تازہ ترین

وادی میں ہُو کا عالم

خلاف ورزی کرنے والے مزید38گرفتار،،82ایف آئی آر درج

تاریخ    26 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر// وادی میں بھارت لاک ڈائون کے پہلے روز جنوب و شمال میں ہو کا عالم رہا۔سرینگر سمیت وسطی ، شمالی اور جنوبی کشمیر کے سبھی اضلاع، تحاصیل ہیڈکوارٹروں، قصبوں حتیٰ کہ دیہات تک بھی ہر طرح کی سرگرمیاں معطل رہیں۔اس دوران پولیس نے کہا ہے کہ انہوں نے  وادی میں دفعہ 144کی خلاف ورزی کرنے نیز دفعہ 188کے تحت ملک بھر میں آفات سماوی قانون کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف82کیس در ج کئے ہیں جبکہ بدھ کو بھی پولیس نے امتناعی احکامات کی خلاف ورزی کی پاداش میں 38افراد کو حراست میں لیا جبکہ21گاڑیاں بھی ضبط کیں۔بانڈی پورہ میں پولیس نے ایک درجن گاڑیوں کو ضبط کیا،جبکہ14افراد کو بھی حراست میں بھی لیا۔سمبل میں لاک ڈاون کی خلاف ورزی کرنے والے 20افراد حراست میں لئے گئے جبکہ دو اسکوٹر وںسمیت7گاڑیاں ضبط کی گئیں۔ ارشاد احمد کے مطابق گاندربل میں پولیس نے خلاف ورزی کرنے کی پاداش میں4دکانداروں کو2علیحدہ علیحدہ کاروائیوں کے دوران صفا پورہ اور کنگن میں حراست میں لیا ۔ اشرف چراغ کے مطابق کپوارہ میں10افراد کو امتناعی احکامات کی خلاف ورزی کرنے پر گرفتار کیا گیا۔اس دورانجموں کشمیر پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ کا کہنا ہے کہ دفعہ144کے تحت امتناعی احکامات کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف218درج کئے گئے ہیں۔ انہوں نے تفصیلات فراہم کرتے ہوئے بتایا کہ وسطی کشمیر کے گاندربل،سرینگر اور بڈگام اضلاع میں27جبکہ جنوبی کشمیر کے پلوامہ،کولگام،اننت ناگ ،شوپیاں اور اونتی پورہ پولیس اضلاع میں28اور شمالی کشمیر کے کپوارہ،ہنڈوارہ،بانڈی پورہ ، سوپور اور کپوارہ پولیس اضلاع میں27کیسوں کا اندراج کیا گیا۔ ڈائریکٹر جنرل آف پولیس کا مزید کہنا تھا کہ جموں صوبے کے سانبہ اور کھٹوعہ رینج میں50،ادھمپور،ریاسی میں50،ڈوڈہ کشتواڑ رام بن میں21اور راجوری پونچھ میں65کیس درج کئے گئے۔لاک ڈائون کے دوران پوری وادی میں سناٹا چھایا رہا اور لوگ گھروں میں محصور رہے۔سرینگر سمیت وادی کے تمام باقی 9اضلاع کے قصبوں اور دیگر علاقوں میں دکانات اورکاروباری مراکز بند رہے جبکہ سرینگر کو مختلف اضلاع سے ملانے والی شاہراہوں کے ساتھ ساتھ رابطہ سڑکوں پر بھی نجی ٹرانسپورٹ نظر نہیں آیا۔ وادی کے طول وعرض میں ہر طرح کی دکانیں ،کاروباری ادارے ،تجارتی مرکز ،بازار ،پیٹرول پمپ بند رہے ۔پولیس کی طرف سے بدھ کو بھی گاڑیوں میں نصب لاوڈ سپیکروں پر لوگوں کو گھروں میں ہی رہنے کی ہدایت دی گئی۔وادی بھر میں سیکورٹی بندوبست سخت کئے گئے،جس دوران ہزاروں کی تعداد میں پولیس وفورسز اہلکاروں کو چپے چپے پر تعینات کیا گیا ۔ منگل کے برعکس بدھ کو بندشوں میں مزید سختی کی گئی  اور ہر ایک صرک پر خاردار تاریں بچھا کر آمد و رفت کو نا ممکن بنایا گیا۔سرینگر میں سڑکوں پر کوئی نظر نہیں آرہا تھا اور یہی صورتحال شمال و جنوب میں رہی۔