جواہرنگر گردوارہ میں نقب زنی کی واردات، تحقیقاتی عمل شروع

تاریخ    31 مئی 2020 (00 : 03 AM)   


نیشنل کانفرنس اورسکھ کارڈی نیشن کمیٹی کا اظہار افسوس
 سرینگر// جواہر نگر سرینگر میں جمعہ اور ہفتہ کی درمیان رات کونقب زنوںنے گردوارہ میں موجود پیسے اڑالئے۔ نقب زنوں نے گردوارے میں موجود لکڑی کی تجوری کو بھی توڑ ڈالا ۔ پولیس نے اس بات کی وضاحت کی ہے کہ گردوارے میں موجود لوہے کی تجوری محفوظ ہے جس کو نقب زن کھولنے میں ناکام رہے ہیں۔ خبر ملتے ہی ایس پی سائوتھ سجاد احمد کے علاوہ ایس ڈی پی ائو صدر اظہر رشید اور راجباغ پولیس تھانہ کے ایس ایچ او سمیر احمد فارنسک سائنس لیبارٹری اور سراغ رساں کتوں کے اسکارڈ کی ٹیم لیکر پہنچ گئے۔انہوں نے انگلیوں کے نشانات حاصل کئے۔اس دوران گردوارہ کے داخلی اورخارجی راستوں پر بھی ثبوتوں کی ممکنہ حصولیابی کیلئے کوشش کی گئی۔ پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے خفیہ کیمروں سے بھی تصاویر کو حاصل کیا گیااور مشتبہ افراد کی پوچھ تاچھ جارہی ہے۔پولیس کے مطابق اس سلسلے میں پولیس تھانہ راجباغ میں ایف آئی آر زیر نمبر42/2020 درج کرکے تحقیقات شروع کی گئی ہے۔ اس دوران نیشنل کانفرنس کے خزانچی شمی اوبرائے اور اقلیتی سیل کے آرگنائزر جگدیش سنگھ آزار نے جواہر نگر سرینگر کے گردوارہ میں نقب زنی کی واردات پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ دونوں لیڈران نے پولیس حکام پر زور دیا کہ چوری کی واردات میں ملوث افراد کو فوری طور پر گرفتار کیا جائے اور ایسے افراد کیخلاف سخت سے سخت کارروائی کی جائے جو مذہبی مقامات میں اس طرح کی کارروائیوں انجام دیتے ہیں۔ ادھر سکھ کارڈی نیشن کمیٹی کے چیئرمین جگموہن سنگھ رینہ نے تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے دوران شب گردوارہ کی نگرانی کا مطالبہ کیا۔انہوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ اس واقعے میں منشیات کے عادی لوگوں کا ہاتھ ہوسکتا ہے۔دریں اثناء جگموہن سنگھ رینہ نے میربازار اننت ناگ میں جموں کے ایک سکھ ڈرائیور کی پراسرارحالت میں ہوئی موت پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ اس واقعہ کی غیرجانبدانہ تحقیقات کی جائے۔
 

تازہ ترین