GK Communications Pvt. Ltd
Edition :
  ادارتی مضمون
’’اُردو میڈیا‘‘
عصری تقاضوں کا جامِ جم

موجودہ عہدِ عالمیت میں میڈیا کی غیر معمولی اہمیت ہے، بالخصوص جمہوری طرزِ حکومت میںابلاغیات کی اہمیت کچھ زیادہ ہی بڑھ جاتی ہے کیوں کہ میڈیا نہ صرف عوام الناس کے اظہارِ خیال کا ایک مؤثر اور معتبرذریعہ ماناجاتا ہے بلکہ عوامی مسائل کے حل کا ایک وسیلہ بھی۔ اس لئے جمہوری نظامِ حکومت میں صحافت کو چوتھا ستون تسلیم کیا گیا ہے۔جہاں تک سوال اردو صحافت کا ہے تو سچ یہ ہے کہ ابتداء سے ہی اردو صحافت مسئلۂ زیست سے جڑا رہا ہے۔اردو صحافت کی تاریخ پر ایک سرسری نگاہ ڈالیں تو یہ حقیقت عیاں ہو جاتی ہے کہ اس نے ہمیشہ زمانے کے تقاضوںپر پورا اترنے کی کوشش کی لیکن موجودہ انفارمیشن ٹکنالوجی میں اردو پرنٹ اور برقی صحافت کو بہت ساری تبدیلیوں کا مقابلہ ہے اور بازار میں اپنے اعتبارووقار کو بحال رکھنے کے لئے اسے بہت سارے پاپڑ بیلنے ہیں۔اسی احساس کے پیش نظر ’’اُردو میڈیا‘‘ کے عنوان سے ڈاکٹر خواجہ محمد اکرام الدین نے ایک اہم مشن انجام دیا ہے۔ خواجہ اکرام الدین نہ صرف اردو کے صحت مند فکر ونظر رکھنے والے اساتذہ ہیں بلکہ با خبر صحافیوں میںبھی اولیت رکھتے ہیں۔قومی وبین الاقوامی معاملات بالخصوص ہند وپاک مسائل پر ان کے خصوصی اور فکر انگیزکالم مختلف اخباروں میں متواتر شائع ہوتے رہتے ہیںجن کے مطالعے سے اندازہ ہوتا ہے کہ ڈاکٹر خواجہ اکرام الدین کا دائرۂ فکر کا محور صرف اردو ہی نہیںبلکہ دوسرے سماجی علوم پر بھی ان کی گہری نظر ہے۔مرتب کو اس بات کا احساس ہے کہ اگر آج زمانہ کمپیوٹر اور انٹر نٹ کا ہے تو میڈیا کو بھی اس سے استفادہ کرکے زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچنے کی کوشش کرنی ہوگی ۔ اس کے لئے ضروری ہے کہ اردو کے صحافیوں کو عملی تربیت دی جائے۔ اردو اخبار وجرائد سے جڑے صحافیو ں ، کارکنوں کو جدید ٹکنالوجی اور فنِ صحافت کی باریکیوں کی تعلیم دی جائے۔چونکہ راقم الحروف کا بھی اردو صحافت سے تعلق ہے اور دو دہائیوں سے صحافت کی بدلتی دنیا کا مشاہدہ بھی ،اس لئے اردو میڈیا کے لئے کام کرنا کس قدر دشوار ہے اس کا بخوبی اندازہ ہے۔اب تو بڑے بڑ ے صنعتی گھرانوں نے اردو میڈیا کو اپنا لیا ہے اور یہاں بھی گلیمر در آ نے کے ساتھ اور روزگار کے مواقع بھی فراہم ہو رہے ہیں ۔ ورنہ ایک دہائی پہلے تک تو اردو میڈیا کی دنیامیں داخل ہونے کا مطلب پیٹ پر پتھر باندھنے کے مترادف تھا۔ظاہر ہے جب بازار میں کسی شئے کی اہمیت بڑھ جاتی ہے تو مسابقاتی مرحلہ بھی آتا ہے۔ اس لئے اب اردو میڈیا کو جو لوگ اپنا کیریئر بنانا چاہتے ہیں انہیں مسابقاتی تقاضو ں کوبھی پورا کرنا ہوگا۔ ’’اردو میڈیا‘‘ انہی عصری تقاضوں کو پورا کرنے کی ایک کامیاب کوشش ہے۔مشمولہ 39 مضامین میں بیشتر مضامین تازہ فکر ی نتائج پر مبنی ہیں۔بعض مضامین پیش پا افتادہ ہیں لیکن ان کی اہمیت سے بھی انکار نہیںکیا جا سکتا۔خصوصاً او۔پی ورماصاحب کے گیارہ مضامین نہ صرف کتاب کی ضخامت میں اضافہ کرتے ہیں بلکہ اردو صحافت کو معیاری اور پیشہ وارانہ تقاضو ں کو پورا کرنے کے گُر بھی سکھاتے ہیں۔ان کے مضامین میں ترسیل کی اہمیت وصلاحیت، پبلک پالیسی اور عوامی ذرائع ترسیل، خبر نگاری،تعارف اور تکنیک، اداریہ لکھنے کا فن، اور انٹر ویو وغیرہ موضوع اور مواد دونوں اعتبار سے چشم کشا ہیں۔جناب عبد الحیٔ کا مضمون’’عوامی ترسیل اور اس کے بنیادی لوازمات‘‘ ، پروفیسر شافع قدوئی کا مضمون’’خبر نگاری اور ادارت‘‘، نسیم احمد کا ’’خبروں کی اہمیت‘‘،افضل مصباحی کا’’اخبار کی صفحہ سازی کی تکنیک‘‘، شکیل حسن شمسی کا’’پیج میکنگ جدید صحافت کا لازمی جزو‘‘، سمیع الرحمن کا ’’ٹی وی رائٹنگ کے اصول‘‘خواجہ صاحب کا’’آن لائن میڈیا کا تصور اور اردو‘‘اور نصرت ظہیر کا ’’ہندوستانی سنیما اور اُردو‘‘ عنوان کے تقاضوں کو پورا کرتا ہے اور میڈیا کے طالب علموں کے لئے نئی راہوں کا پتہ دیتا ہے۔دیگر مضامین بھی اردو میڈیا کی عصری اہمیت کے چیلنج کو پیشِ نظر رکھ کرلکھا گیا ہے لیکن خوفِ طوالت تمام مضامین پر علاحدہ علاحدہ تاثر پیش کرنے کی اجازت نہیں دیتا۔ مجموعی اعتبار سے اُردو میڈیا سے دلچسپی رکھنے والے سنجیدہ قارئین اور بالخصوص اُردو صحافت کو حرزِ جاں بنانے والوں کے لئے پیشِ نظر کتاب ’’اُردو میڈیا‘‘ ساز اور آ واز کا درجہ رکھتی ہے۔یقیناً اس کتاب کی نہ صرف پذیرائی ہوگی بلکہ مستقبل میں اس کا حوالہ جاتی کتب میں اس کا شمار ہوگااور اس کے لئے مرتب کی تعمیری فکر کی جتنی تعریف کی جائے وہ کم ہے کہ اس طرح کی پیشہ وارانہ تقاضوں کو پورا کرنے والی کتابوں کی اشاعت سے اس عام غلط فہمی کا بھی ازالہ ہوتا ہے کہ اردو صرف شعروشاعری،تنقید اور مذہبی لٹریچر کی زبان بن کر رہ گئی ہے۔

…………

رابطہ :-پرنسپل ملّت کالج،دربھنگہ(بہار)

ای میل:rm.meezan@gmail.com

 

یہ صفحہ ای میل کیجئے پرنٹ کریں












سابقہ شمارے
  DD     MM     YY    


 


© 2003-2014 KashmirUzma.net
طابع وناشر:رشید مخدومی  |  برائے جی کے کمیونی کیشنزپرائیوٹ لمیٹڈ  |  ایڈیٹر :فیاض احمد کلو
ایگزیکٹو ایڈیٹر:جاوید آذر  | مقام اشاعت : 6 پرتاپ پارک ریذیڈنسی روڑسرینگرکشمیر
RSS Feed

GK Communications Pvt. Ltd
Designed Developed and Maintaned By