تازہ ترین

کووِڈ- 19کی آڑ میں مسلمانوں پرعتاب

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی اساتذہ کی قراردادمیں تشویش کااظہار

23 مئی 2020 (00 : 03 AM)   
(      )

علی گڑھ//علی مسلم یونیورسٹی کے اساتذہ کی انجمن نے ملک میں مسلمانوں کو کوروناوائرس کی علامگیر وباء کی آڑ میں نشانہ بنانے پر تشویش کااظہار کیا ہے ۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی اساتذہ کی انجمن کی ایگزیکیٹوکمیٹی نے ایک میٹنگ میںقراردادپاس کرکے اُسے صدرجمہوریہ رام ناتھ کووندکو بھیج دیا۔قراردادمیں صدرجمہوریہ پرزوردیاگیا کہ وہ اقلیتی طبقے کے خدشات کودور کریں جوملک میں کوروناکی وباء کا مقابلہ کرنے کی آڑ میں ملک میں مخالف رائے کوخاموش کرنے کیلئے قانون کے استعمال کرنے سے پیدا ہوئے ہیں ۔ایک سخت بیان میں انجمن نے ملک کے عوام  خصوصاًروزانہ کمانے والوں جواپنے آبائی علاقوں کو ہجرت کرنے پرمجبور ہوئے ہیں،سے اظہار یکجہتی کیا۔ قرارداد میں کہا گیا ہے کہ یہ صدمے اورناراضگی کومقام ہے کہ کووِڈ- 19کی عالمگیروباء کوایک مخصوص فرقے کے خلاف نفرت پھیلانے کیلئے استعمال کیاجارہا ہے ۔قرارداد میں الزام لگایا گیا ہے کہ صحافی وردراجن،ماہرامراض اطفال وانسانی حقوق کے علمبردار ڈاکٹر کفیل خان اور انسانی حقوق کارکن عمر خالد اور دیگر درجنوں کیخلاف بے بنیاد کیس بنائے جارہے ہیں کیونکہ اِن لوگوں نے زیادتیوں اور ناانصافیوں کیخلاف آوزابلند کی ہے ۔قراردادمیں کہاگیا ہے کہ بدقسمتی سے جولوگ اسلام فوبیا پھیلا رہے ہیں اُن کیخلاف کارروائی کرنے کے بجائے پولیس اُن لوگوں کو عتاب کانشانہ بنارہی ہے جو اِس ناانصافی کیخلاف صدابلند کرتے ہیں ۔علی گڑھ مسلم یونیورسٹی اساتذہ انجمن کے سیکریٹری نجم الاسلام نے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ ہمیں پورا یقین ہے کہ  ہماراملک کووِڈ-   19کیخلاف  جنگ کو متحد ہوکر ہی کامیابی کیساتھ جیت سکتا ہے ۔سماج کے ہر طبقے کو بلا لحاط مذہب وملت،طبقہ ،ذات پات اس جنگ میں اپنا کردار ادا کرنا ہے ۔