکھنے یا شیئر کرنے کے بجائے اپنی تعلیم پر توجہ دیں۔انہوں نے مزید کہا کہ طلبا کے خلاف بغاوت کا الزام ناقابل قبول سخت سزا ہے ،جو ان کے مستقبل کو برباد کردے گی اور ان کو مزید الگ کردے گی۔کھویہامی نے کہا کہ ان الزامات سے طلبا  کے تعلیمی اور مستقبل کے کیریئر پر سنگین نتائج مرتب ہوں گے اور انہیں فوری طور پر واپس لیا جانا چاہئے۔انہوںنے وزیر داخلہ امیت شاہ اور کرناٹک کے وزیراعلیٰ سے اس سلسلے میں مداخلت کی اپیل کی ہے تاکہ ان طلبا کا مستقبل بچ جائے ۔انہوں نے کہا مذکورہ طلاب کے والدین جاری لاک ڈٖائون اور اُن کے حراست میں رہنے سے سخت پریشانیوں میں مبتلا ہے۔
 
 

لاک ڈائون کی خلاف ورزی | نگین میں4دکانیںسیل،10گاڑیاں ضبط

سرینگر //سرینگرمیںپولیس نے کووِ ڈ- 19کی عالمگیر وباء کے پھیلائو کو روکنے کیلئے جاری ملک گیر لاک ڈائون کی خلاف ورزی کرنے پرچار دکانوں کو سربمہر کرنے کے علاوہ دس گاڑیوں کو ضبط کیا۔تفصیلات کے مطابق  نگین پولیس تھانہ کے حدود میںلاک ڈائون کی خلاف ورزی کے مرتکب چاردکانوں کو سربمہر کرنے کے علاوہ دس گاڑیوں کو ضبط کیاگیا۔پولیس نے ان کے خلاف پولیس اسٹیشن نگین میں ایف آئی آرزیرنمبر  96/2020 ،اور 97/2020درج کئے۔سرینگر پولیس نے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ کوروناوائرس کی وباء کو پھیلنے سے روکنے کیلئے انتظامیہ کی طرف سے جاری کی گئی ہدایات پر مکمل عمل کریں۔
 
 

سوپور میں لشکر کے3معانین کی اسلحہ سمیت گرفتاری کا دعوی

سوپور//غلام محمد//پولیس نے سوپور میں فورسز کے ساتھ ایک مشترکہ کارروائی کے دوران ناکے پر لشکر طیبہ کے تین اعانت کاروں کو اسلحہ سمیت گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا ہے ۔پولیس ترجمان کے مطابق ایک مصدقہ اطلاع ملنے کے بعد شنگرگنڈکراسنگ،سوپور کپوارہ شاہراہ پر22آرآر،پولیس اور سی آر پی ایف نے ناکہ لگایا اور چیکنگ شروع کی۔ا س دوران وہاں سے گزرنے والے جنگجوئوں کے تین اعانت کاروں مشتاق احمدمیر عرف لشکری،مدثر احمدمیراوراطہرشمس کوگرفتار کیا گیا۔پولیس نے ان کے قبضے سے ایک یو بی جی ایل بندوق،چاریو بی جی ایل گرنیڈ،اے کے47کے چار میگزین اور137رائونڈ برآمد کرنے کا دعوی کیا۔پولیس نے اس سلسلے میں ایک ایف آئی آر زیرنمبر125/2020تحت دفعہ7/251درج کرکے تحقیقات شروع کی۔
 

 شانگس میں شرمناک واقعہ ملزم گرفتار 

اننت ناگ//عارف بلوچ//براری آنگن اُترسو شانگس میں ایک شرمناک واقعہ میں ایک درندہ صفت شخص نے مبینہ طور ایک معصوم بچی کو ہوس کا نشانہ بناکر حاملہ کردیا۔پولیس نے اس سلسلے میں کیس زیرنمبر0/2020  4 درج کرکے ملزم کو گرفتار کرلیا ہے۔بتایا جاتا ہے کہ ملزم متاثرہ لڑکا کا رشتہ دار ہونے کے علاوہ ہمسایہ بھی ہے جس کا لڑکی کے گھر آنا جانا تھا ۔ اس وقعہ سے علاقہ میں تشویش کی لہردوڑ گئی ہے اور لوگوں نے ملزم کوکڑی سزادینے کامطالبہ کیا ہے۔
 
 
 

لداخ سرحد واقعہ سوشل میڈیا پروائرل ویڈیو جعلی 

فوجی ترجمان

سرینگر //فوج نے سوشل میڈیا پروائرل ہوئے اُس ویڈیوکو جعلی قراردیا ہے جس میں بھارتی فوج کی چینی افواج کے ہاتھوں مارپیٹ کو دکھایا گیا ہے۔سی این آئی خبررساں ایجنسی کے مطابق فوجی ترجمان کرنل امان آنند نے ایک بیان میں کہا کہ  لداخ میںایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔اورجو ویڈیوسوشل میڈیا پروائرل ہواہے ،اُس میں کوئی صداقت نہیں ہے بلکہ یہ جعلی ویڈیو ہے جس کا مقصد فوج کا حوصلہ توڑناہے۔کرنل آنند نے کہا کہ لداخ میں جوکچھ ہوا،اُس کواحسن طریقے سے سلجھایا گیا ہے اور دیگرسرحدی معاملات پر دونوں ممالک کے فوجی افسر باہمی بات چیت کررہے ہیںاورضابطے کے تحت ہر معاملے پربات ہوگی۔اس دوران انہوں نے میڈیا چینلوں سے بھی اپیل کی کہ وہ ایسے ویڈیو نہ چلائیں جن سے قومی سلامتی کوخطرہ ہو۔ 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 

سکمز کے8 ملازمین نوکریوں سے سبکدوش

سرینگر//سکمزمیں مختلف شعبہ جات سے وابستہ 8ملازمین جن میں پروفیسر خورشید عالم خان اور غلام نبی خان شامل ہیں، نوکریوں سے سبکدوش ہوئے ۔ سکمز کے سربراہ پروفیسر اے جی آہنگر اور نان گزیٹیڈ ایمپلائز ویلفیئر ایسوسی ایشن کے صدر اشتیاق بیگ نے سبکدوش ہوئے ملازمین کی خدمات کو سراہتے ہوئے کہا کہ ان ملازمین کاعوام دوست رویہ ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔
 
 

اسمبلی میں 6 نشستوںاور اقلیتی کمیشن کا نفاذ

سٹیٹ گوردوارہ پربندھک بورڈکا سرکار سے مطالبہ
جموں// جموں وکشمیر کی سکھ کمیونٹی نے وزیر اعظم نریندر مودی اور حال ہی میں تشکیل دئے جانے والے حد بندی کمیشن سے اسمبلی میں سکھوں کے لئے چھ نشستیں مخصوص رکھنے کے علاوہ اقلیتی کمیشن کے نفاذ کا مطالبہ کیا ہے۔سکھ تنظیموں بشمول سٹیٹ گوردوارہ پربندھک بورڈ اور جموں ڈسٹرک پربندھک کمیٹی کے عہدیداروں نے یہ مطالبات اتوار کے روز یہاں ایک پریس کانفرنس کے دوران کئے۔سٹیٹ گوردوارہ پربندھک بورڈ کے چیئرمین ترلوچن سنگھ وزیر، جو کہ نیشنل کانفرنس کے لیڈر بھی ہیں نے کہا’’ہمارا اسمبلی میں بولنے والا کوئی نہیں ہوتا ہے۔ مودی جی کہتے ہیں سب کا ساتھ سب کا وکاس۔ کیا جموں وکشمیر کی اقلیتی کمیونٹی مودی جی کے اس نعرے میں شامل نہیں ہے؟ میں مودی جی اور حد بندی کمیشن سے گزارش کروں گا کہ سکھ کیمونٹی کے لئے کم از کم چھ سیٹیں مخصوص رکھی جائیں تاکہ سکھوں کی آواز اسمبلی میں اٹھانے والا کوئی ہو‘‘۔ان کا مزید کہنا تھا: 'ہم پچھلے کافی عرصے سے اقلیتی کمیشن کے نفاذ کا مطالبہ کررہے ہیں۔ اب جبکہ جموں وکشمیر مرکزی حکومت کے براہ راست کنٹرول میں ہے تو اس کے نفاذ میں کیا مسئلہ ہے؟انہوں نے کہا ’’ میں پوری سکھ کمیونٹی کی طرف سے وزیراعظم سے اپیل کرتا ہوں کہ ہمیں ہمارے حقوق دئے جائیں‘‘۔
 
 

تازہ ترین